Book Name:Wasail e Bakhshish

 

رُوسیاہوں   پر کرم اے دو جہاں   کے تاجدار

رُوسیاہوں   پر کرم اے دو جہاں   کے تاجدار!

اپنے غم میں   اپنی الفت میں   رُلاؤ زار زار

حُسنِ گلشن میں   سَراسَر ہے فریب اے دوستو!

دیکھنا ہے حُسن تو دیکھو عرب کے ریگزار

راہ بھولا آہ منزِل سے بھٹک کر رہ گیا

ساتھ لے لو اے عرب کے مہرباں   ناقہ سُوار([1])

ہم غریبوں   کو مدینے میں   بلا لو یانبی!

واسِطہ احمدرضا کا دو جہاں   کے تاجدار

گر مقدَّر میں   مرے دُوری لکھی ہے یانبی!

کا ش! فُرقَت میں   تری روتا رہوں   میں   زار زار

اُن کا دیوانہ عِمامہ اور زُلف و رِیش([2])میں   

واہ! دیکھو تو سہی لگتا ہے کتنا شاندار

 

کاش! خدمت سنّتوں   کی میں   سد ا کرتا ر ہوں 

اہلِ سنّت کا سدا([3])بن کے رہوں   خدمت گزار

ہیں   علی مشکل کشا سایہ کناں   سر پر مرے

لَا فَتٰی اِلَّا عَلِی لَا سَیْفَ اِلَّا ذُوالْفِقَار([4])

یاشہیدِ کربلا! ہو دُور ہر رنج و بلا

اب مدد کو آؤ دشتِ کربلا کے شہسوار

المدد یاغوثِ اعظم دَست گِیرِ بے کساں   

پھنس گئی ہے ناؤ طوفاں   میں   لگادیں   آپ پار

یامُعینَ الدّین! آؤ اب مدد کے واسطے

 



[1]     اونٹنی سُوار  ۔

[2]     داڑھی ۔

[3]     ہمیشہ ۔

[4]     حضر تِ علی کَرَّمَ اللّٰہُ وَجہَہُ الکریم جیسا کوئی بہادر نہیں   اور ذُوالفِقار جیسی کوئی تلوار نہیں  ۔



Total Pages: 406

Go To