Book Name:Wasail e Bakhshish

مال کی کثرت کا تخت و تاج کا طالِب نہیں 

ہو عطا خَستہ جگر اور آنکھ دے دو اشکبار

واسِطہ سِبْطَین کا میرا گناہوں   کا مَرض

دور کر دیجے خدارا اے طبیبِ ذی وقار

فکرِنَزعِ روح و قبر و حشر سے بچ جاتا گر

کاش ہوتا آپ کی گلیوں   کا میں   گرد و غبار

 

آہ چھایا ہے گناہوں   کا اندھیرا چار سو

ہو نگاہِ نور مجھ پر یاشہِ عالم مدار

کاش یاوَہ گوئی بد اَخلاقی اور بے جا ہنسی

کی مری سب عادتیں   چھوٹیں   مرے پروردگار

مثلِ بسمل([1])میں   تڑپتا ہی رہوں   سرکار کاش!

آپ کے غم میں   رہوں   آقا ہمیشہ دلفِگار

دولتِ دنیا سے بے رغبت مجھے کر دیجئے

میری حاجت سے مجھے زائد نہ کرنا مالدار

ہو مدینہ ہی مدینہ ہر گھڑی وِردِ زَباں   

بس مدینہ ہی کی ہو تکرار لب پر باربار

گنبدِ خضرا کی ٹھنڈی ٹھنڈی چھاؤں   میں   مِرا

خاتِمہ بِالخیر ہو اے کاش! میرے کِردگار

اے مِرے آقا عزیزوں   نے جسے ٹھکرا دیا

اس کو  قدموں   سے لگا لو غمزدوں   کے غمگسار

عرصئہ محشر میں   آقا لاج رکھنا آپ ہی

دامنِ عطّارؔ ہے سرکار بے حد داغدار

 

غم کے ماروں   پر کرم اے دو جَہَاں   کے تاجدار

غم کے ماروں   پر کرم اے دوجہاں   کے تاجدار

اپنے غم میں   اپنی الفت میں   رُلاؤ زار زار

صَدقے جاؤں   مجھ سے عاصی پر شہِ کون و مکاں   

 



[1]     زخمی۔بیقرار ۔



Total Pages: 406

Go To