Book Name:Wasail e Bakhshish

جھوم جاؤ بے کسو امداد کرنے آگئے             خَلْق کے حاجت روا صلِّ علیٰ خوش آمدید

بے نواؤ آؤ تم، آؤ گداؤ آؤ تم                     صدقہ لے لو نور کا صلِّ علیٰ خوش آمدید

 

آمِنہ کے گھرپہ چلتے ہیں  سب آؤمل کے ساتھ    اور لگاتے ہیں   صدا صلِّ علیٰ خوش آمدید

بے کسو ں   کے داد رس اے خلق کے فریاد رس  دور کر رنج و بلا صلِّ علیٰ خوش آمدید

چشمِ رحمت کیجئے اپنی مَحبّتدیجئے                در پہ حاضِر ہے گدا صلِّ علیٰ خوش آمدید

اپنا غم دے دیجئے اور چشمِ نم دے دیجئے          در پہ حاضِر ہے گدا صلِّ علیٰ خوش آمدید

دردِ عِصیاں   کی دوا دو تم شفا دو تم شِفا             در پہ حاضِر ہے گدا صلِّ علیٰ خوش آمدید

گنبدِ خَضرا کے جلووں   سے یہ دل آباد ہو          در پہ حاضِر ہے گدا صلِّ علیٰ خوش آمدید

آپ کے قدموں   میں   آقا خاتِمہ بِالْخیر ہو          در پہ حاضِر ہے گدا صلِّ علیٰ خوش آمدید

اب بقیعِ پاک میں   دوگز زمیں   دے دیجئے         در پہ حاضِر ہے گدا صلِّ علیٰ خوش آمدید

جھوم کر ہاں   جھوم کر عطارؔ لب کو چوم کر

مست ہو کر دو صدا صلِّ علیٰ خوش آمدید

جوچپ رہااُس نے نجات پائی ۔(ترمذی حدیث۲۵۰۹)

 

یانبی مجھ کو مدینے میں   بلانا بار بار

یانبی مجھ کو مدینے میں   بُلانا باربار

باربار آؤں   بنے آخِر مدینے میں   مزار

ہیں   ہوائیں   مہکی مہکی تَو فَضائیں   خوشگوار

ذرّہ ذرّہ ہے مدینے کا یقینا نوربار([1])

کاش جب آؤں   مدینے خوب طاری ہو جُنُوں  ([2])

ہو گرِیباں   چاک سینہ چاک دامن تارتار

 



[1]     نور برسانے والے    ۔

[2]     دیوانگی ۔



Total Pages: 406

Go To