Book Name:Wasail e Bakhshish

دبدبہ آمد کا تھا صلِّ علیٰ خوش آمدید

انبِیاء و مُرسلیں   سب کی امامت کا ترے

سر پہ ہے سہرا سجا صلِّ علیٰ خوش آمدید

آمِنہ کے گھرمیں   جب آمد محمد کی ہوئی

چار سُو یہ شور اُٹھا صلِّ علیٰ خوش آمدید

خوب صدقہ بٹ رہا ہے آمِنہ کے گھر پہ آج

آئے شاہِ اَسْخِیا صلِّ علیٰ خوش آمدید

ہم غریبوں   کے تو بس وارے ہی نیارے ہوگئے

در تمہارا مل گیا صلِّ علیٰ خوش آمدید

بھر دو سینے میں   سُرور اور آنکھ کردو نور نور

دل مِرا دو جگمگا صلِّ علیٰ خوش آمدید

قبر میں   جلوہ نبی کا دیکھ کر عطارؔ کاش!

بول اُٹھے بے ساختہ صلِّ علیٰ خوش آمدید

 

آگئے ہیں   مصطَفیٰ صلِّ علٰی خوش آمدید

 ( ۱۶ صفر المظفر ۱۴۲۶ھ)

آگئے ہیں   مصطَفیٰ صلِّ علیٰ خوش آمدید          ہوگئے جلوہ نُما صلِّ علیٰ خوش آمدید

سیِّد و سردارِ ما صلِّ علیٰ خوش آمدید              رازدارِ کبریا صلِّ علیٰ خوش آمدید

مالک و مختارِ ما صلِّ علیٰ خوش آمدید                نائبِ ربُّ العُلیٰ صلِّ علیٰ خوش آمدید

گمرہی سے لو بچا اور سیدھے رستے پر چلا          اے ہمارے رہنُما صلِّ علیٰ خوش آمدید

مسُکراتی پھول برساتی اور اِٹھلاتی ہوئی            گُنگُناتی ہے صبا صلِّ علیٰ خوش آمدید

بُلبلیں   ہیں   نغمہ خواں   اور پڑھ رہی ہیں   قُمریاں     نعتِ پاکِ مصطَفیٰ صلِّ علیٰ خوش آمدید

سبز پرچم چار سُو لہرا رہے ہیں   جشن ہے           آمدِ محبوب کا صلِّ علیٰ خوش آمدید

غم زدو غم کھاؤ مت اے بے کسو گھبراؤ مت    آگئے مشکِل کُشا صلِّ علیٰ خوش آمدید

 



Total Pages: 406

Go To