Book Name:Wasail e Bakhshish

روتا پھروں   گلی گلی دیوانگی کے ساتھ

آتے ہیں   مجھ کو یاد وہ لمحاتِ خوشگوار

گزرے تھے طیبہ میں   جو کبھی مُرشِدی کے ساتھ

جوں   ہی نگاہ گنبدِ خَضرا کو چوم لے

قربان میری جان ہو خود رَفتگی([1]) کے ساتھ

مجھ کو بقیعِ پاک میں   دوگز زمیں   ملے

یارب!دعا ہے تجھ سے مِری عاجِزی کے ساتھ

اللّٰہ! میرا حَشر ہو بُوبکر اور عمر

عثماں   غنی و حضرتِ مولیٰ علی کے ساتھ

پلٹے گا پاک ہو کے درِ مصطَفٰے سے وہ

پہنچے گا جو گناہوں   کی آلودَگی کے ساتھ

 

ہر اِک گناہ گار پکارے گا حَشْر میں 

آقا کو اشکبار بڑی بے بسی کے ساتھ

مَحْشر میں   مجھ کو جُوں   ہی نظر آئیں   گے حُضُور

قدموں   میں   لوٹ جاؤں   گا وارفتگی([2])کے ساتھ

یارب! ترے کرم سے جگہ خُلد([3])میں   ملے

مجھ کو رسولِ پاک کی ہمسایگی کے ساتھ

وہ یارِ غار بھی ہیں   تو یارِ مزار بھی

بُوبکر آج بھی تو ہیں   ہر دم نبی کے ساتھ

روٹی بھی جَوکی اور بِچھونا چَٹائی کا

کرتے گزر بسر وہ بڑی سادَگی کے ساتھ

فیضانِ غوثِ پاک بِلارَیب([4])سب کے سب

 



[1]     بے خودی،مدہوشی ۔

[2]     دیوانگی ۔

[3]     جنّت ۔

[4]     بے شک ۔



Total Pages: 406

Go To