Book Name:Wasail e Bakhshish

رُلائے دن رات تیری الفت،             نبیِّ رَحمت شفیعِ اُمّت

میں   نام پر تیرے واری جاؤں  ،             میں   عشق میں   تیرے سر کٹاؤں

دو ایسا جذبہ دو ایسی ہمت،                   نبیِّ رَحمت شفیعِ اُمّت

حُسین ابنِ علی کا صدقہ،                     ہمارے غوثِ جلی کا صدقہ

عطا مدینے میں   ہو شہادت،                 نبیِّ رَحمت شفیعِ اُمّت

ہر اِک نبی ہر ولی کا صدقہ،                   تجھے تِری ہر گلی کا صدقہ

دے طیبہ میں   مرنے کی سعادت،                 نبیِّ رَحمت شفیعِ اُمّت

امام احمدرضا کا صَدقہ،                        ہمارے مرشِد ضِیا کا صَدقہ

 

بقیعِ غَرقَد کرو عنایت،                   نبیِّ رَحمت شفیعِ اُمّت

وسیلہ خُلَفائے راشِدیں   کا،              تمام اصحاب و تابِعیں   کا

جَوار جنَّت میں   ہو عنایت،             نبیِّ رَحمت شفیعِ اُمّت

مجھے تم ایسی دو ہمّت آقا،               دوں   سب کو نیکی کی دعوت آقا

بنادو مجھ کو بھی نیک خصلت،         نبیّ رَحمت شفیعِ اُمّت

قلیل روزی پہ دو قَناعت،              فُضُول گوئی سے دیدو نفرت

دُرُود پڑھتا رہوں   بکثرت            نبیِّ رَحمت شفیعِ اُمّت

گنہ کے دَلدَل سے اب نکالو،         مجھے سنبھالو مجھے بچالو

کہیں   نہ ہو جاؤں   شاہ! غارَت،        نبیِّ رَحمت شفیعِ اُمّت

بنادو صبر و رِضا کا پیکر،                   بنوں   خوش اَخلاق ایسا سرور

رہے سدا نَرم ہی طبیعت،             نبیِّ رَحمت شفیعِ اُمّت

نہ ہو عطا اس کو مال و دولت،

نہ دیجے عطّارؔ کو حکومت

یہ تیرا طالِب ہے جانِ رَحمت،

نبیِّ رَحمت شفیعِ اُمّت

 

پہنچوں   مدینے کاش! میں   اِس بے خودی کے ساتھ

پہنچوں  مدینے کاش!میں  اِس بے خودی کے ساتھ

 



Total Pages: 406

Go To