Book Name:Wasail e Bakhshish

المدد اے آمِنہ کے لاڈلے                    ہائے! مجھ پر نفس غالب آگیا

بدرِ کامِل دیکھ کر تلوا ترا                            فَق ہوا پھیکا پڑا شرما گیا

اللّٰہ  اللّٰہ !آپ کا حُسن و جمال                 دوست کیا دشمن کے دل کو بھا گیا

دشمنِ محبوب بُوجَہلِ لَعِیں                        بَدر میں   رُسوا ہوا مارا گیا

گلشنِ عالم کی کیا دیکھوں   بہار             میرے دل کو دشتِ طیبہ بھا گیا

ناخُنِ پاکی ضِیائیں   مرحبا!                   یہ ہِلالِ عید بھی شرما گیا

سبز گنبد کی بہاریں   دیکھ لو!                آنکھ کھولو دیکھو روضہ آگیا

لے کے پلٹا ان سے منہ مانگی مُراد              جو کوئی دربار میں   منگتا گیا

قافِلہ سوئے مدینہ جب چلا                 لب پہ نعتوں   کا ترانہ آگیا

چاند دو ٹکڑے ہوا صدقے گیا           جب اشارہ مصطَفٰے کا پاگیا

پاکے مرضی سرورِ کونین کی              ڈوبا سورج پھر پلٹ کر آگیا

مرحبا صلِّ علیٰ کا شور اٹھا                  حشر میں   جب ان کا دیوانہ گیا

ناز اٹھائے تھے جہاں   میں   جس کے وہ          حشر میں   نازوں   کا پالا آگیا

حشر میں   ان کے گدا کو دیکھ کر             خود جہنم کو پسینہ آگیا

آنکھ ٹھنڈی ہو ترے دیدار سے        طالبِ دیدار در پر آگیا

شور اُٹھا محشر میں   یہ چاروں   طرف

آگیا عطارؔ ان کا آگیا

 

مجھے مدینے کی دو اجازت، نبیِّ رَحمت شفیعِ اُمّت

مجھے مدینے کی دو اجازت،                   نبیِّ رَحمت شفیعِ اُمّت

پِلاؤ بُلوا کے جامِ الفت،                       نبیِّ رَحمت شفیعِ اُمّت

اگر نہیں   میری ایسی قسمت،                سدا حُضُوری کی پاؤں   لذَّت

رُلائے مجھ کو تمہاری فُرقت،                نبیِّ رَحمت شفیعِ اُمّت

عطا ہو مجھ کو غمِ مدینہ،                       تَپاں   جگر چاک چاک سینہ

بڑھے محبت کی خوب شِدّت،              نبیِّ رَحمت شفیعِ اُمّت

لگاؤ سینے میں   آگ ایسی،                     قرار پائے نہ دل کبھی بھی

 



Total Pages: 406

Go To