Book Name:Wasail e Bakhshish

پھر مدینے کی فَضائیں   پاگیا

( اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ عَزَّوَجَلَّ مدینۂ منوَّرہ زادَھَااللّٰہُ شَرَفًاوَّ تَعظِیْماً کی رنگین فَضاؤں   میں   ۲۸ ذوالحجۃِ الحرام ۱۴۱۶ھ کو یہ کلام قلمبند کرنے کی سعادت نصیب ہوئی )

پھر مدینے کی فَضائیں   پاگیا                       یارسولَ اللّٰہمجرم آگیا

اپنے سر پر لاد کر بارِ گناہ                          یارسولَ اللّٰہمجرم آگیا

آہ! پلّے نیکیاں   کچھ بھی نہیں                                                یارسولَ اللّٰہمجرم آگیا

اس کے نامے کی سیاہی دور ہو                  یارسولَ اللّٰہمجرم آگیا

نیکیوں   سے دو بدل اس کے گناہ                یارسولَ اللّٰہمجرم آگیا

دیجئے اس کو  شَفاعت کی سند                     یارسولَ اللّٰہمجرم آگیا

از پئے غوث و رضا ہو مغفِرت                 یارسولَ اللّٰہمجرم آگیا

صَدقہ شہزادوں   کا ہو چشمِ کرم                 یارسولَ اللّٰہمجرم آگیا

لے کر اُمّیدِ کرم جانِ کرم                      یارسولَ اللّٰہمجرم آگیا

واسطہ زَہرا کا دو خُلدِ بریں                          یارسولَ اللّٰہمجرم آگیا

اُس کو بھی تم تو لگاتے ہو گلے                     جس کو ہر دروازے سے ٹالا گیا

اے مِرے سروَر عطا ہو چشمِ تر                بھیک لینے در پہ منگتا آگیا

قلبِ مُضطَر کا سُوالی ہوں   شہا                   بھیک لینے در پہ منگتا آگیا

دیجئے سوزِ جگر سلطانِ دیں                         بھیک لینے در پہ منگتا آگیا

میرا سینہ ہی مدینہ دو بنا                            بھیک لینے در پہ منگتا آگیا

یانبی قُفلِ مدینہ دیجئے                              بھیک لینے در پہ منگتا آگیا

سیِّدی! اَخلاق اچّھے کیجئے                         بھیک لینے در پہ منگتا آگیا

لے کے کشکول آپ کے دربارمیں                  بھیک لینے در پہ منگتا آگیا

دور ہوجائے گناہوں   کا مَرَض                  بھیک لینے در پہ منگتا آگیا

دو بنا مجھ کو پسندیدہ غلام                          بھیک لینے در پہ منگتا آگیا

دولتِ اِخلاص ہو آقا عطا                        بھیک لینے در پہ منگتا آگیا

آپ کی نظرِکرم جُوں   ہی پڑی                 ابرِ رَحمت میرے سر پر چھا گیا

 



Total Pages: 406

Go To