Book Name:Wasail e Bakhshish

یہ دائمی رِضا کا طلب گار آگیا

ہوتی ہیں  رات دن یہاں  رَحمت کی بارِشیں 

بخشا گیا جو طیبہ میں   بدکار آگیا

دولت کی تاج و تَخت کی آقا نہیں   طلب

تم سے فَقَط تمہارا طلبگار آگیا

اس کی بلائیں   ٹل گئیں   غم دور ہوگئے

جو کوئی در پہ بے کس و ناچار آگیا

 

آقا غمِ مدینہ میں   بے حال کیجئے

ہر کوئی دیکھ کر کہے بیمار آگیا

دل بیقرار دو مجھے آنکھ اشکبار دو

یہ بھیک لینے درپہ میں   سرکار آگیا

سوزِ جگر عطا کرو سینہ فِگار دو

یہ بھیک لینے درپہ میں   سرکار آگیا

اے کاش! یاد میں   تِری رونا نصیب ہو

یہ بھیک لینے درپہ میں   سرکار آگیا

مَرضِ گناہ سے مجھے دے دیجئے شِفا

یہ بھیک لینے درپہ میں   سرکار آگیا

مجھ کو بقیعِ پاک میں   دو گز زمین دو

یہ بھیک لینے درپہ میں   سرکار آگیا

ہے زائرِ مدینہ شَفاعت کا مستحق

یہ بھیک لینے درپہ میں   سرکار آگیا

عاصی پہ کیجئے کرم اے شافِعِ اُمم

عطارؔ مغفِرت کا طلب گار آگیا

 

کیوں   بارہویں   پہ ہے سبھی کو پیار آگیا

کیوں   بارہویں   پہ ہے سبھی کو پیار آگیا          آیا اِسی دن احمدِمختار آگیا

گھر آمِنہ کے سیِّدِاَبرار آگیا                    خوشیاں   مناؤ غمزدو غمخوار آگیا

 



Total Pages: 406

Go To