Book Name:Wasail e Bakhshish

مرنا بھی سُنّتوں   میں   ہو سُنّتوں   میں   جینا

آقا مِری حُضُوری کی آرزُو ہو پُوری

ہوجائے دُور دُوری اے والیِ مدینہ

اُن کے دِیار میں   تُو کیسے چلے پھرے گا؟

عطارؔ تیری جُرأَت! تُو جائے گا مدینہ!!

 

آہ! شاہِ بحر و بر! میں   مدینہ چھوڑ آیا

(کاش!میرے بھی یہ جذبات ہوتے ، یہ صرف عاشقِ رسول کی مدینے سے جدائی کے جذبات کی ترجمانی ہے)

آہ! شاہِ بحر و بر! میں   مدینہ چھوڑ آیا

کوہِ غم پڑا سر پر، میں   مدینہ چھوڑ آیا

آہ! مسجدِ نبوی، ہائے گنبدِ خَضرا

آہ! روضۂ انور، میں   مدینہ چھوڑ آیا

غم کے چھا گئے بادَل، دل میں   مچ گئی ہَل چل

آہ! اے مرے یاور! میں   مدینہ چھوڑ آیا

جب چلا تھا طیبہ کو، تھی خوشی مرے دل کو

آہ! اب ہے دل مُضطَر! میں   مدینہ چھوڑ آیا

دل میں   بیقراری ہے اورگِریہ طاری ہے

بہ رہی ہے چشمِ تَر، میں   مدینہ چھو ڑ آیا

 

چُھپ گیا نگاہوں   سے، آہ! سب مدینے کا

دلکش و حسیں   منظر، میں  مدینہ چھوڑ آیا

قلب پارہ پارہ ہے، ہجرِ شہ نے مارا ہے

آہ !میرے چارہ گر! میں   مدینہ چھوڑ آیا

اب غمِ مدینہ سے، چاک چاک سینہ ہے

کیوں   کہوں   نہ رو رو کر، میں   مدینہ چھوڑ آیا

 



Total Pages: 406

Go To