Book Name:Wasail e Bakhshish

نزدیک آرہا ہے رَمضان کا مہینا

نزدیک آرہا ہے رَمضان کا مہینا

ساحِل سے حاجیوں   کا پھر آلگا سفینہ

آقا! نہ ٹوٹ جائے یہ دل کا آبگینہ

بلوایئے مدینے دِکھلایئے مدینہ

دِل رو رہے ہیں   جن کے آنسو چھلک رہے ہیں 

اُن عاشِقوں   کا صدقہ! بُلوائیے مدینہ

ہِجْر و فِراق میں   دِل بے تاب ہو رہے ہیں 

عُشّاق رو رہے ہیں   لو چل دیا سفینہ

بے تاب ہو رہا ہے طیبہ کی حاضِری کو

عاشِق تڑپ رہا ہے اور پھٹ رہا ہے سینہ

روضے کو دیکھنے کو آنکھیں   تَرَس رہی ہیں 

دکھلا  دو  سبز  گنبد   یا  سیِّدِ  مدینہ

نظرِ کرم خدارا میرے سیاہ دِل پر

بن جائے گا یہ دم بھر میں   بے بہا نگینہ

 

رنگینیِ جہاں   سے دِل ٹوٹ جائے میرا

یارب! مجھے بنادے تُو عاشِقِ مدینہ

آنسو نہ تَھم رہے ہوں   دِل خُون اُگل رہا ہو

جس وقت تیرے دَر پر آؤں   شہِ مدینہ

بس آرزو یہی ہے قدموں   میں   جان نکلے

پیارے نبی ہمارا مدفن بنے مدینہ

اے بیکسوں   کے ہَمدم! دُنیا کے دُور ہوں   غم

بس جائے دِل میں   کعبہ سینہ بنے مدینہ

تبلیغ سُنّتوں   کی کرتا رہوں   ہمیشہ

 



Total Pages: 406

Go To