Book Name:Karamaat e Farooq e Azam رضی اللہ تعالیٰ عنہ

صِدِّیق اَکبر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کے بعدتمام صَحابۂ کِرام عَلَيْهِمُ الّرِّضْوَان سے اَفضل ہیں  ۔ آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ صَاحِبُ الْکرامات اورجامِعُ الْفَضائِل وَالْکَمالات ہیں  ۔ ربِّ کائنات عَزَّوَجَلَّنے آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کودیگرخُصُوصِیّات کے ساتھ ساتھ بہت سی کرامات کا تاجِ فضیلت دے کر دوسروں  سے ممتازفرمادیا ۔

کرامَت حقّ ہے

                زمانۂ نُبُوَّت سے آج تک کبھی بھی اِس مسئلے (مَس ۔ ء ۔ لے ) میں  اَہلِ حق کے درمیان اِختِلاف نہیں  ہوا سبھی کا مُتَّفِقہ عقیدہ ہے کہ صَحابۂ کِرام عَلَيْهِمُ الّرِّضْوَان اوراَولیاءِ عُظامرَحِمَہُمُ اللہُ السَّلَام کی کرامتیں  حق ہیں  اورہرزمانے میں  اللہ والوں  کی کرامات کا صُدور و ظُہورہوتارہا اور اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّ قِیامت تک کبھی بھی اِس کا سِلسِلہ مُنْقَطِع (مُن ۔ قَ ۔ طِع یعنی ختم)نہیں  ہوگا،بلکہ ہمیشہ اَولیاءُ اللہ رَحِمَھُمُ اللہسے کَرامات صادِر وظاہِر ہوتی رہیں  گی ۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                     صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

کَرامَت کی تعریف

      اب اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّ مَنْبعِ علْم وہُنَر حضرتِ سیِّدُنا عمَر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کی مزید چند کرامات بَیان کی جائیں  گی مگر پہلے ’’کرامت‘‘ کی تعریف سُن لیجئے  ۔ چُنانچِہدعوتِ اسلامی کے اِشاعَتی اِدارے مکتبۃُ المدینہ کی مَطْبُوعہ1250 صفْحات پر مشتمل کتاب ’’بہارِ شریعت‘‘ جلداول صَفْحَہ58پر صَدرُ الشَّریعہ،بدرُ الطَّریقہ، حضرتِ  علّامہ مولانا مفتی محمد امجد علی اعظمیعَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ القَوِی’’کرامت‘‘ کی تعریف کچھ اس طرح بَیان فرماتے ہیں   :  ’’ولی سے جو بات خلافِ عادت صادِر ہو اُس کو’’ کرامت‘‘ کہتے ہیں  ۔ ‘‘ (بہارِشریعت)

اَفضَلُ الَاولِیاء

     عُلَمَاء واَکابِرینِاسلام رَحِمَہُمُ اللہُ السَّلَام کا اِس پر اِتِّفاق ہے کہ تمام صَحابۂ کِرامرِضْوَانُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِمْ اَجْمَعِیْن ’’اَفْضَلُ الاَوْلِیَاء‘‘ ہیں  ،قیامت تک کے تمام  اَولیاءُ اللہ رَحِمَھُمُ اللہ  اگرچِہ دَرَجۂ وِلایَت کی بلند ترین منزِل پر فائز ہو جائیں  مگر ہرگز ہرگز وہ کسی صَحابی رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کے کمالاتِ وِلایَت تک نہیں  پہنچ سکتے  ۔  اللہ رَبُّ الْعِزَّت عَزَّوَجَلَّ نے مصطَفٰے جانِ رحمت، شمعِ بزمِ رسالت،نوشۂ بزمِ جنَّت صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے غلاموں  کووِلایت کا وہ بُلند وبالا مَقام عنایت فرمایا اوراِن مُقدَّس ہستیوں   رِضْوَانُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِمْ اَجْمَعِیْن کو ایسی ایسی عظیم ُ الشان کرامتوں  یعنی بُزُرگیوں  سے سرفَرازکیا کہ دوسرے تمام اَولیاءِ کِرام رَحِمَہُمُ اللہُ السَّلَام کے لئے اِس معراجِ کَمال کا تَصَوُّر بھی نہیں  کیا جا سکتا ۔  اِس میں  شک نہیں  کہ حَضَراتِ صَحابۂ کِرام  رِضْوَانُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِمْ اَجْمَعِیْن سے اِس قدَر زیادہ کرامتوں  کا تذکرہ نہیں  ملتا جس قدَر کہ دوسرے اَولیاءِ کِرام رَحِمَہُمُ اللہُ السَّلَام سے کرامتیں  منقول ہیں  ۔  یہ واضِح رہے کہ کثرتِ کرامت، اَفضَلِیّتِ وِلایَت کی دلیل نہیں  کیونکہ وِلایَت دَرحقیقت قُربِ بارگاہِ اَحَدِیَّت عَزَّوَجَلَّ کا نام ہے اور یہ قربِ الٰہی عَزَّوَجَلَّ جس کو جس قدَر زیادہ حاصِل ہوگا اُسی قدَر اُس کا دَرَجۂ وِلایت بُلند سے بُلند ترہوگا ۔  صَحابۂ کِرام    رِضْوَانُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِمْ اَجْمَعِیْن چونکہ نِگاہِ نُبُوَّت کے اَنوار اور فیضانِ رِسالت کے فُیُوض و بَرَکات سے مُستَفِیض ہوئے ، اِ س لئے بارگاہِ ربِّ لَمْ یَزَلْ عَزَّوَجَلَّ میں  اِن بُزُرگوں  کو جو قُرْبوتَقَرُّب حاصِل ہے وہ دوسرے  اَولیاءُ اللہ رَحِمَھُمُ اللہکو حاصِل نہیں  ۔  اِس لئے اگرچِہ صَحابۂ کِرام  رِضْوَانُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِمْ اَجْمَعِیْن سے بَہُت کم کرامتیں  منقول ہوئیں  لیکن پھر بھی اُن کادرَجۂ وِلایت دیگر اَولیاءِ کِرام رَحِمَہُمُ اللہُ السَّلَامسے حددَرَجہ اَفضل و اَعلیٰ اوربُلند وبالا ہے  ۔

 



Total Pages: 21

Go To