Book Name:Karamaat e Farooq e Azam رضی اللہ تعالیٰ عنہ

روایت میں  ہے آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ 39 مردوں  کے بعد، خاتَمُ الْمُرْسَلین، رَحْمَۃٌ لّلْعٰلمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی دُعا سے اِعلانِ نُبُوَّت کے چھٹے سال میں  ایمان لائے  ۔ آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ  کے اسلام قَبول کرنے سے مسلمانوں  کو بے حد خوشی ہوئی اوراُن کو بَہُت بڑا سہارا مل گیا یہاں  تک کہ حُضُور رحمتِ عالَم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے مسلمانوں  کے ساتھ مل کر حَرَمِ محترم میں  اِعْلانِیہ نَماز ادا فرمائی ۔ آپرَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ  اِسلامی جنگوں  میں  مُجاہِدانہ شان کے ساتھکُفّارِ نا ہبخار سے بر سرِپَیکار رہے اور سرورِ کائنات، شَہنْشاہِ موجودات صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی تمام اسلامی تحریکات اورصُلْح وجنگ وغیرہ کی تمام منصوبہ بندیوں  میں  وزیر ومُشیر کی حیثیَّت سے وفادار ورفیقِ کار رہے  ۔ مُحسِنِ اُمَّت، خلیفۂ اوّل ، امیرُالْمُؤمِنِین ،حضرتِ سیِّدُنا ابو بکر صِدِّیق رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ نے اپنے بعدحضرتِ سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کو خلیفہ مُنتخَب فرمایا، آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ  نے تختِ خِلافت پر رَونق اَفروز رہ کر جانَشینی ٔ مصطَفٰے صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی تمام تر ذِمّے داریوں  کو بَطریقِ اَحْسن سر اَنجام دیا ۔   

      نَمازِ فَجْر میں  ایک بدبخت ابولؤلؤ فیروز نامی (مجوسییعنی آگ پوجنے والے )کافِر نے آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ پر خنجر سے وار کیااور آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ زَخموں  کی تاب نہ لاتے ہوئے تیسرے دن شرفِ شہادَت سے مُشرَّف ہوگئے  ۔ بوقتِ شہادت عُمْر شریف63  برس تھی ۔  حضرتِ سیِّدُنا صُُہَیْب رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ نے نَمازِ جنازہ پڑھائی اور گوہرِ نایاب ، فیضانِ نُبُوَّت سے فَیضیاب خلیفۂ رسالت مآب حضرتِ سیِّدُناعمر بن خطّاب رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ روضۂ مُبارَکہ کے اندریکم مُحَرَّمُ الْحرام 24 ہجری اتوار کے دن حضرتِ سیِّدُنا  صِدِّیقِ اَکبر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کے پہلوئے اَنور میں  مَدفون ہوئے جو کہ سرکارِ انام صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے پہلوئے پاک میں  آرام فرما ہیں  ۔  (الرّیا ض النضرۃ فی مناقِب العَشرۃ ج ۱ص ۲۸۵، ۴۰۸، ۴۱۸، تارِیخُ الْخُلَفاء  ص۱۰۸وغیرہ) اللہ عَزَّ وَجَلَّ کی اُن پر رحمت ہو اور اُن کے صدْقے ہماری بے حِساب مغفِرت ہو ۔         اٰمین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

قُرْبِ خاص

      حضرتِ سیِّدُنا صِدِّیقِ اَکبر اور حضرتِ سیِّدُنا فاروقِ اَعظَم رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کو دُنْیَوِی حیات میں  بھی اور بعدِ مَمات بھی  سرورِ کائنات ،شَہَنْشاہ ِ موجودات صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا قُرْبِ خاصعطا کیا گیا چُنانچِہ عاشقِ مصطَفٰے ، فِدائے جملہ صحابہ،مُحبِّ اَولیاء و اصفیا شاہ امام احمد رضاخان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرَّحْمٰنفرماتے ہیں   :    ؎

محبوبِ ربِّ عَرش ہے اس سبْز قُبّے میں         پہلو میں  جلوہ گاہ عتیق وعُمَر کی ہے

سَعدَین کا قِران ہے پہلوئے ماہ میں                 جھرمٹ کئے ہیں  تارے تجلِّی قمر کی ہے [1]

      کسی اور محبت والے نے کہا ہے  :    ؎

حیاتی میں  تو تھے ہی خدمتِ محبوبِ خالِق میں

مَزار اب ہے قریبِ مصطَفٰے فاروقِ اَعظَم کا

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                       صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

صاحِبِ کرامات

      بارگاہِ نُبُوَّت سے فیضیاب، آسمانِ رِفعت کے دَرَخْشاں  ماہتاب حضرتِ سیِّدُنا عُمَر بن خَطّابرَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ عاشقِ اکبرحضرتِ سیِّدُنا



 7   سعدین دو سعید سیّاروں کے نام ہیں ۔یہاں سَعَدین سے مراد حضرتِ سیِّدُنا صِدِّیقِ اَکبر اور حضرتِ سیِّدُناعُمَر فاروقِ اَعظم رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُمَا اور ماہ و قمر یعنی چاند رسولِ ذیشان صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ اور تارے 70ہزار ملائکہ ہیں جو مَزارِ پُر اَنوار پر چھائے ہوئے ہیں ۔



Total Pages: 21

Go To