Book Name:Karamaat e Farooq e Azam رضی اللہ تعالیٰ عنہ

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ علٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

کراماتِ فاروقِ اعظم[1] رضی اللہ تعالٰی عنہ

شیطان لاکھ سُستی دلائے یہ رِسالہ(48صفحات) مکمَّل پڑھ لیجئے اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّ

آپ اپنے دل میں  حضرتِ سیِّدُنا عُمَر رضی اللہ تعالٰی عنہ  سے جذبۂ عقیدت ومحبّت کو فُزُوں  تر ہوتا محسوس فرمائیں  گے  ۔

دُرودِ پاک کی فضیلت

     وزیرِ رِسالت مآب، آسمانِ صَحابِیّت کے دَرَخشاں  ماہتاب، نِظامِ عَدْل کے آفتابِ عالمتاب، امیرُالْمُؤمِنِین حضرتِ سیِّدُنا عُمَر بن خطّابرَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ فرماتے  ہیں   :  اِنَّ الدُّعَاءَ مَوْقُوْفٌ بَیْنَ السَّمَاءِ وَالْاَرْضِ لَا یَصْعَدُ مِنْہُ شَیْئٌ حَتّٰی تُصَلِّیَ عَلٰی نَبِیِّکَ(صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ)یعنی بے شک دُعازمین وآسمان کے درمیان ٹھہری رہتی ہے اور اُس سے کوئی چیز اوپر کی طرف نہیں  جاتی جب تک تم اپنے نبیِّ اَکرم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ پر دُرُودِ پاک نہ پڑھ لو  ۔  (تِرمِذی ج۲ ص۲۸ حدیث۴۸۶)

حضرت علّامہ کفایت علی کافی عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ الشَّافِی  فرماتے ہیں   :    ؎     

دُعا کے ساتھ نہ ہووے اگر درُود شریف      نہ ہووے حَشر تلک بھی بر آوَرِ[2] حاجات

قبولیَّت ہے دُعا کو دُرود کے باعِث                یہ ہے دُرود کہ ثابِت کرامت وبَرَکات

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                       صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

صدائے فاروقی اور مسلمانوں  کی فتح یابی

    دعوتِ اسلامی کے اِشاعتی اِدارے مکتبۃُ المدینہ کی مَطبُوعہ 346 صفْحات پر مُشْتَمِل کتاب ’’کراماتِ صحابہ‘‘ صَفْحَہ74پر شیخ الحدیث حضرتِ علّامہ مولانا عبد المصطفی اعظمی عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ القَوِی تحریر فرماتے ہیں  جس کا خُلاصہ کچھ یوں  ہے :  امیرُ الْمُؤمِنِین، حامی ٔ دینِ متین،مُحبُّ المسلمین، غَیظُ المنافِقین،امامُ العادِلین، حضرتِ سیِّدُنا عُمَرفاروقِ اَعظم رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ نے حضرتِ سیِّدُنا سارِیہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کو ایک لشکر کا سِپَہ سالار ( کمانڈر)بنا کر سرزمینِ ’’نَہاوَنْد‘‘ میں  جِہاد کے لئے رَوانہ فرمایا ۔ سپہ سالارِ لشکرِ اسلامیہ حضرتِ سیِّدُنا سارِیہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کُفّارِ ناہنجار سے برسرِپَیکار تھے کہ وزیرِ رسولِ انور حضرت ِسیِّدُنا عُمَر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ نے مسجدِنَبَوِ یِ الشَّریف عَلٰی صَاحِبِہَا الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام  کے مِنبرِ اَطہَر پر خُطبہ پڑھتے ہوئے اچانک اِرشاد فرمایا :  ’’یَا سَارِیَۃُ الْجَبَل یعنی اے ساریہ!پہاڑکی طرف پیٹھ کرلو ۔ ‘‘ حاضِرینِ مسجِد حیران رہ گئے کہ لشکرِ اسلام کے سِپَہ سالار حضرتِ سارِیَہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہتو مدینۂ مُنَوَّرَہ زَادَھَا اللہُ شَرَفاً وَّ تَعْظِیْماً سے سینکڑوں  مِیل دُور سرزمینِ ’’نَہاوَنْد‘‘ میں  مصروفِ جِہاد ہیں  ، آج امیرُالْمُؤمِنِین رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ نے اُنہیں  کیونکر اور کیسے پکارا؟ اِس اُلجھن کی تشفِّی تب ہوئی جب وہاں  سے فاتِحِ نَہاوَنْد حضرتِ سیِّدُنا سارِیَہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کا قاصِد (یعنی نمایَندہ) آیا اوراُس نے خبر دی کہ میدانِ جنگ میں  کُفّارِ جفا کار سے مُقابلے کے دَوران جب ہمیں  شِکَست کے آثار نظر آنے لگے ، اِتنے میں  آواز آئی :  ’’یَا سَارِیَۃُ الْجَبَل یعنی اے سارِیہ!پہاڑکی طرف پیٹھ کر لو ۔ ‘‘ حضرتِ سیِّدُنا سارِیَہ رَضِیَ



1   یہ بیان امیرِ اہلسنّت حضرتِ علامہ مولانا ابو بلال محمد الیاس عطّارؔ قادری رضوی دامت برکاتہم العالیہ نے تبلیغِ قراٰن و سنّت کی عالمگیر غیرسیاسی تحریک دعوتِ اسلامیکے عالمی مَدَنی مرکز فیضانِ مدینہ باب المدینہ کراچی میں ہفتہ وار سنّتوں بھرے اجتماع (17-12-09 ؍  ۲۹ ذُوالْحجّۃِ الحرام   ۱۴۳۰؁ ھ) میں فرمایا۔ ضَروری ترمیم کے ساتھ تحریراً حاضرِ خدمت ہے۔       ۔مجلسِ مکتبۃُ المدینہ

1   برآور کا معنٰی ہے: پورا ہونا۔



Total Pages: 21

Go To