Book Name:Kufriya Kalmaat kay Baray Main Sawal Jawab

سے سب عَرَب ہرگز بُرے نہیں   بن گئے ۔ اہلِ عَرَب سے مَحَبَّت کیلئے ہم غلامانِ مصطَفٰے کیلئے یِہی بات کافی ہے کہ ہمارے پیارے پیارے میٹھے میٹھے آقا صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  عَرَبی ہیں   ۔

ہائے کس وقت لگی پھانس اَلَم کی دل میں

کہ بَہُت دور رہے خارِ مُغیلانِ عرب

  عربیوں   کے فضائل پر 6 احادیثِ مبارَکہ

سُوال :  اہلِ عرب کے فضائل پر کچھ احادیثِ مبارَکہ بیان کیجئے تا کہ جو نادان مسلمان خواہ مخواہ بُرا بھلا کہتے ہیں   اُن کی آنکھیں   کھلیں   ۔

جواب :   عربیوں  کے فضائل پر مبنی6 احادیث ِمبارَکہ پیش کی جاتی ہیں   :

{1}محبوب کے کُتّے سے بھی پیار ہُوا کرتا ہے

             ’’ جس نے عَرَب سیمَحَبَّتکی اُس نے مجھ سے مَحَبَّتکی ۔  ‘‘   ( اَلْمُعْجَمُ الْاَ وْسَط  ج۲ ص۶۶ حدیث ۲۵۳۷ )   علّامہ مَناوی عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ القَوِیفرماتے ہیں  : سچّیمَحَبَّت کی علامت یہ ہے کہ ہر اس چیز سیمَحَبَّت رکھی جائے جو محبوب کیطر ف منسوب ہو ، کیونکہ جو شخص کسی انسان سے مَحَبَّت رکھتا ہے اُس کے مَحَلّے کے کتّے کو بھی اچّھا جانتا ہے ۔ (فیض القدیر ج۳ ص۴۸۸ تحت الحدیث ۳۶۶۶ )

رضا ؔکسی سگِ طَیبہ کے پاؤ ں   بھی چُومے

                      تم اور آہ !  کہ اِتنا دِماغ لے کے چلے (حدائقِ بخشش شریف)

{2}عَرَبوں   سے   بُغض رکھنے والا شَفاعَت سے محروم

            حضرتِ سیِّدُنا عثمان بن عَفّان رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ سے مروی ہے کہرسولِ اکرم، رحمتِ عالَم ،  نُورِ مُجَسَّم ، شاہِ بنی آدم ، نبیِّ مُحتَشَم صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   نے فرمایا :  جس نے اَہلِ عَرَب سے بُغض و کُدُورت رکھی میری شَفاعَت میں   داخِل نہ ہو گا اورنہ ہی   اُسے میری  مَحَبَّتنصیب ہوگی ۔   (تِرْمِذِی  ج۵ ص۴۸۷ حدیث ۳۹۵۴ )

{3}عجمی صحابی کو عَرَبی کے بُغض سے بچنے کی تاکید

            حضرتِ سیِّدُنا سَلمان فارسی رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ سے رِوایت ہے ، سلطانِ دوجہان، مدینے کے سلطان، رحمتِ عالمیان ، سرورِذیشان صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   نے فرمایا :  اے سَلْمان ! مجھ سے بُغض نہ رکھنا ، ورنہ تم اپنے دین سے جُدا ہو جاؤ گے ۔  میں   نے عرض کی :  یارَسُوْلَ اللہ !  عَزَّوَجَلَّ وَ صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   میں   آپ سے کس طرح بُغض رکھ سکتا ہوں  ؟ آپ کے طُفیل ہی تو مجھے اللہ تعالیٰ نے ہدایت عنایت فرمائی ہے ۔  فرمایا : (اگر) تم عَرَب سے بُغض رکھو گے تو (گویا)مجھ سے ہی بُغض رکھو گے ۔ ( اَیضاً حدیث ۳۹۵۳ )   

            {4} عرب سے بُغض نِفاق کی علامت ہے

            امیرُالْمُؤمِنِینحضرتِ مولائے کائنات، علیُّ المُرتَضٰی شیر خدا  کَرَّمَ اللہ  ُ تعالٰی وَجْہَہُ الْکَرِیْم فرماتے ہیں  ، نبیِّ کریم ، رء ُوفٌ رَّحیم ، محبوبِ ربِّ حکیم عَزَّوَجَلَّ و صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کا فرمانِ عظیم ہے :  عرب سے وُہی بُغض رکھے گا جومُنافِق ہوگا ۔  (اَلْمُعْجَمُ الْکَبِیْرلِلطَّبَرَانِیّ ج ۱۱ ص ۱۱۸ حدیث ۱۱۳۱۲ )

{5} بروزِ قِیامت عَرَب سب سے زیادہ قریب

          محبوبِ رب، سلطانِ عرب عَزَّوَجَلَّ و صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کا فرمانِ عظیم الشان ہے :  قِیامت کے دن لِوائُ الْحَمْد(یعنی حمد کا پرچم) میرے ہاتھ میں   ہوگا اور اُس دن عَرَب، تمام مخلوق کی نسبت مجھ سے زیادہ قریب ہوں   گے ۔ (شُعَبُ الْاِیْمَان  ج۲ ص۲۳۱ حدیث ۱۶۱۳ )

{6} عَرَب سے مَحَبَّت ایمان کی علامت ہے

            نبیِّ رَحمت ، شفیعِ امّت، شَہَنْشاہِ نُبُوَّت ، تاجدارِ رسالت صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کا فرمانِ عالیشان ہے  : حُبُّ الْعَرَبِ اِیْمَانٌ وَّ بُغْضُھُمْ نِفَاق ۔ یعنی عرب کی مَحَبَّت ایمان ہے اور ان کا بُغض مُنافَقَت ۔ (اَ لْجامِعُ الصَّغِیر ص۲۲۳ حدیث ۳۶۶۴) اِس کی شرح میں   امام مَناوی عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہ القَوِی نے فرمایا :  ’’  جب کوئی انسان عَرَب سے

Total Pages: 147

Go To