Book Name:Kufriya Kalmaat kay Baray Main Sawal Jawab

 

جواب :  واقِعی آج کل اکثر مسلمانوں  میں   یہ بلا عام ہے اِس سے بچنا ضِروری ہے  ۔ دعوتِ اسلامی کے اِشاعتی ادارے مکتبۃُ الْمدینہ کی مطبوعہ 205صَفحات پر مشتمل کتاب ،  ’’ بہارِ شریعت ‘‘ حصّہ6 صَفْحَہ31پر صدرُ الشَّریعہ، بدرُ الطَّریقہ حضرتِ  علّامہ مولیٰنا مفتی محمد امجد علی اعظمیعَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ القَوِی  فرماتے ہیں   :  ’’ سب عربیوں   سے بَہُت نرمی کے ساتھ پیش آئے ، اگر وہ سختی کریں   ادب سے تحمل (تَ ۔ حَمْ ۔ مُل یعنی برداشت) کرے اس پر شَفاعت نصیب ہونے کا وعدہ فرمایا ہے خُصُوصاً اہلِ حرمین، خُصوصاً اہلِ مدینہ ۔  اہلِ عَرَب کے اَفعال پر اعتراض نہ کرے ، نہ دل میں   کدُورت (یعنی مَیل) لائے ، اس میں   دونوں   جہاں   کی سعادت ہے ۔  ‘‘  (بہار شریعت ) بِلامَصلَحتِ شَرعی کسی بھی مسلمان کو بُرا بھلا کہنے کی اجازت نہیں    چِہ جا ئیکہ اہلِ عرب حضرات کوکہ یہ تو سرکارِ کائنات صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کے ہم قوم ہیں   ۔ بِالفرض کوئی اہلِ عَرَب کو سلطانِ عرب، محبوبِ ربعَزَّوَجَلَّ  و صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی نسبت کی وجہ سے بُرا کہے تو اُس پر حکمِ کفر ہے مگر مسلمان سے ایسا مُتَصَوَّر نہیں  (یعنی سوچا بھی نہیں   جا سکتا) ۔ اہلِ عَرَب کے بعض فضائل سنئے : محبوبِ رب، تاجدارِ عَرَب عَزَّوَجَلَّ  و صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کا فرمانِ عبرت نشان ہے :  عَرَب کی مَحَبَّتایمان ہے اور ان کا  بُغْض کُفر ہے ، جس نے عَرَب سے مَحَبَّت کی اُس نے مجھ سے  مَحَبَّتکی اور جس نے ان سے بُغض رکھا اُس نے مجھ سے بُغض رکھا ۔ (اَلْمُعْجَمُ الْاَ وْسَط ج۲ ص۶۶ حدیث ۲۵۳۷ )  تین وُجُوہ کی بِنا پر عَرَب سے مَحَبَّت رکھو، اس لئے کہ {۱}میں   عَرَبی ہوں   {۲} قُراٰنِ مجید عَرَبی ہے {۳}اہلِ جنَّت کاکلام عَرَبی ہے ۔  (شُعَبُ الْاِیْمَانج۲ ص۲۳۰ حدیث ۱۶۱۰ )

عَرَب سے بُغض کب کُفْر ہے

            حضرتِ علّامہ مَناوی عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ القَوِیکے فرمانِ گرامی کا خُلاصہ ہے :  سرکارِ نامدارصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  عَرَبی ہیں   اور قراٰن بھی اہلِ عَرَب کی زَبان میں   ہے ، ان نِسبتوں   کی وجہ سے اگر کوئی عَرَبوں   سے بُغض رکھے تو اِس سے سلطانِ عَرَبصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کا بُغْض لازِم آئے گا جو کہ کُفر ہے ۔    (فیضُ القدیر لِلمناوی ج۳ ص۲۳۱ تحتَ الحدیث ۲۲۵ )

محبوب سے منسوب ہر چیز محبوب ہوتی ہے

           صدرُ الافاضِل حضرتِ علّامہ مولیٰنا سیِّد محمد نعیم الدّین مُراد آبادی عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہ الْہَادِی فرماتے ہیں  : حُضُور(صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  ) سے نسبت رکھنے والی چیزوں   کو محبوب رکھنا حُضُور( صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ)  کی  مَحَبَّت میں   داخِل ہے ۔  قدرَتی طور پر انسان جس سے  مَحَبَّت رکھتا ہے اُس سے نسبت رکھنے والی تمام چیزیں   اِس کو محبوب (یعنی پیاری) ہو جاتی ہیں   ۔ حُضُور سیِّدِ عالَم صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  سے مَحَبَّت رکھنے والے بھی حُضُور (صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  ) کے وطنِ پاک کے رہنے والوں   اور حضور علیہ الصَّلٰوۃوَ السلام سے نسبت رکھنے والی ہر چیز کو جان و دل سے محبوب رکھتے ہیں  ۔ (سوانحِ کربلا ص ۹)

پھر اُٹھا ولولۂ یادِ مُغیلانِ([1])عرب

پھر کھنچا دامنِ دل سُوئے بِیابانِ عرب(حدائقِ بخشش شریف)

   کیا کُفّارِ عَرَب سے بھی مَحَبَّت رکھنی ہوگی ؟

سُوال : کیا کُفّارِ عرب سے بھی مَحَبَّت رکھنی ہوگی ؟

جواب : جی نہیں   ۔ مَحَبَّتایمان کے ساتھ مَشروط ہے ۔  کفّار و مُرتَدینِ عَرَب سے مَحَبَّتتو دُور کی بات ہے اُن سے عداوت رکھنی واجِب ہے ۔ جیسا کہ حضرتِ علّامہ مَناوی عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ القَوِی  فرماتے ہیں   : جو اہلِ عَرَب کافِریا منافِق ہیں   اُن سے بُغض رکھنا بُرا نہیں   بلکہ واجِب ہے ۔  (فیض القدیر شرح الجامع الصغیرج۱ ص۲۳۱ تحت الحدیث ۲۲۵ )

کفّارِ عَرَب سے نفرت ضَروری ہے

             مُفَسّرِ شہیر حکیمُ الْاُمَّت حضر  تِ مفتی احمد یار خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الحَنّان حدیثِ مبارک کے اِس حصے ،  ’’ عَرَب سے مَحَبَّت رکھو ‘‘  کے تَحت فرماتے ہیں  : عَرَب سے مُراد عَرَب کے مؤمنین ہیں  ۔ کُفّارِ عَرَب اور عَرَب کے یَہود و نصاریٰ سے نفرت و عداوت ضَروری ہے کہ یہ نفرت ان کے کفر سے ہے نہ کہ عَرَبی ہونے سے ۔ (یہی حکم مُرتدین کا ہے ) مومنینِ عَرَب ہمارے سروں   کے تاج ہیں   کہ حُضُورصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے پڑوسی ہیں    ۔ (مراٰۃ المناجیح ج۸ ص۳۳۳ ۔ ۳۳۴)

سب کے سب عَرَبی مسلمانوں   سے ہم کو پیار ہے

انْ شَاءَ اللہ دو جہاں   میں   اپنا بیڑا پار ہے

اہلِ عَرَب عَرَبی آقا کے ہم قوم ہیں 



Total Pages: 147

Go To