Book Name:Aala Hazrat رحمۃ اللہ علیہ Ki Infiradi Koshishain

نہیں)۔‘‘  (حیات اعلی حضرت، ج ۱، ص۱۰۵)

مَدَنی پھول

          سبحٰن اللہعَزَّوَجَلَّ! کیسا پیارا اندازِ تبلیغ تھا مجدد ِ دین و ملت ، سرکار اعلیٰ حضرت  عَلَیْہِ رَحمَۃُ ربِّ الْعِزَّتکا۔اللہ  عَزَّوَجَلَّ ہمیں بھی اسلا م کی سربلندی کی خاطر حکمت ودانائی کے سا تھ بڑے ہی اَحسن انداز میں خوب خوب نیکی کی دعوت عام کرنے کی توفیق عطا فرمائے ۔ اٰمین بجاہ ا لنبی الامین صلی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہ وسلم 

شہا ایسا جذبہ پاؤں کہ میں خوب سیکھ جاؤں

تیری سنتیں سکھانا  مَدَنی  مدینے  والے

اللہ عَزَّوَجَلَّ کی اعلٰی حضرت  پَر رَحمت ہو اور ان کے صد قے ہماری بے حسا ب مغفِرت ہو۔

                                                                                                                                                                                                                                                                                                اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                                               صلَّی اللہ تعالٰی عَلٰی محمَّد

    (5)   طالبِ علم پر اِنفرادی کوشش

          حضرتِ مولانا نُور محمد علیہ رحمۃُاللہ الصَّمَد اور حضرت مولانا سیِّد قَنَاعت علی   علیہ رحمۃاللہ القوی یہ دونوں حضرات، مجددِ دین وملت، اعلیٰ حضرت    عَلَیْہِ رَحمَۃُ ربِّ الْعِزَّت جیسے سچے عاشقِ رسول کی صحبتِ بابرکت میں رہ کر علمِ دین کی دولتِ بے بہا حاصل کر رہے تھے ۔ ایک مرتبہ مولانا نور محمد رحمۃاللہ علیہنے سید صاحب کا نام لے کر اس طرح پکارا : ’’  قناعت علی ، قناعت علی !  ‘‘  جب سیِّدُالسَّادات  علیہ الصلوٰۃ والسلام کے عاشقِ صادِق کے کانوں میں یہ آواز پڑی تو گوارانہ کیا کہ خاندانِ رسول کے شہزادے کو اس طرح نام لے کر پکارا جائے ۔ فوراََ مولانانُور محمد صاحب کوبلوایا اوراِنفرادی کوشش کرتے ہوئے فرمایا:  ’’ کیاسیِّد زادوں کو اس طرح پکارتے ہیں ! کبھی مجھے بھی اس طرح پکارتے ہوئے سنا؟   (یعنی میں تو استاذ ہوں پھر بھی کبھی ایسا انداز اختیار نہیں کیا)   ‘‘  یہ سن کرمولانانورمحمد صاحب بہت شرمندہ ہوئے اور ندامت سے نگاہیں جھکا لیں ۔ اعلیٰ حضرت  عَلَیْہِ رَحمَۃُ ربِّ الْعِزَّتنے فرمایا:  ’’ جائیے ! آئندہ خیال رکھئے گا۔ ‘‘   (حیات ِ اعلیٰ حضرت، ج۱، ص۱۸۳)

اللہ عَزَّوَجَلَّ کی اعلٰی حضرت  پَر رَحمت ہو اور ان کے صد قے ہماری بے حسا ب مغفِرت ہو۔

                                                                                                                                                                                                                                                اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                               صلَّی اللہ تعالٰی عَلٰی محمَّد

 (6)    غیر مُسْلِم پر اِنْفِرادی کوشش

          حضرت علّامہ مولاناسیِّدایوب علیعلیہ رحمۃ القوی کابیان ہے کہ ’’ اذانِ ظہر ہوچکی تھی مُفَسِّرِشَہِیرحضرت علّامہ مولانا نعیم الدین مرادآبادی علیہ رحمۃاللہ الہادی اور حضرت مولانا رحم الہٰی  علیہ رحمۃاللہ القوی، سرکارِ اعلیٰ حضرت ، مجدد دین وملت اِمام احمد رضا خان  علیہ رحمۃ الرحمن کی خدمتِ بابَرَکت میں حاضرتھے۔ نَماز کی تیاری ہورہی تھی ۔ اتنے میں ایک آرِیہ (یعنی غیرمسلم)  آیا اورکہنے لگا: ’’  اگر میرے چند سوالات کے جوابات دے دیئے جائیں تو میں اور میری بیوی بچے سب مسلمان ہوجائیں گے ۔ ‘‘  نامعلوم اُس کے جوابات میں کتنا وقت لگتا ؟  چنانچہ اعلیٰ حضرت  عَلَیْہِ رَحمَۃُ ربِّ الْعِزَّت نے فرمایا: ’’ کچھ دیر ٹھہر جاؤ! ابھی نَماز کاوقت ہوگیا ہے، نماز کے بعد اِنْ شا ءَ اللہ  عَزَّوَجَلَّ  



Total Pages: 20

Go To