Book Name:Aala Hazrat رحمۃ اللہ علیہ Ki Infiradi Koshishain

صاحب ! اس طرح صفِ اول کا ثواب نہیں ملتا کیونکہ یہ جگہ مسجد سے خارِج ہے، آئندہ خیال کیجئے گا۔ اگر لوگوں کو صف اوَّل کے ثواب کا علم ہوجائے توقُرعہ اَندازی کرنا پڑے۔ ‘‘  (حیات اعلیٰ حضرت، ج۳، ص۸۶)

مَدَنی پھول

            سبحٰن اللہ عَزَّوَجَلَّ کتنا پیار ااندازِ تبلیغ تھا امام اہلسنّت، مجددِ دین وملت شاہ امام احمد رضا خان علیہ رحمۃالرحمن کا کہ شرعی مسئلہ بھی بتا دیا اور پہلی صف میں نماز اَدا کرنیکی فضیلت بھی بتا دی۔ میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! ہمیں بھی چاہئے کہ پانچوں نمازیں مسجد کی پہلی صف میں تکبیرِ ُاولیٰ کے ساتھ باجماعت ادا کریں ۔ اگریہ عادت بن گئی تو ان شاءَاللہ عزَّوجَلَّ  نماز کی برکت سے سب بگڑے کام سنور جائیں گے ۔ الحمدللّٰہ عَزَّوَجَلَّ شیخِ طریقت امیرِ اہلسنّت دامت برکاتہم العالیہ کے عطا کردہ 72 مَدَنی انعامات میں سے ایک مَدَنی انعام یہ بھی ہے : ’’ کیا آج آپ نے پانچوں نمازیں مسجد کی پہلی صف میں تکبیرِ اُولیٰ کے ساتھ باجماعت ادا فرمائیں ؟  نیز ہر بار کسی کو اپنے ساتھ مسجد میں لے جانے کی کوشش فرمائی ؟  ‘‘

           اللہ تبارَکَ وتعالٰی ہمیں تمام نمازیں مسجد کی پہلی صف میں باجماعت ادا کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

اللہ عَزَّوَجَلَّ کی اعلٰی حضرت  پَر رَحمت ہو اور ان کے صد قے ہماری بے حسا ب مغفِرت ہو۔

                                                                                                                                                اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                               صلَّی اللہ تعالٰی عَلٰی محمَّد

(16)   نواب صاحب پر انفرادی کوشش

          خلیفۂ اعلیٰ حضرت ، ملک العلماء حضرت علامہ مولانا ظفر الدین بہاری علیہ رحمۃ اللہ القوی لکھتے ہیں کہ ’’ ایک صاحب جنہیں نواب صاحب کہا جاتا تھا، مسجد میں نماز پڑھنے آئے اور کھڑے کھڑے بے پروائی سے اپنی چھڑی مسجد کے فرش پر گرا دی، جس کی آواز حاضرین نے سنی۔اعلیٰ حضرت  عَلَیْہِ رَحمَۃُ ربِّ الْعِزَّتنے فرمایا:  ’’ نواب صاحب! مسجد میں زور سے قدم رکھ کر چلنا بھی منع ہے، پھر کہاں چھڑی کو اتنی زور سے ڈالنا! ‘‘  نواب صاحب نے میرے سامنے وعدہ کیا کہ  ان شاءَاللہ عَزَّوَجَلَّ   آئندہ ایسا نہیں ہو گا۔

اللہ عَزَّوَجَلَّ کی اعلٰی حضرت  پَر رَحمت ہو اور ان کے صد قے ہماری بے حسا ب مغفِرت ہو۔

                                                                                                                                                اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                                               صلَّی اللہ تعالٰی عَلٰی محمَّد

  (17)   خطرناک وسوسوں سے کس طرح بچا یا

          خلیفۂ مفتیٔ اعظم ہندحضر ت مولانا اعجاز ولی خاں صاحب علیہ رحمۃاللہ الواہب  کا بیان ہے :  ’’ جناب مولانا شاہ عارفُ اللہ صاحب خطیب خیرالمساجد خیر نگر میرٹھ اپنے والد ماجد مولانا حبیب اللہ صاحب قادِری رضوی کا واقعہ بیان کرتے ہوئے فرماتے ہیں :  ’’ ایک دن بدمذہبوں کے عقائد پر گفتگو ہورہی تھی والد صاحب نے کہا: ’’  کم از کم اس قدر بات تو ضرور ہے کہ یہ بدمذہب ہمارے قبلہ کی طرف منہ کرکے نماز تو ضرور پڑھتے ہیں اور اہلِ قبلہ کو برا کہنے کی ممانعت آئی ہے۔ ‘‘  ابھی یہ مجلس ختم بھی نہ ہونے پائی تھی کہ فوراً ہی بریلی شریف سے تار پہنچا کہ  



Total Pages: 20

Go To