Book Name:Aala Hazrat رحمۃ اللہ علیہ Ki Infiradi Koshishain

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                                               صلَّی اللہ تعالٰی عَلٰی محمَّد

 (12)   تارکِ سنّت پر انفرادی کوشش

          حاجی خدابخش صاحب بھی ان سعادت مندوں میں سے تھے جو امامِ اہلسنّت، مجددِ دین وملت ، رہبر شریعت ، پیر طریقت، سرکار اعلیٰ حضرت امام احمد رضا خان علیہ رحمۃ الرحمن کے پیچھے نماز ادا کیا کرتے تھے ۔آپ کا بیان ہے کہ ایک دن فجر کی نمازکے بعد آپ کا ایک مریدحاضر خدمت تھاجسکی داڑھی حدِّشرع  (یعنی ایک مٹھی) سے کم تھی۔ وہ اپنے پیر و مرشد سے کوئی وظیفہ لیناچاہتا تھا ۔ جب اس نے اپنی خواہش کا اظہار کیا۔تو  اعلیٰ حضرت  عَلَیْہِ رَحمَۃُ ربِّ الْعِزَّت نے اپنے اس مرید پر انفرادی کوشش کرتے ہوئے ارشاد فرمایا:  ’’ جس وقت تمہاری داڑھی شرع کے مطابق ہوجائے گی، اس وقت میں وظیفہ وغیرہ بتادوں گا۔ ‘‘ یہ سن کر اس نے ایک بزرگ کاخط دیا جس میں سفارش کی گئی تھی کہ اسے وظیفہ دے دیا جائے۔ اعلیٰ حضرت   عَلَیْہِ رَحمَۃُ ربِّ الْعِزَّتنے فرمایا : ’’  جب تک تم داڑھی حد ِ شرع تک نہ بڑھا ؤ گے اس وقت تک کسی کی بھی سفارش تمہارے حق میں قبول نہ کروں گا اورنہ ہی تمہیں کوئی وظیفہ بتاؤں گا۔جب داڑھی حدِ شرع کے مطابق ہوجائے گی تو میں خود ہی بتادوں گا کسی کی سفارش کی ضرورت بھی نہ پڑے گی ۔ ‘‘  ( حیات اعلیٰ حضرت ، ج۱، ص ۱۵۵)

مَدَنی پھول

          میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! داڑھی مُنڈوانا اورکتروا کر ایک مٹھی سے چھوٹی کردینا دونوں ہی حرام ہے۔ اللہ ربّ العزت ہمیں مدینے والے مصطفٰے صلی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہ وسلم کی سنتوں پر عمل پیرا ہونے کی توفیق عطا فرمائے۔اٰمین بجاہ ا لنبی الامین صلی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہ وسلم

اللہ عَزَّوَجَلَّ کی اعلٰی حضرت  پَر رَحمت ہو اور ان کے صد قے ہماری بے حسا ب مغفِرت ہو۔

                                                                                                                                                اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                                               صلَّی اللہ تعالٰی عَلٰی محمَّد

 (13)   ایک پیر صاحب پر انفرادی کوشش

           اعلیٰ حضرت  عَلَیْہِ رَحمَۃُ ربِّ الْعِزَّت  مدرسۃُ الحدیث پِیلی بِھیت کے سالانہ جلسہ میں  پیلی بھیت تشریف لائے توایک روز حضرت محدث سورتی علیہ رحمۃاللہ القوی کے ہمراہ پیلی بھیت کے مشہور بزرگ  ’’ شاہ جی محمد شیر میاں  ‘‘ رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ سے ملنے تشریف لے گئے۔ وہاں پہنچ کر دیکھا کہ شاہ صاحب بے حِجَابانہ  (یعنی درمیان میں کوئی پردہ لٹکائے بغیر) عورتوں کو بیعت کرارہے ہیں ۔اعلیٰ حضرت  عَلَیْہِ رَحمَۃُ ربِّ الْعِزَّت کی غیرتِ ایمانی نے وہاں رکنا گوارا نہ کیا اور آپ ان سے ملے بغیر ہی واپس تشریف لے آئے۔ دوسرا کوئی ہوتا، تو بگڑجاتا لیکن حضرت شاہ جی میاں صاحب رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ کا کمال ِبے نفسی وحق پسندی اس طرح جلوہ گر ہوا کہ شام کواعلیٰ حضرت  عَلَیْہِ رَحمَۃُ ربِّ الْعِزَّت جب بریلی شریف جانے لگے توشاہ جی میاں صاحب رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ اسٹیشن تک پہنچانے گئے اور صبح کے واقعہ پر اظہار افسوس کرکے فرمایا:  ’’ مولانا! اب آئندہ میں عورتوں کو پس پردہ بٹھا کر بیعت لیا کروں گا۔ ‘‘   اسکے بعداعلیٰ حضرت  عَلَیْہِ رَحمَۃُ ربِّ الْعِزَّتنے ان سے مصافحہ و معانقہ فرمایا ۔

(حیاتِ اعلی حضرت ، ج۱، ص ۱۴۷)

اللہ عَزَّوَجَلَّ کی اعلٰی حضرت  پَر رَحمت ہو اور ان کے صد قے ہماری بے حسا ب مغفِرت ہو۔

                                                                                                                                                اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

 



Total Pages: 20

Go To