Book Name:Allah Walon Ki Batain Jild 1

                  ( ۳ ) … حالانکہ کتنا عرصہ تو نے اطمینان سے زندگی گزار ی ہے جبکہ حقیقتاً تو ناپاک پانی کا محض ایک قطرہ ہے  ۔

             اس کے بعد آپ  رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے اپنے نفس کو نصیحت کرتے ہوئے مزید فرمایا :  

یاَ نَفْسُ اِلَّا تَقْتُلِیْ تَمُوْتِیْ          ھٰذَا حَمَّامُ الْمَوْتِ قَدْ صَلَیْتِ

وَمَا تَمَنَّیْتِ وَقَدْ اُعْطِیْتِ          اِنْ تَفْعَلِیْ فِعْلَھُمَا ھُدِیْتِ

ترجمہ :   ( ۱ ) … اے نفس  !  اگر تونے  ( جہاد میں   شرکت کرکے )  جامِ شہادت نوش نہ کیا تو بھی تجھے مرناہی ہے کیونکہ یہ زندگی موت کا حمام ہے جس میں   تو داخل ہوچکاہے ۔

                 ( ۲ ) … اور تو نے جو چاہا تجھے وہ دیا گیا ۔ اب اگر تو نے ان دونوں   ( یعنی شہید ہونے والے حضرات زیدو جَعْفَر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا ) کی اتباع کی توہدایت پا جائے گا ۔

            پھر آپ  رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہاُترے تو ان کے پاس میرے چچا زاد بھائی گوشت کا ٹکڑا لائے اور کہا :  ’’  اس سے اپنی پیٹھ سیدھی کر لیجئے  ( یعنی کھاکرقُوَّت حاصل کر لیجئے ) کہ آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہکو ان دنوں   شدید حالات کا سامنا کرنا پڑا ہے  ۔  ‘‘ آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے گوشت کا وہ ٹکڑا لے کرکھاناشروع کردیا ۔ ایسے میں   اچانک لوگو ں   کی طرف سے شور کی آوازسنائی دی تو خود کو مخاطب کرکے فرمایا :  ’’  تودنیا میں   مشغول ہے ۔  ‘‘  پھر وہ ٹکڑاچھوڑ دیا اور تلوار پکڑ کر آگے بڑھ کر لڑنے لگے حتی کہ آ پ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہکو شہید کردیا گیا ۔

 غیبوں  پر خبردارآقا صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم:  

            جنگ میں   شریک راوی بیان کرتے ہیں   کہ اس طرف مسلمان مجاہدین جنگ میں   مصروف تھے تودوسری طرف اللہعَزَّوَجَلَّکے محبوب،  دانائے غُیُوب،  منزہٌ عن العُیُوب  صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم مدینۂ طیبہزَادَھَا اللہ شَرَفًا وَّتَعْظِیْمًامیں   موجود صحابۂ کرام رِضْوَانُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِمْ اَجْمَعِیْن کو جنگ کے حالات بیان کرتے ہوئے فرما رہے تھے :   ’’ زید رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے عَلم اٹھایا،   وہ لڑتے رہے یہاں   تک کہ شہیدہوگئے ۔ پھر جَعْفَررَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے عَلم اٹھایا اور لڑتے لڑتے شہید ہوگئے ۔  ‘‘  پھر حضورنبی ٔ اَکرم صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم خاموش ہوگئے جس کی وجہ سے انصار کے چہروں   کا رنگ بدل گیااور سمجھے کہ شاید اب حضرت سیِّدُنا عبداللہبن رَوَاحَہ  رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہکو کوئی سخت تکلیف پہنچی ہے ۔  کچھ دیر بعد حضورنبی ٔ غیب دان،  حبیبِ رحمنصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے ارشادفرمایا :  ’’  اب عَلمِ جہادعبداللہبن رَوَاحَہ ( رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ ) کے ہاتھ آیا ہے ۔ وہ دشمنوں   سے قتال کررہے ہیں   اور بالآخر وہ بھی شہید ہو گئے  ۔  ‘‘  پھر آپ صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے فرمایا :   ’’ میں   نے جنت میں  دیکھا کہ یہ تینو ں   سونے کے تختوں   پر محو ِ استراحت ہیں   اورعبداللہ  ( رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ ) کا تخت اپنے دونوں   رُفقا سے کچھ فاصلے پر ہے ۔   ‘‘  عرض کی گئی :   ’’ یا رسول اللہصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم ! اس کی کیاوجہ ہے ؟  ‘‘  فرمایا :  ’’ ان کے دونوں   رُفقا جامِ شہادت نوش کرچکے تھے جبکہ عبداللہبن رَوَاحَہ کچھ تر دُّ د میں   تھے ۔   ‘‘   ( [1] )

 جنتی خیمہ :  

 ( 369 ) … حضرت سیِّدُناسعیدبن مسیبرَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہ سے مروی ہے کہ حضو ر نبی ٔ پاک،   صاحب لَولاک،   سیّاحِ اَفلاک صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے ارشاد فرمایا :   ’’ مجھے جنت میں   موتیوں   کا وہ خیمہ دکھا یا گیا جس میں   زید ،   جَعْفَر او رعبداللہبن رَوَاحَہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُم تخت پر بیٹھے تھے،   میں   نے زیدا ورعبداللہبن رَوَاحَہ  رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا کی گردنوں   میں   کچھ بَل دیکھا جبکہ جَعْفَر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ کی گردن میں   کوئی بَل نہ تھا ۔ مجھے بتایاگیاکہ بوقتِ شہادت انہوں   نے کچھ اعراض کیا تھاجس کی وجہ سے ان کی گردنوں   میں   بل آگیاجبکہ جَعْفَر  ( رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ )  نے ایسا نہیں   کیا تھااس لئے ان کی گردن بالکل درست رہی  ۔  ‘‘

            حضرت سیِّدُنا اِبن عُیَیْنَہرَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہ بیان کرتے ہیں   کہ یہ اس وقت ہوا جب حضرت سیِّدُنا عبداللہبن رَوَاحَہ  رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے یہ اشعار پڑھےـ :  

اَقْسَمْتُ یَا نَفْسُ لَتَنْزِلَنَّہٗ                 بِطَاعَۃٍ مِّنْکِ اَوْلَتَکْرَھَنَّہ

فَطَالَمَا قَدْ کُنْتِ مُطْمَئِنَّۃً                  جَعْفَرُ مَا اَطْیَبَ رِیْحُ الْجَنَّۃ

ترجمہ :   ( ۱ ) … اے نفس !  میں   قسم اُٹھاتاہوں   کہ تجھے میدانِ جنگ میں   ضرور جانا پڑے گا چاہے تجھے پسند ہو یا نہ ہو ۔

                  ( ۲ ) … حالانکہ کتنا عرصہ تو نے مطمئن زندگی گزار ی ہے،   اے جعفر !   دیکھ !  جنت کی خوشبو کیا ہی عمدہ ہے !   ۔   ( [2] )

حضرت سَیِّدُنااَنَس بن نَضْررَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ

            حضرت سیِّدُنا اَنَس بن نَضْر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہکو ثابت قدمی ونصرتِ الٰہی سے قوت و تائید حاصل تھی  ۔  جنگِ بد ر میں   کسی وجہ سے حاضر نہ ہوسکے تھے لیکن جنگِ اُحد میں   شرکت فرمائی اورمنصب شہادت پر فائز ہوئے اور خوشبو ؤں   سے معطر و مہکتے رہے ۔  آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے اپنے اعضاء،   راہِ خدامیں   قربان کر کے آخرت کی کامیابیاں   پائیں    ۔

            اہلِ تصوُّف کے نزدیک ’’ جنتی ہواؤں   کے جھونکوں   اور اس کی نعمتوں   کا مشتاق رہنے کانام تصوُّف ہے ۔  ‘‘

مجھے جنت کی خوشبوآرہی ہے :  

 ( 370 ) … حضر ت سیِّدُنا اَنَس بن مالک رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہسے مروی ہے کہ حضرت سیِّدُنا اَنَس بن نَضْررَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ ( [3] ) ( مدینہ منورہ زَادَھَا اللہ شَرَفًا وَّتَعْظِیْمًامیں   موجودنہ ہونے کے سبب  )  



[1]    السیرۃ النبویۃ لابن ہشام ،  مقتل عبد اﷲ بن رواحۃ  / الرسول یتنبأبماحدث ،  ص۴۵۹۔

[2]    المصنف لعبدالرزاق ،  کتاب الجہاد ،  باب اجر الشہادۃ ،  الحدیث : ۹۶۲۵ ، ج۵ ، ص۱۷۹۔

[3]    آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہحضرت سیِّدُنا اَنَس بن مالک رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہکے چچا ہیں  ۔



Total Pages: 273

Go To