Book Name:Allah Walon Ki Batain Jild 1

اسلامی بھائیوں  سے اظہارِ ہمدردی:

 ( 329 ) …  حضرت سیِّدُناعبد الرحمن بن عَوف رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہسے روایت ہے کہ جب حضرت سیِّدُناعثمان بن مَظْعُوْن  رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے دیکھاکہ میں   تو وَلِیْد بن مُغِیْرَہ کی امان پاکرراحت و آرام سے اپنے صبح وشام گزار رہاہوں  لیکن دِیگر صحابۂ کرام رِضْوَانُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِمْ اَجْمَعِیْن سخت تنگی ومصیبت سے دوچارہیں   توفرمایا :   ’’ اللہ عَزَّوَجَلَّ کی قسم ! مجھے زیب نہیں   دیتا کہ میں   ایک مشرک کی امان میں   رہ کرراحت وآرام پاؤں   اور میرے رُفقااسلامی بھائی مصیبت ومشقت اٹھائیں   ۔   ‘‘ چنانچہ،   آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہوَلِیدبن مُغِیرَہ کے پاس تشریف لے گئے اور اس سے فرمایا :  ’’ اے عبدِ شمس کے باپ !  تیری ذمہ داری پوری ہوئی اب میں   تجھے تیری امان لوٹاتا ہوں   ۔  ‘‘ اُس نے پوچھا :   ’’ اے بھتیجے  ! کیاہوا  ؟  ‘‘ کیا میری قوم کے کسی شخص نے تمہیں   تکلیف پہنچائی ہے ؟  ‘‘  حضرت سیِّدُنا عثمان بن مَظْعُوْن رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے فرمایا :   ’’ نہیں  ،   بلکہ میں  اللہ عَزَّوَجَلَّکی پناہ پر راضی ہوں   اور مجھے اس کے علاوہ کسی کی پناہ پسند نہیں   ۔  ‘‘  وَلِید نے کہا :  ’’ تو پھر جس طرح میں   نے تمہیں   اِعلانیہ امان دی تھی اِسی طرح اِعلانیہ طور پر لوٹاؤ ۔  ‘‘  پھر دونوں   مسجد میں   پہنچے تو وَلِید نے سب کو مخاطب کرکے اِعلان کیا :  ’’  عثمان میری اَمان لوٹانے آیا ہے ۔  ‘‘ آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے فرمایا :  ’’ یہ سچ کہتا ہے،  یہ اپنی امان کو پورا کرنے والا ہے لیکن مجھے پسند نہیں   کہ میں   اللہ عَزَّوَجَلَّکے سواکسی کی امان میں   رہوں   اس لئے میں   اس کی دی ہوئی امان اسے واپس لوٹاتاہوں   ۔  ‘‘

دوسری آنکھ بھی تکلیف کی مشتاق :  

             پھرحضرت سیِّدُنا عثمان بن مَظْعُوْن رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہوہاں   سے تشریف لے گئے اور قریش کی ایک مجلس میں   جابیٹھے ۔ وہاں   لبید بن ربیعہ بن مالک،   قریش کو اشعار سنا رہا تھا آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہاس کے پاس بیٹھ گئے تو اُس نے یہ شعر پڑھا :   

اَ لَا کُلُّ شَیْیئٍ مَا خَلَا اللہ بَاطِلٌ      ترجمہ :   اللہ عَزَّوَجَلَّ کے سوا ہر چیزباطل ہے ۔

            تو آپ  رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے فرمایا :  ’’  تو نے سچ کہا ۔  ‘‘  پھر اس نے کہا :    

وَکُلُّ نَعِیْمٍ لَا مُحَالَۃَ زَائِلٌ                 ترجمہ :   اور ہر نعمت یقینا زائل وختم ہونے والی ہے ۔

            توآپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے فرمایا :  ’’  تو نے جھوٹ کہاکیونکہ اہل جنت کی نعمتیں   تو کبھی بھی ختم نہیں   ہوں   گی ۔  ‘‘ اس پر لبید بن ربیعہ نے کہا :  ’’  اے گروہِ قریش  !  اللہ عَزَّوَجَلَّکی قسم  !  مجھے کبھی بھی تم سے تکلیف نہیں   پہنچی  ۔ یہ کون ہے جو مجھے اَذیَّت دیتا ہے ؟  ‘‘ ایک شخص نے کہا :  ’’ تم اس کی باتوں   کا بُرا نہ مناؤ ۔  یہ ہماری قوم کے ان بے وقوفوں   میں   سے ہے جنہوں   نے ہمارا دین چھوڑدیا ہے ۔  ‘‘  حضرت سیِّدُنا عثمان بن مَظْعُوْن رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے بھی اس کو جواب دیا یہاں  تک کہ معاملہ بڑھ گیا تو اس شخص نے اُٹھ کر آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہکو تھپڑ دے مارا جس سے آپ کی آنکھ کو نقصان پہنچا  ۔  وَلِید بن مُغِیرہ جو قریب ہی کھڑا یہ سب دیکھ رہاتھا،  کہنے لگا :   ’’ اے بھتیجے !  اللہ عَزَّوَجَلَّکی قسم  ! اگر تو میری امان میں   رہتا تو تجھے یہ نقصان نہ پہنچتا  ۔  ‘‘ آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے فرمایا :   ’’ اے عبدشمس کے باپ  !  میری دوسری آنکھ بھی راہِ خدا میں   پہنچنے والی اس تکلیف کی مشتا ق ہے جو اس آنکھ کو پہنچی اور رہی امان کی بات،   تو میں   اس کی امان میں   ہوں   جو تجھ سے زیادہ عزت و قدرت والا ہے ۔  ‘‘    ( [1] )

اَشعار :  

             حضرتِ سیِّدُنا عثمان بن مَظْعُوْن رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہنے آنکھ کو نقصان پہنچنے پر یہ اشعارپڑھے :   

فَاِنْ تَکُ عَیْنِیْ فِیْ رِضَا الرَّبِّ نَالَھَا             یَدَا مُلْحِدٍ فِی الدِّیْنِ لَیْسَ بِمُھْتَد

فَقَدْ عَوَّضَ الرَّحْمٰنُ مِنْھَا ثَوَابَہٗ               وَمَنْ یَّرْضَہُ الرَّحْمٰنُ یَا قَوْمِ یَسْعُد

فَاِنِّیْ وَاِنْ قُلْتُمْ غَوِیٌّ مُضْلِلٌ                سَفِیْہٌ عَلٰی دِیْنِ الرَّسُوْلِ مُحَمَّد

اُرِیْدُ بِذَاکَ اللہ وَالْحَقُّ دِیْنُنَا                عَلٰی رَغْمِ مَنْ یَّبْغِیْ عَلَیْنَا وَیَعْتَدِی

ترجمہ :   ( ۱ ) …  اگر رِضا ئے الٰہی میں   کسی بے دین کے ہاتھ سے میری آنکھ کو تکلیف پہنچی ہے تووہ ہدایت یافتہ نہیں   ہوسکتا ۔

                 ( ۲ ) …  بلاشبہ اس کے بدلے خدائے مہربان عَزَّوَجَلَّمجھے اجر ِ عظیم سے نوازے گا اور اے میری قوم ! اللہ عَزَّوَجَلَّجس سے راضی ہوجائے وہ خوش بخت ہے ۔

                 ( ۳ ) …  میں   دِین محمدیعَلٰی صَاحِبِھَا الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکا پیر وکار ہوں  ،   اگر چہ تم مجھے گمراہ،   بھٹکا ہوا اور بے وقوف کہو ۔

                 ( ۴ ) …  اوردینِ اسلام کی اتباع سے میرا مقصداللہ عَزَّوَجَلَّ کو راضی کرنا ہے،   تمہارے ظلم و زیادتی کے باوجو د ہمار ادین حق ہے ۔

             امیر المؤمنین حضرت سیِّدُنا علی المرتضیٰ کَرَّمَ اللہ تَعَالٰی وَجْہَہُ الْکَرِیْمنے حضرت سیِّدُنا عثمان بن مَظْعُوْن رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہکی آنکھ کو تکلیف پہنچنے پر یہ اشعار کہے :  

اَ مَنْ تَذْکُرُ دَھْرَ غَیْرِ مَامُوْنٍ             اَصْبَحْتَ مُکْتَئِبًا تَبْکِیْ کَمَخْزُوْن

اَ مَنْ تَذْکُرُ اَقْوَامَ ذَوِیْ سَفْہٍ             یَغْشُوْنَ بِالظُّلْمِ مَنْ یَّدْعُوْ اِلَی الدِّیْن

لَا یَنْتَھُوْنَ عَنِ الْفَحْشَآ ءِ مَا سَلِمُوْا       وَالْغَدْرُ فِیْھِمْ سَبِیْلُ غَیْرِ مَأمُوْن

اَلَا تَرَوْنَ،    اَقَلَّ اللہ خَیْرَھُمْ                اِنَّا غَضَبْنَا لِعُثْمَانَ بْنِ مَظْعُوْن

 



[1]    السیرۃ النبویۃ لابن ہشام ،   قصۃ عثمان بن مَظْعُوْن فی رد جوارالولید ،  ص۱۴۶۔



Total Pages: 273

Go To