Book Name:Allah Walon Ki Batain Jild 1

( 729 ) … حضرت سیِّدُنا ابراہیم تَیْمِیعَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہ الْقَوِی سے مروی ہے کہ حضرت سیِّدُنا ابو دَرْدَاء رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ نے فرمایا :  ’’  جو شخص موت کوکثرت سے یاد کرتاہے اس کی خوشیاں  کم ہوجاتیں   اورجسم کمزورپڑجاتاہے  ۔   ‘‘    ( [1] )

صالحین کے ساتھ مرنے کی دُعا :  

 ( 730 ) … حضرت سیِّدُنااسماعیل بن عُبیداللہ رَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہ سے مروی ہے کہ حضرت سیِّدُنا ابو دَرْدَاء رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ اس طرح دُعا کرتے :   ’’ اَللّٰھُمَّ تَوَفَّنِیْ مَعَ الْاَبْرَارِوَلَاتَبْقِنِیْ مَعَ الْاَشْرَاریعنی :  اے اللہ عَزَّوَجَلَّ !  مجھے صالحین کے ساتھ موت دینا اور بُروں   کے ساتھ زندہ مت رکھنا ۔  ‘‘  

بُرے کاموں   سے حفاظت کی دُعا :  

 ( 731 ) … حضرت سیِّدُنالقمان بن عامرعَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہ الْغَافِرسے مروی ہے کہ حضرت سیِّدُنا ابو دَرْدَاء رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ یوں   دعاکرتے :   ’’ اَللّٰھُمَّ لَا تَبْتَلِنِیْ بِعَمَلٍ سُوْئٍ فَأُدْعِیَ بِہٖ رَجُلٌ سُوْئٌ یعنی :  اےاللہ عَزَّوَجَلَّ !  مجھے بُرے عمل میں   مبتلا نہ کرنا کہ میں   بُرے آدمی کے نام سے پکارا جاؤں   ۔ ‘ ‘               ( [2] )

 ( 732 ) … حضرت سیِّدُناابوبکر بن محمدعَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہ الصَّمَدبیان کرتے ہیں   کہ حضرت سیِّدُنا ابو عَوْن رَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہ نے مجھ سے فرمایاکہ حضرت سیِّدُناابو دَرْدَاء رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ ارشاد فرماتے ہیں : ’’  مجھے لوگوں   کی طرف سے جب بھی کوئی مصیبت پہنچتی ہے تو میں   اس میں  اللہ عَزَّوَجَلَّ کی طرف سے نعمت ہی پاتا ہوں   ۔  ‘‘    ( [3] )

 ( 733 ) … حضرت سیِّدُناسَائِب بن خَلَّادعَلَیْہِرَحْمَۃُ اللہ الْجَوَاد سے مروی ہے کہ حضرت سیِّدُنا ابو دَرْدَاء رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ نے فرمایا :  ’’ مجھے کسی دن یارات میں   جب بھی کوئی مصیبت پہنچتی ہے تومجھے اس سے عافیت دی جاتی ہے ۔  ‘‘

 ( 734 ) … حضرت سیِّدُناسالم بن ابوالجَعْدرَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہ سے مروی ہے کہ حضرت سیِّدُناابو دَرْدَاء رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ نے فرمایا :  ’’  اے لوگو !  کیا بات ہے تم دنیا کے حریص بنتے جارہے ہو اورجس ( دین ) پر تمہیں   نگہبان بنایا گیا ہے اسے ضائع کر رہے ہو ۔ میں   تمہارے شریر لوگوں   سے آگاہ ہوں   جو گُھڑ سواری کرتے ہوئے اَکَڑْتے ،   نماز وں   میں   سستی کرتے ،   قرآن مجید توجہ سے نہیں   سنتے اور نہ ہی غلاموں   کو آزاد کرنے میں   رغبت رکھتے ہیں   ۔  ‘‘    ( [4] )

یتیم اور مظلوم کی بد دعاسے بچو :  

 ( 735 ) … حضرت سیِّدُنالقمان بن عامرعَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہ الْغَافِرسے مروی ہے کہ حضرت سیِّدُنا ابو دَرْدَاء رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ نے فرمایا :   ’’ مظلوم اور یتیم کی بد دعا سے بچو کیونکہ ان دونوں   کی دُعا ئیں   راتوں   راتاللہ عَزَّوَجَلَّ کی بارگاہ میں   پیش ہوجاتی ہیں   جبکہ لوگ محوِ استراحت ہوتے ہیں   ۔  ‘‘    ( [5] )

 ( 736 ) … حضرت سیِّدُنا ابو وائِل رَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہ سے مروی ہے کہ حضرت سیِّدُنا ابو دَرْدَاء رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ نے ارشادفرمایا :  ’’ مجھے سب سے زیادہ نفرت اس سے ہے جو ایسے شخص پرظلم کرے جس کامددگاراللہ عَزَّوَجَلَّ کے سِوا کوئی نہ ہو ۔  ‘‘    ( [6] )

رحمت الٰہی سے دوری :  

 ( 737 ) … حضرت سیِّدُناسُلَیْم بن عامررَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہ کُرَیْب بن اَبْرَہَہ کے حوالے سے بیان کرتے ہیں   کہ حضرت سیِّدُنا ابو دَرْدَاء رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ نے فرمایا :  ’’ بندہ اس وقت تکاللہ عَزَّوَجَلَّ  ( کی رحمت  ) سے دُور ہوتا رہتا  ہے جب تک اس کی مرضی کے خلاف چلتا رہتا ہے ۔  ‘‘    ( [7] )

 ( 738 ) … حضرت سیِّدُنااِبن جابِر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ سے مروی ہے کہ حضرت سیِّدُنا ابو دَرْدَاء رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ جب تہجد گزاروں   کو قرآن مجید کی تلاوت کرتے سنتے توفرماتے :  ’’  میرا باپ ان لوگوں  پرقربان جو قیامت کے دن سے پہلے ہی اپنی جانوں   پر رو رہے ہیں   اور ان کے دلاللہ عَزَّوَجَلَّ کے ذکرسے خوش ہیں   ۔  ‘‘    ( [8] )

بھلائی کی تلاش میں   رہو :  

 ( 739 ) … حضرت سیِّدُنازید بن اَسلم عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہ الْاَکْرَم سے مروی ہے کہ حضرت سیِّدُناابودَرْدَاء رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ نے فرمایا :  ’’  ہروقت بھلائی کی تلاش میں   رہو اوراللہ عَزَّوَجَلَّ کی



[1]    الزہدلابن المبارک  ،   ،  مارواہ نعیم بن حمادفی نسختہ زائدا ،  باب فی ذکر الموت ،  الحدیث : ۱۴۹ ، ص۳۷۔

[2]    امالی ابن سمعون ، ص۱۳.

[3]    المصنف لابن ابی شیبۃ ،  کتاب الزہد ،  باب کلام ابی الدَرْدَاء ،  الحدیث : ۹ ، ج۸ ، ص۱۶۸۔

[4]    المصنف لابن ابی شیبۃ ،  کتاب الزہد ،  کلام ابی الدَرْدَاء ،  الحدیث : ۲۶ ، ج۸ ، ص۱۷۰۔

[5]    الزہدللامام احمدبن حنبل ،  زہدابی الدَرْدَاء ،  الحدیث :