Book Name:Allah Walon Ki Batain Jild 1

            ارشاد فرمایا :   ’’ گناہوں   کوترک کردینا ۔  ‘‘

            میں   نے عرض کی :  ’’  افضل نماز کون سی ہے ؟   ‘‘  

            ارشاد فرمایا :   ’’ جس میں   قیام طویل ہو ۔  ‘‘

            میں   نے عرض کی :  ’’ یا رسول اللہ صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  ! روزوں   کے بارے میں   ارشاد فرمائیے !  ‘‘

             ارشاد فرمایا :  ’’ روزے فرض ہیں   اوراللہعَزَّوَجَلَّ کے ہاں   اس کا اجر کئی گنا ہے ۔  ‘‘

            میں   نے عرض کی :   ’’  افضل جہاد کون سا ہے ؟   ‘‘

            ارشاد فرمایا:  ’’  جس میں   گھوڑے کے پاؤں   کٹ جائیں   اوراس کا خون بہہ جائے  ۔  ‘ ‘

             میں   نے عرض کی :  ’’  کیسا غلام آزاد کرنا افضل ہے ؟   ‘‘

            ارشاد فرمایا: ’’ جو قیمتی اور مالک کو پسند ہو ۔  ‘‘

             میں   نے عرض کی :   ’’  افضل صَدَقَہ کون سا ہے ؟   ‘‘

            ارشاد فرمایا: ’’  مال کم ہونے کی صورت میں   بھی فقیر کی حاجت روائی کرنا ۔  ‘‘

             میں   نے عرض کی :  ’’ قرآنِ حکیم کی سب سے بڑی آیت کون سی ہے ؟  ‘‘

            اِرشاد فرمایا: ’’ آیت الکرسی ۔  ‘‘ پھر فرمایا :  ’’ اے ابو ذَر !  کرسی اور ساتوں   آسمانوں   کی حیثیت میدان میں   پڑی انگوٹھی کی مانند ہے اور عرش کی فضیلت کرسی پرایسی ہے جیسی میدان کی فضیلت انگوٹھی پر ۔   ‘‘

            میں   نے عرض کی :  ’’ یا رسول اللہ صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  ! انبیائے کرام عَلَیْہِمُ السَّلَامکی تعداد کتنی ہے ؟  ‘‘

             ارشاد فرمایا: ’’  ( کم وبیش ) ایک لاکھ چوبیس ہزار ( 1,24,000 )  ۔  ‘‘    ( [1] )

                 میں   نے عرض کی :  ’’  یا رسول اللہ صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  ! اللہ عَزَّوَجَلَّ نے کتنے رسول مبعوث فرمائے ؟   ‘‘

            ارشاد فرمایا:  ’’  313کا جم غفیر ۔  ‘‘

             میں   نے عرض کی :  ’’  یہ کثرت تو اچھی ہے ۔   ‘‘

            پھرعرض کی :   ’’ یا رسول اللہ صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  ! پہلے نبی کون ہیں    ؟  ‘ ‘

             ارشاد فرمایا:  ’’  حضرت آدم ( عَلَیْہِ السَّلَام )  ۔  ‘‘

            میں   نے عرض کی :   ’’ یا رسول اللہصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  !  کیا وہ نبی ٔ مرسَل ہیں   ؟  ‘‘

          ارشاد فرمایا :  ’’  ہاں   ! اللہعَزَّوَجَلَّ نے انہیں   اپنے دستِ قدرت سے پیدا فرمایا اور ان میں   اپنی طرف کی رُوح پھونکی پھرسب سے پہلے انہیں   ٹھیک  ( یعنی سالِم ُ الاعضاء )  بنایا ۔  ‘‘

            حضرت سیِّدُنا اَحمدبن اَنَسرَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہ کی روایت میں   ہے کہ ’’   پھرسب سے پہلیاللہعَزَّوَجَلَّ نے ان سے کلام فرمایا  ۔  ‘‘ اس کے بعد آپصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمنے ارشاد فرمایا:  ’’ اے ابوذَر ! 4 نبی سریانی ہیں :   ( ۱ ) حضرت آدم ( ۲ )  حضرت شِیْث  ( ۳ ) حضرت خَنُوخ اوروہ اِدْرِیس  ( عَلَیْہِمُ السَّلَام ) ہیں   اوریہ پہلے انبیا ہے جنہوں   نے قلم سے لکھا اور  ( ۴ )  نُوح  ( عَلَیْہِ السَّلَام )  ۔ اورچارنبی عربی ہیں :   ( ۱ )  ہُود ( عَلَیْہِ السَّلَام )   ( ۲ ) صالح  ( عَلَیْہِ السَّلَام )  ( ۳ )  شُعَیْب  ( عَلَیْہِ السَّلَام ) اور اے ابو ذَر !  ( ۴ )  تیرے نبی  ( صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم )   ۔  ‘‘

            میں   نے عرض کی :   ’’ یا رسول اللہ صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  ! اللہعَزَّوَجَلَّ نے کتنی کتابیں   نازل فرمائیں   ؟   ‘‘

             ارشاد فرمایا :  ’’ 100صحیفے اور4کتابیں   ۔ 50صحیفے حضرت شیث  ( عَلَیْہِ السَّلَام ) پر ،   30 صحیفے حضرت اِدْرِیس  ( عَلَیْہِ السَّلَام ) پر،  10 صحیفے حضرت ابراہیم  ( عَلَیْہِ السَّلَام )  پراور10 صحیفے حضرت موسیٰ ( عَلَیْہِ السَّلَام )  پر تورات سے پہلے نازل کئے ۔ اس کے علاوہ تورات،   انجیل،   زبور اور قرآنِ حکیم نازل فرمایا ۔  ‘‘

            میں   نے عرض کی :  ’’  یا رسول اللہصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم ! حضرتِ سیِّدُنا ابراہیم عَلَیْہِ السَّلَام کے صحیفوں   میں   کیا تھا ؟  ‘‘

          ارشادفرمایا :  ’’ وہ سب عبرت و نصیحت پرمشتمل تھے اس میں   تھاکہ اے دنیاکے دھوکے میں   مبتلابادشاہ ! ہم نے تمہیں   دنیااکٹھی کرنے نہیں   بھیجابلکہ تمہیں   مظلوم کی حاجت روائی کرنے کے لئے بھیجا ہے کیونکہ میں   مظلوم کی دعا رد نہیں   کرتا اگر چہ کافر ہو ۔ اس میں   یہ بھی تھاکہ عقلمند کو چاہئے کہ جب تک اس کی عقل مغلوب نہ ہو اپنے وقت کو اس طرح تقسیم



[1]    دعوتِ اسلامی کے اشاعتی ادارے مکتبۃ المدینہ کی مطبوعہ 1250 صَفحات پر مشتمل کتاب  ،  ’’بہارِ شریعت‘‘جلد اوّل صَفْحَہ 52پر ہے :  ’’انبیاء  ( عَلَیْہِمُ السَّلام ) کی کوئی تعداد معین کرنا جائز نہیں   کہ خبریں   ( یعنی احادیث )  اس باب  ( یعنی بارے )  میں   مختلف ہیں   اور تعدادِ معین  ( یعنی ایک تعداد مخصوص کرکے اس )   پر ایمان رکھنے میں   نبی کو نبوت سے خارج ماننے ( یعنی کسی نبی کی نبوت کا انکار کرنے ) یا غیر نبی کو نبی جاننے کا احتمال ہے اور یہ دونوں   باتیں   کفر ہیں   لہٰذا یہ اعتقاد چاہیے کہاللہ  عَزَّوَجَلَّ کے ہر نبی پر ہمارا ایمان ہے۔‘‘



Total Pages: 273

Go To