Book Name:Siyah Faam Ghulam

جابِر بن عبداللہ انصاری رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُمَا سے روایت کی ، وہ کہتے ہیں  ، میں  نے عرض کی  : ’’ یارسولَ اللہ ( عَزَّ وَجَلَّ  وصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ )  ! میرے ماں  باپ حُضور ( صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ ) پر قربان! مجھے بتائیے کہ سب سے پہلے اللہ عَزَّ وَجَلَّ  نے کیا چیز بنائی؟‘‘ فرمایا :  اے جابِر ! بے شک بِالیقین ، اللہ تعالیٰ نے تمام مخلوقات سے پہلے تیرے نبی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا نور اپنے نور سے پیدا فرمایا ۔ ‘‘ ( فتاوی رضویہ ج۳۰ ص۶۵۸  ،  الجزئُ المفقُود مِن الجزء الاوّل  مِنَ المُصَنَّف ، لِعبدالرّزّاق ، ص ۶۳ رقم ۱۸ )میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! میرا مشورہ ہے کہ’’نور ‘‘ کے مسئلہ پر تفصیلی معلومات کیلئے مُفَسّرِشہیرحکیمُ الْاُمَّت حضرتِ مفتی احمد یار خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الحَنّان کا’’رسالۂ نور‘‘کامُطالَعَہ فرمایئے  ۔

مرحبا آیا ہے کیا موسِم سُہانا نور کا                   بُلبلیں  گاتی ہیں  گلشن میں  ترا نہ

نور کانو ر کی بارش چھما چھم ہوتی آتی ہے ا َسیرؔ  ؔ لو رضا ؔ کے ساتھ بڑھ کر تم بھی حصّہ نو ر کا

{6}قُوّتِ حافِظہ عطافرمادی

          سیِّدُنا ابوہُریرہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ فرماتے ہیں   : میں  نے بارگاہِ رسالت میں  عرض کی :  یارسولَ اللہ عَزَّ وَجَلَّ وصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ !میں  آپ سے ارشاد ِگرامی سنتاہوں  مگر بھول جاتاہوں  ؟ارشاد فرمایا : ابو ہریرہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ!اپنی چادر پھیلاؤ ۔ میں  نے پھیلا دی تو مالِک جنّت ، قاسِمِ نعمتصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ    نے اپنے دستِ رحمت سے چادر میں  کچھ ڈال دیااور فرمایا  : ’’اے ابوہُریرہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ !اِسے اٹھالو اور سینے سے لگا لو ۔ ‘‘میں  نے حکم کی تعمیل کی ۔  اِس کے بعد (میرا حافِظہ اِس قَدَر مضبوط ہوگیا کہ) میں  کوئی بھی چیز نہیں  بُھولا ۔  (صَحِیحُ البخارِیّ ج۱، ۲ص۶۲، ۹۴حدیث۱۱۹، ۲۳۵۰ ، دارالکتب العلمیۃ بیروت) 

مالِکِ کونَین ہیں  گوپاس کچھ رکھتے نہیں

دوجہاں  کی نعمتیں  ہیں  ان کے خالی ہاتھ میں

 صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                      صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

سُنّتوں  بھرے بیانات سُنتے رہئے

       میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!معلوم ہوا ، اللّٰہُ غفّارعَزَّ وَجَلَّ نے مَدَنی سرکار جنابِ احمدِ مختارصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کو بے شمار اِختیار ا ت سے نوازا ہے ۔ بے شک مادّی چیزیں  دینا بھی اپنی جگہ مگر ہمارے میٹھے میٹھے آقا مکّی مَدَنی مصطَفٰے صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے تو نظر نہ آنے والی شے قوّتِ حافِظہ بھی اپنے غلام اور ہمارے آقا حضرتِ ابوہریرہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ کو عنایت فرما دی !

                          میری مَدَنی التِجاء ہے کہ اس طرح کے ایمان افروز بیانات سننے کیلئے عشقِ رسول سے بھر پور دعوتِ اسلامی کے مہکے مہکے مَدَنی ماحول سے ہر دم وابَستہ رہئے اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّرحمتوں  اور سنّتوں  بھرے بیانات بھی سننے کو ملیں

 



Total Pages: 19

Go To