Book Name:Siyah Faam Ghulam

          اُمُّ الْمُؤمِنِین حضرتِ سَیِّدَتُنا عائِشہ صِدّیقہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہَا رِوایَت فرماتی ہیں : میں  سَحَری کے وقت گھر میں  کپڑے سی رہی تھی کہ اچانک سُوئی ہاتھ سے گرگئی اورساتھ ہی چَراغ بھی بُجھ گیا ۔  اِتنے میں  مدینے کے تاجدار، مَنبعِ انوارصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ گھر میں  داخل ہوئے اورسارا گھر مدینے کے تاجور صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے چہرئہ انور کے نورسے روشن ومنوَّر ہوگیااورگمشدہسُوئی مل گئی ۔  (اَلْقَوْلُ الْبَدِیع، ص۳۰۲ مؤسسۃ الریان بیروت)

سُوزَنِ[1]؎  گُمشُدہ ملتی ہے تبسُّم سے ترے

شام کو صُبح بناتا ہے اُجالا تیرا (ذوقِ نعت)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                        صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

سبحٰنَ اللّٰہ! حضور پُر نور  ، سراپا نور صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی شانِ نورٌ علیٰ نور کی بھی کیا بات ہے !مُفَسّرِشہیر حکیمُ الْاُمَّت حضر  ت ِ مفتی احمد یار خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الحَنّان فرماتے ہیں  : رحمت ِ عالم ، نورِ مُجَسَّم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ بشر بھی ہیں  اور نور بھی یعنی نوری بشر ہیں  ۔ ظاہِری جسم شریف بشر ہے اور حقیقت نور ہے  ۔ (رِسالہ نورمع رسائل نعمییہ ، ص ۳۹، ۴۰، ضیاء القرآن پبلی کیشنز مرکز الاولیاء لاہور )

  سرکار کی بَشَرِیَّت کاانکار کرنا کیسا؟

میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!بے شک ہمارے مَدَنی آقاصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی حقیقت نور ہے مگر یہ یاد رکھئے کہ بَشَرِیَّت کے انکار کی اجازت نہیں ۔ چُنانچِہ میرے آقا اعلیٰ حضرت، امام اَحمد رَضا خان عَلَیْہِ رَحمَۃُالرَّحمٰن فرماتے ہیں : تاجدارِ رسالت ، شَہَنْشاہِ نُبُوَّتصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کی بَشَرِیَّت کا مُطَلْقاً انکار کفر ہے ۔ (فتاوٰی رضویہ  ج۱۴ ص ۳۵۸)لیکن آپ کی بَشرِیَّت عام انسانوں  کی طر ح نہیں  بلکہ آپ سیِّدُ البشر ، افضلُ البَشَر اور خیرا لبشرہیں  ۔

پروردگار کا فرمانِ نور بار ہے :

قَدْ جَآءَكُمْ مِّنَ اللّٰهِ نُوْرٌ وَّ كِتٰبٌ مُّبِیْنٌۙ(۱۵) ۶ ، المآئدہ ۱۵)

ترجَمۂ کنزالایمان :  بیشک تمہارے پاس اللہ (عَزَّ وَجَلَّ) کی طرف سے ایک نور آیا اور روشن کتابمذکورہ بالا آیتِ مبارَکہ میں  نور سے مُرادحُضورصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  ہیں  ۔   

چُنانچِہ سیِّدُنا امام محمد بن جَرِیر طَبَری  عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ القَوِی ( مُتَوَفّٰی310ھجری)نے فرمایا :  یَعْنِیْ بِالنُّوْرِ مُحَمَّدًا (صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ ) یعنی نور سے مُراد محمدِ مصطَفیٰصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  ہیں ۔ (تَفْسِیْرُ الطَّبَرِیّّ ج۴ ص۵۰۲ دار الکتب العلمیۃ بیروت)

جلیلُ القَدر ، حافِظُ الحدیث امام ابو بکر عبدالرَّزّاق رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِ نے اپنی ’’المُصَنَّف ‘‘  میں  حضرتِ سیِّدُنا



[1]      سُوزَن یعنی سوئی



Total Pages: 19

Go To