Book Name:Siyah Faam Ghulam

سارے عالم میں  یہ دیکھو کیسا نور چھایا ہے

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !  صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

{2}روشنی بَخش چِہرہ

          حضرتِ سیِّدُنا اَسِیدبن اَبی اناس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ فرماتے ہیں   : مدینے کے تاجدار ، شَہَنشاہِ عالی وقارصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ایک بار میرے چِہرے اورسینے پر اپنا دست پُرانوار پھیر دیا ۔  اس کی بَرَکت یہ ظاہِر ہوئی کہ میں  جب بھی کسی اندھیرے گھر میں  داخِل ہوتا وہ گھر روشن ہوجاتا ۔  

 (الخَصائِصُ الکُبْری لِلسُّیُوطِیّ ج۲ص۱۴۲دار الکتب العلمیۃ بیروت ، تاریخ دمشق ج۲۰ ص ۲۱ )

چمک تجھ سے پاتے ہیں  سب پانے والے

مرا دل بھی چمکا دے چمکانے والے

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !  صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

  {3}سراپا نور کی روشنی

          میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!جب سرکارِ نامدارصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کسی کے چِہرے اورسینے پر دستِ پُرانوارپَھیر دیں  تو وہ روشنی دینے لگ جائے تو خود حُضُورسراپانُورصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کی اپنی نورانیت کا کیا عالم ہوگا!’’دارِمی شریف ‘‘ میں  ہے : حضرتِ سیِّدُنا عبداللہ بن عبّاس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُمَافرماتے ہیں  : ’’جب سرکار ِ نامدارصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  گفتگوفرماتے تو دیکھا جاتا گویا حُضور پُرنورصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے اگلے مبارَک دانتوں  کی مقدَّس کِھڑکیوں  سے نور نکل رہا ہے ۔ (سُنَنُ الدَّارِمِیّ ج ۱ ص ۴۴ رقم ۵۸ ، دارالکتاب العربی بیروت)

ہیبتِ عارِضِ سے تَھرّاتا ہے شُعلہ نور کا

کفشِ پا پرگِر کے بن جاتا ہے گُپّھا نو رکا

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !    صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

  {4}دیواریں  روشن ہوجائیں

’’شِفاء شریف ‘‘میں  ہے :  جب رحمتِ عالم، نُورِ مجَسَّم  ، شاہِ بنی آدم  ، صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ مُسکراتے تھے تودَرودِیوار روشن ہوجاتے ۔(اَلشِّفا ص۶۱  ، مرکز اہل سنت برکات رضا ، ہند)

اب مسکراتے آئیے سُوئے گناہ گار

آقا اندھیری قبر میں  عطاؔرآگیا

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !     صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

{5}گُمشدہ سُوئی

 



Total Pages: 19

Go To