Book Name:Siyah Faam Ghulam

لوگ میری وجہ سے آپَس میں  مَحَبَّتر کھتے ہیں  اور میری وجہ سے ایک دوسرے کے  پاس بیٹھتے ہیں  اور آپس میں  ملتے جُلتے ہیں  اور مال خرچ کرتے ہیں  اُن سے میری مَحَبَّتواجِب ہوگئی[1]؎ {3} اللہ تعالیٰ نے فرمایا :  جو لوگ میرے جلال کی وجہ سے آپَس میں   مَحَبَّترکھتے ہیں  اُن کیلئے نُور کے مِنبر ہو نگے ۔ انبیاء و شہداء اُن پر غِبطہ( یعنی رشک ) کریں  گے [2]؎ {4}دو شخصوں  نے اللہ کے لئے باہم مَحَبَّت کی اور ایک مشرِق میں  ہے دوسرا مغرِب میں  قِیامت کے دن اللہ تعالیٰ دونوں  کو جمع کریگا اور فرمائیگا یہی وہ ہے جس سے تو نے میرے لیے  مَحَبَّتکی تھی[3]؎ { 5 } جنّت میں  یاقوت کے سُتُون ہیں  اُن پر زَبَرجَد کے بالا خانے ہیں ، ان کے دروازے کھلے ہوئے ہیں  ، وہ ایسے روشن ہیں  جیسے چمکدار ستارے ۔ لوگوں  نے عرض کی :  یا رسولَ اللہ عَزَّ وَجَلَّ  وصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ !   ان میں  کون رہے گا؟ فرمایا :  وہ لوگ جو اللہ کے لئے آپَس میں   مَحَبَّت رکھتے ہیں  ، ایک جگہ بیٹھتے ہیں  ، آپس میں  ملتے ہیں [4]؎   {6} اللہ کیلئے  مَحَبَّت رکھنے والے عرش کے گِرد یا قوت کی کرسی پر ہوں  گے [5]؎  {7} جو کسی سے اللہ کے لیے  مَحَبَّت رکھے اللہ کے لیے دشمنی رکھے اور اللہ کے لیے دے اور اللہ کے لیے منع کرے اُ س نے اپنا ایمان کامِل کر لیا[6]؎ {8}  دو شخص جب اللہ (عَزَّ وَجَلَّ ) کے ل



Total Pages: 19

Go To