Book Name:Siyah Faam Ghulam

محبوب عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَ السَّلَام سے کہو، اللہ عَزَّ وَجَلَّ   فرماتا ہے : اے پیارے حبیب! تم دُعا کروہم ان کوزندہ کر دیں  گے ۔  حُضُورِ اکرم ، نُورِ مُجَسَّم  ، شاہِ بنی آدَم، رسولِ مُحتَشَمصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   نے دُعا فرمائی اوراللہ عَزَّ وَجَلَّ کے حُکم سے دونوں ۲ مَدَنی مُنّے اُسی وَقت زِندہ ہو گئے  ۔ (شواہِدُالنُّبُوَّ ۃ ، ص ۰۵ا، مکتبۃ الحقیقہ ترکی مدارِجُ النّبوّت حصہ ۱ص۱۹۹) اللہ عَزَّ وَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری مغفِرت ہو ۔     اٰمین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمینصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ     

قَلبِ مُردہ کو مِرے اب تو جِلا دو آقا

جام اُلفت کامجھے اپنی پِلا دو آقا

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!      صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

       میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! دیکھا آپ نے ! میرے پیارے آقا مدینے والے مصطَفٰے صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کی بھی کیا خوب شان ہے کہ مختصر سا کھانا بَہُت سارے لوگوں  نے کھا لیا پھر بھی اُس میں  کسی قسم کی کمی واقِع نہ ہوئی اورپھر بکری کے گوشت کی بچی ہوئی ہڈّیوں  پر کلام پڑھا تو گوشت پوست پہن کر بِعَینِہٖ(بِ ۔  عَے  ۔ نِ ۔ ہٖ) وُہی بکری کان جھاڑتی ہوئی اُٹھ کھڑی ہوئی ۔ نیز حضرتِ سیِّدُنا جابِر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ کے فوت شدہ دونوں  حقیقی مَدَنی منّوں  کو بھی بِاِذنِ اللّٰہعَزَّ وَجَلَّ  زندہ کر دیا ۔   ؎

مُردوں  کوجِلاتے ہیں  روتوں  کو ہنساتے ہیں آلام مٹاتے ہیں  بگڑی کو بناتے ہیں

سرکار کھلاتے ہیں  سرکار پلاتے ہیں

سلطان و گدا سب کو سرکار نبھاتے ہیں

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                              صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

 گستاخ کو زمین نے قَبول نہ کیا

          میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!  اب ایک منکرِ شانِ رسالت کی شقاوت کی عبرتناک حِکایت سماعَت فرمایئے اور دیکھئے کہ اللہُ السَّلام  عَزَّ وَجَلَّ    اپنے محبوب کے دشمنوں  سے کس طرح انتِقام لیتا