Book Name:Budha Pujari

ٹیسٹ کروائے تو تمام رَپورٹیں دُرُست تھیں ،  ڈاکٹر نے حیرت سے پوچھا کہ تمہارے دل کی دونوں بند نالیاں کُھل چکی ہیں ،  آخر یہ کیسے ہوا ؟  جواب دیا، اَلْحَمْدُ لِلّٰہ عَزَّوَجَلَّدعوتِ اسلامی کے مَدَنی قافِلے میں سفر کر کے دعا کرنے کی بَرَکت سے مجھے دل کے مُہلِک (مُھْ۔  لِکْ)  مرض سے نَجات مل گئی ہے۔ 

لوٹنے رَحْمتیں قافِلے میں چلو              سیکھنے سُنّتیں قافلے میں چلو

دل میں گر دَرْد ہو ڈر سے رُخ زَرْد ہو

پاؤ گے رَاحتیں قافلے میں چلو

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!           صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

        آہ !  صدآہ! ہمارے دلوں کے تاجدار،  دوعالَم کے سردار ، مکّی مَدَنی سرکار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے اسلام کے پَرچارکی خاطرکیسے کیسے مظالم سہے ،  جو روجفاکی تیز وتُندآندھیوں میں بھی کبھی آپ  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ اپنی جگہ سے نہ ہلے،  کفّارِ بدکار کے ظلم وستم کی ایک داستان پڑھئے او رتڑپئے:

کفّار کے نَرغے میں ۔  ۔  ۔  ۔  ۔  ۔ 

        امیرُالْمُؤمِنِینحضرتِ مولائے کائنات،  علیُّ المُرتَضٰی شیرِ خدا  کَرَّمَ اللہ تَعَالٰی وَجْہَہُ الْکَرِیْم  فرماتے ہیں : کفّارِ ناہنجارنے ایک بار دوجہاں کے تاجدار، نبیوں کے سردار، محبوبِ پروردگار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کو گھیر لیاوہ سرکارِ نامدار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کو گھسیٹتے اور دھکّے مارتے اورکہتے جاتے تھے کہ تم ہی وہ شخص ہو جو صِرف ایک معبود کی عبادت کاحکم دیتے ہو ۔   حضرتِ مولیٰ علی کَرَّمَ اللہ تَعَالٰی وَجْہَہُ الْکَرِیْم  (جو کہ ان دنوں کافی کم عمر تھے) فرماتے ہیں کہ اتنے میں حضرتِ سیِّدُنا ابوبکر صِدّیق رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ مردانہ وار آگے بڑھے اورک ُفّار کو مارتے ،  پیٹتے ،  گراتے ،  ہٹاتے سرکارِ نامدار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ تک جاپہنچے اورسرکار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کو ان ظالموں کے نرغے سے نکال لیا ۔   اُس وَقت سیِّدُنا صِدّیقِ اکبر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کی مبارَک زَبان پر پارہ24 سورۃُ المؤمن کی آیت نمبر28 جاری تھی :

اَتَقْتُلُوْنَ رَجُلًا اَنْ یَّقُوْلَ رَبِّیَ اللّٰهُ وَ قَدْ جَآءَكُمْ بِالْبَیِّنٰتِ مِنْ رَّبِّكُمْؕ-

 ( ترجَمۂ کنزالایمان : کیا ایک مرد کو اس پر مارے ڈالتے ہوکہ وہ کہتاہے کہ میرا رب اللہ   (عَزَّوَجَلَّ )  ہے اوربیشک وہ روشن نشانیاں تمہارے پاس تمہارے رب  (عَزَّوَجَلَّ )  کی طرف سے لائے ۔  ‘‘) اب کفّارِ بدکردار نے حضرتِ سیِّدُناابوبکرصدّیق رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ  کو پکڑ لیا۔   ان کے سرِاَقدس اورداڑھی مبارَک کے بَہُت سے بال نوچ ڈالے اور مار مار کر آپ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ  کو شدید زخمی کردیا۔    (شَرْحُ الزَّرْقانی عَلَی الْمَواہِبِ اللَّدُنِّیَّۃ ج۱ ص ۴۶۸ ۔  ۴۷۰)

        بَہرحالکفّارِجفاکارنے بڑازورلگایا، خوب دھمکیاں دیں کہ کسی طرح بھی سرکارِعالی وقار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ اسلام کے پَرچارسے باز آجائیں مگر ہمارے پیارے اورمیٹھے میٹھے آقا صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ دینِ اسلام کاکام کرتے ہی رہے۔  جُوں جُوں کا م



Total Pages: 12

Go To