Book Name:Salat o Salam Ki Aashiqa

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ علٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

 دُرُودِ پا ک کی فضیلت

        شیخِ طریقت ، امیرِاَہلسنّت ، با نیِٔ دعوتِ اسلامی ، حضرت علامہ مولانا ابو بلال محمدالیاس عطارقادِری رَضَوی ضیائی دامَت بَرَکاتُہُمُ العالیہ کے بیان کے تحریری گلدستے

’’ باحیا نوجوان ‘‘ میں  منقول ہے کہ سرکارِمد ینۂ منوّرہ  ، سردارِ مکۂ مکرمہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ    کافرمان ِدلنشین ہے : ’’ جو شَخص صُبح و شام مجھ پر دس دس بار دُرُود شریف پڑھے گا بروزِ قِیامت میری شَفَاعت اُسے پَہُنچ کر رہے گی۔ ‘‘

(اَلتَّرْغِیب وَالتَّرْہِیب ج۱ ص۲۶۱حدیث ۲۹ دارالکتب العلمیۃ بیروت)  

صَلُّوْ ا عَلَی الْحَبِیب !                                                             صلَّی اللّٰہُ تعالٰی عَلٰی محمَّد

 (1) صلٰوۃ و سلام کی عا شِقہ

          باب المدینہ(کراچی) کے علاقہ رنچھوڑ لائن کے مقیم اسلامی بھائی کے بیان کا خلاصہ ہے کہ میری حقیقی بہن (عمر تقریباً 22سال) نے غالِباً 1994ء میں  شیخِ طریقت ، امیرِ اَہلسنّت ، بانیٔ دعوتِ اسلامی حضرت علامہ مولانا محمد الیاس عطّاؔر قادِری رَضَوی دَامَتْ بَرَکاتُہُمُُ الْعَالیہ سے بیعت ہوکر عطّاریہ بننے کا شرف حاصل کیا۔ اس عطّاری نسبت کی برکت سے ان کی زندگی میں  مَدَنی انقلاب برپا ہوگیا۔ پنج وقتہ نماز پابندی سے پڑھنے لگیں اورجب یہ پتا چلاکہ میرے پیر و مرشد امیرِ اَہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُُ الْعَالیہ T.Vکو سخت ناپسند فرماتے ہیں ([1])  تو اسی دن سے میری بہن شبانہ عطّاریہ نےT.V.دیکھنا چھوڑ دیا ۔ گھر کے افراد T.V.چلاتے تو یہ دوسرے کمرے میں  چلی جاتیں  ۔

          1995 ء میں  ان کی طبیعت خراب ہوئی, علاج کروایا مگر دن بدن حالت بگڑتی چلی گئی حتّٰی کہ اس قد رکمزور ہوگئیں  کہ بغیر سہارے کے بیٹھ بھی نہیں  سکتی تھیں ۔ وہ دعوتِ اسلامی کے مَدَنی ماحول کی بَرَکت سے پیارے آقا صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  پر کثرت سے دُرُود وسلام پڑھا کرتیں ۔ جُمُعہ کے دن جب عاشقانِ رسول کی مساجد سے بعدِنمازِجُمُعہ پڑھے جانے والے صلٰوۃ وسلام ...

مصطفی جانِ رَحمت پہ لاکھوں  سلام

شمعِ بزمِ ہدایت پہ لاکھوں  سلام

 کی مدھ بھری صدائیں  ان کے کانوں  تک پہنچتیں  توان پر سُرور کی کیفیت طاری ہوجاتی۔ وہ شدید تکلیف و کمزوری کے باوُجود کھڑکی کا سہارا لے کرپردے کی احتیاط کے ساتھ ادباً کھڑی ہوجاتیں  اور صلٰوۃ وسلام کی صداؤں  میں  گُم ہوجاتیں ۔ ان کی آنکھوں  سے آنسو جار ی ہو جاتے حتٰی کہ بارہا روتے روتے ہچکیاں  بندھ جاتیں  اور جب تک مختلف مساجد سے  صلٰوۃ وسلام  کی آوازیں  آنا بند نہ ہوتیں  وہ اسی طرح ذوق و شوق اور رِقّت کے ساتھ صلٰوۃ وسلام  میں  حاضر رہتیں۔ گھر والے ترس کھا کر بیٹھنے کا مشورہ دیتے تو روتے ہوئے انہیں  منع کردیتیں۔ ان کی زبان پروقتاً فوقتاً  بِسْمِ اللّٰہ ، کَلِمَۂ طَیِّبہ اوردُرودِپاک کا وِرْد جاری رہتا۔

 



   [1] مزید معلومات کے لئے’’ امیرِ اہلسنّت کے TVکے بارے میں  تأثرات‘‘مکتبۃ المدینہ سے ھدیۃً طلب کیجئے۔



Total Pages: 14

Go To