Book Name:Abu Jahal ki maut

ابو جَہْل کا سر

            سرکارِنامدار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایا :  کون ہے جو ابوجَہْل کو دیکھ کر اس کا حال بتائے ؟توحضرتِ سیِّدُناعبدُاللّٰہ بن مسعود رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ نے جاکر لاشوں میں دیکھا تو ابوجَہْلزخمی پڑا ہوا دَم توڑ رہا تھا، اس کا سار ا بدن فَولاد میں چھپا ہوا تھا ، اس کے ہاتھ میں تلوارتھی جورانوں پررکھی ہوئی تھی، زخمو ں کی شدّت کے باعِث اپنے کسی عُضْو کو جُنبش نہیں دے سکتا تھا ۔  سیِّدُنا عبدُ اللّٰہ ابنِ مسعود رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ نے اس کی گردن پر پاؤں رکھا، اس عالَم میں بھی اُس کے تکبُّر کا عا لَم یہ تھاکہ حَقارت سے بول اٹھا :  اے بکریوں کے چرواہے !تُوبڑی اونچی اور دشوار جگہ پر چڑھ گیا ۔ (السیرۃ النبویۃ لابن ہشام ص۲۶۲، ۲۶۳)حضرتِ سیِّدُناعبداللّٰہابن مسعود رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ فرماتے ہیں : میں اپنی کُند تلوارسے ابوجہل کے سرپرضَربیں لگانے لگا، جس سے تلوا ر پر اُس کے ہاتھ کی گِرِفت ڈھیلی پڑگئی، میں نے اُس سے تلوارکھینچ لی ۔  جانکنی کے عالم میں اس نے اپنا سراٹھایا اور پوچھا :  فتح کس کی ہوئی؟ میں نے کہا : لِلّٰہِ وَرَسُوْلِہٖ ۔  یعنی اللہ و رسول عَزَّ وَجَلَّ و صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کیلئے ہی فتح ہے ۔ پھر میں نے اُس کی داڑھی کو پکڑکرجھنجھوڑا اور کہا : اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ الَّذِیْ اَخْزَاکَ یَا عَدُوَّ اﷲِیعنی اُس اللہ عَزَّ وَجَلَّ  کا شکرہے کہ جس نے اے دشمنِ خدا! تجھے ذلیل کیا ۔ میں نے اُس کا خَوداس کی گُدّی سے ہٹایا اور اسی کی تلوارسے اس کی گردن پر زور دار وار کیا اس کی گردن کٹ کرسامنے جاگری ۔ پھر میں نے اُس کے ہتھیا ر ، زِرَہ وغیرہ اتار لئے اوراُس کاسراُٹھاکربارگاہِ رسالت میں حاضِرہوگیا اور عرض کی :  یارَسُوْلَ اللہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ! یہ دشمنِ خد ا ابوجَہْل کا سر ہے ۔ سلطانِ مدینہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے تین بارفرمایا :  اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ الَّذِیْ اَعَزَّالْاِسْلَامَ وَاَھْلَہٗ ۔  یعنی اللہ عَزَّ وَجَلَّ

 کاشکرہے جس نے اسلام اوراہلِ اسلام کو عزّت بخشی ۔  پھر سرکا رِ عالی وقار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے سجدۂ شکراداکیا ۔  پھر فرمایا :  ہراُمّت میں ایک فرعون ہوتاہے اس اُمّت کا فرعون ابوجہل تھا ۔  (سُبُلُ الْھُدٰی ج۴ ص۵۱ ۔ ۵۲)

ابوجَہْل کی آخِری بکواس

             ابوجَہْل کاجذبۂ عِناداورعداوتِ رسولِ ربُّ الْعِباد تودیکھئے کہ ٹا نگیں کٹ چکی ہیں ، ساراجسم زخموں سے چُور چُورہے ، موت سرپرمَنڈلارہی ہے ، اس حالت میں بھی اُس سَخت جان شقی اَزَلی(یعنی ہمیشہ ہی سے بد بخت) کی شَقاوت(یعنی بد بختی) کاعالم یہ ہے کہ اس نے حضرتِ سیِّدُناابن مسعود رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کو کہا : ’’ اپنے نبی کومیرا یہ پیغام پہنچادیناکہ میں عمربھراس کادشمن رہا ہوں اور اس وقت بھی میراجذبۂ عَدوات شد ید تر ہے  ۔ ‘‘حضرتِ سیِّدُنا عبدُ اللّٰہ بن مسعود رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ نے جب سرکارِ والا تبار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کے دربار میں اس اَزَلی بدبخت کایہ جُملہ عَرض کیاتو اللہ عَزَّ وَجَلَّ کیمَحبوب ، دانائے غُیُوب، مُنَزَّہٌ عَنِ



Total Pages: 14

Go To