Book Name:Abu Jahal ki maut

سفر کر کے لشکرِ کفّار کے سِپہ سالارابوجہلِ جفا کار سے ٹکّرلے لی اوراس کوخاک وخون میں لوٹتا کردیا ۔  کسی شاعِرنے ان دونوں مَدَنی مُنّوں کے ابوجَہْل پرحملہ کرنے کی کیا خوب منظرکشی کی ہے :

گِرااس طرح کُندے جوڑ کر شَہباز کا جوڑا                               کہ اِک دم میں صفِ زاغ وزَغَن کاسلسلہ توڑا

جوانوں کے مقابِل پہلوانوں کی طرح اَڑتے                             برابر وار کرتے وار سہتے چَومُکھی لڑتے

ہٹاتے مارتے اور کاٹتے بڑھتے گئے دونوں                                 بَسان مَوج اوجِ رَیگ پرچڑھتے گئے دونوں

اُدھر بُوجہْل بھی کرنے لگا بچنے کی تدبیریں                               نہ اسکی دھمکیاں کام آسکیں لیکن نہ تقریریں

بَروئے بازوئے تقدیر تدبیریں نہیں چلتیں                                جہاں شمشیر چل جاتی ہے تقریریں نہیں چلتیں

ہٹا وہ دیکھ کر ان کو یہ پھر اسکے قریں پہنچے                                                   جہاں بوجہل پہنچا دونوں لڑکے بھی وہیں پہنچے

نہ بھاگا جاسکا تو ان کو دھمکانے لگا کافِر                                      سِپَر کے آسرے پر تیغ چمکانے لگا کافِر

وہ پختہ کار یہ کمسِن، یہ پیدل اور وہ گھوڑے پر                            لگا مَرکَب کُدانیخَشْمَگیں شیروں کے جوڑے پر

مگر عُشّاق اپنی جان کی پروا نہیں کرتے                                    خدا سے ڈرنے والے موت سے ہرگزنہیں ڈرتے

ہوا میں گونج اٹھیں رَعد کی مانند تکبیریں                                  گِریں بُوجہْل پر دو تیز خون آشام شمشیریں

دَہن سے آہ نکلی ہاتھ سے تیغ وسِپَر چھوٹی                                 گِرا گھوڑا بھی کھا کر زخم دونوں کی کمر ٹوٹی

زمیں دھنستی تھی جس بدبخت کی ادنیٰ سی ٹھوکر پر                      پڑا تھا خون میں لِتھڑا ہوا مِٹی کی چادر پر

وہ ہڈّی اور خوں جس پر ہمیشہ ناز رہتا تھا                                   وُہی ہڈّی شِکستہ تھی وہی اب خون بہتا تھا

زَباں سے چیختا اور کفر بکتا ہی رہا کافِر                                        مددگاروں کو چاروں سَمت تکتا ہی رہا کافر

وہ جنگ آور رِسالہ جس کے بَل پر زور تھا سارا                           اُسی میں گھس کے دو کمزور لڑکوں نے اسے مارا

جوانو! قابلِ تقلید ہے اقدام دونوں کا                                     جَبینِ لَوحِ غیرت پر لکھا ہے نام دونوں کا

وہ غازی تھے مَئے حُبِّ نبی کا جوش تھا اُن کو                                لبِ کوثر پہنچ کر شوقِ نوشا نوش تھا ان کو

مشکل الفاظ کے معانی

کُندا : کَندھا ۔ زاغ : کوّا ۔ زَغَن : چِیل ۔ بَسان : مانند ۔ مَوج : پانی کی لہر ۔  اَوج : بُلندی ۔  رَیگ : دُھول ۔ قَریں : قریب ۔ سِپَر :  ڈھال ۔ مَرکَب : سُواری ۔  خشمگیں : غضبناک ۔  رَعد :  بجلی کی کڑک ۔  خون آشام شمشیریں : خونخوار تلواریں ۔ دَہَن : مُنہ ۔ تَیغ :  تلوار ۔  لَعِین :  لعنتی ۔  عَدُو :  دشمن ۔  شِکستہ :  ٹوٹی ہوئی ۔ رِسالہ :  ہزار فوج کا دستہ ۔ جَبین : پیشانی ۔ لَوح :  تختی ۔  مئے حُبِّ نبی :  نبی کی مَحَبَّت کی شراب ۔

لٹکتا بازو

                 ایک روایت کے مطابِق ان دونوں بھائیوں میں سے حضرتِ سیِّدُنا مُعاذ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ کافرمان ہے : میں اپنی تلوار لہراتاہوا ابوجَہْلپرٹوٹ پڑامیرے پہلے وار سے اس کی ٹانگ کی پِنڈلی کٹ کر دورجاگری ۔ اس کے بیٹے عِکرَمہ(جوبعدمیں مسلمان ہوئے ) نے میری گردن پر تلوارکاوار کیامگراس سے میرابازوکٹ گیا اورکھال کے ایک تَسمے کے ساتھ لٹکنے لگا ۔ سارادن لٹکتے ہوئے



Total Pages: 14

Go To