Book Name:Abu Jahal ki maut

راست گُفتار وکُشادہ دل وبیدار  دماغ                       مدّتُ العمر جو آفات کے سایوں میں پلے

کبھی پابندِ سَلاسِل کبھی شُعلوں کے حَریف               کبھی اَنگاروں پہ لوٹے کبھی کانٹوں پہ چلے

کبھی تپتے ہوئے پتھّر کی سِلَیں سینوں پر                   کبھی کاندھوں پہ اٹھائے ہوئے وہ بارِ گراں

کبھی پُشتوں پہ سَلاخوں کے سلگتے ہوئے داغ                    کبھی چِہروں پہ طمانچوں کے المناک نشاں

کبھی نَیزوں کے سزاوار کبھی تِیروں کے                  کبھی طعنوں کے کچوکے کبھی فاقوں سے نڈھال

کبھی چکّی کی مَشَقَّت کبھی تنہائی کی قید                      کبھی اپنوں کی ملامت کبھی غیروں کا اُبال

کبھی بُہتان طَرازی، کبھی دُشنامِ غَلیظ                       کبھی تضحیک وتَمسخُر، کبھی شُبہات و شکُوک

کبھی روحانی اذیَّت، کبھی توہینِ ضَمیر                       کبھی اِینٹوں سے تَواضُع، کبھی کوڑوں کاسُلوک

کبھی مَحبُوس گھروں میں تو کبھی خانہ بدَر                   چیتھڑے تن کے نگہبان، کبھی وہ بھی نہیں !

تشنگی کا ہے وہ عالم کہ الٰہی توبہ                              حلق کو چاہئے تھوڑی سی نَمی وہ بھی نہیں

آزمائش کے لپکتے ہوئے ہنگاموں میں                        وقت نے ان کے نشانات قدم دیکھے ہیں

تختۂ دار پہ آئے تو اُسے چوم لیا                             ایسے جی دار بھی تاریخ نے کم دیکھے ہیں

کس عَزِیمَت کے تھے مالِک یہ نُفُوسِ قُدسی               جوپڑی وقت کے ہاتھوں وہ کڑی جَھیل گئے

صِرف اسلام کی خاطِر، فَقَط اللہ  کے لئے                                 جان سے کھیلنا آتا تھا انہیں کھیل گئے

ہم تک اسلام جو پہنچا تو صِرف ان کے طُفیل                    یہ غلامانِ خدا  نورِ رسالت   کے     امیں

سر بسر پیکرِ ایثار، مجسَّم ایماں                                حشر تک ان سا ہو پیدا کوئی ممکِن ہی  نہیں

مشکل الفاظ کے معانی

 پَرستار :  پُوجا کرنے والا ۔ پاسبان : محافِظ ۔  چَرخِ بَریں : بُلندآسمان ۔ راست گُفتار : سچ بولنے والا ۔  پابندِ سَلاسِل :  زنجیروں میں جکڑا ہوا ۔ حَریف :  مقابلہ کرنے والا ۔  دُشنامِ غلیظ :  گندی گالیاں ۔  تضحیک :  ہنسی اُڑانا ۔  تمَسخُر :  مذاق اُڑانا ۔  محبوس : قید ۔ خانہ بَدَر :  گھر سے نکال دینا ۔ تِشنگی :  پیاس ۔  تختۂ دار : پھانسی کا تختہ ۔ عزیمت :  عزم وارادہ ۔ نُفوسِ قُدسی :  پاک جانیں  ۔

              میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!بیان کواختتام کی طرف لاتے ہوئے سنت کی فضیلت اور چند سنتیں اور آداب بیان کرنے کی سعادَت حاصِل کرتا ہوں ۔ تاجدارِ رسالت،  شَہَنشاہِ نُبُوَّت، مصطَفٰے جانِ رَحمت، شَمعِ بزمِ ہدایت ، نَوشَۂ بز م جنت صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کا فرمانِ جنت نشان ہے :  جس نے میری سنت سے  مَحَبَّت کی اُس نے مجھ سے مَحَبَّت کی ا و ر  جس نے مجھ سیمَحَبَّت کی وہ  جنت  میں میرے ساتھ ہو گا ۔                (اِبنِ عَساکِر ج۹ص۳۴۳)

سینہ تری سنّت کا مدینہ بنے آقا

جنت میں پڑوسی مجھے تم اپنا بنانا

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!        صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

 



Total Pages: 14

Go To