Book Name:Islami Behno Ki Namaz

               روزہ ،سجدۂ تِلاوت، فاسِد شدہ نوافِل کی قضاوغیرہ کے فدیے میں   ہر ایک کے بدلے ایک ایک صدقۂ فطر کی رقم ادا کرے۔اور زکوٰۃ ، فطرہ، قربانیاں  ، عُشروخِراج وغیرہ میں   جتنی رقم مرحوم یا مرحومہ کے ذِمّے نکلتی ہے وہ بھی  ادا کرے۔  ( ماخوذ از فتاوٰی رضویہ ج۱۰ص۵۴۰،۵۴۱ )

  ( تفصیلی معلومات کیلئے فتاوٰی رضویہ ’’ مُخَرَّجہ ‘‘  جلد10 میں  صَفْحَہ 523تا 549  پر مبنی رسالہ،  ’’ تَفَاسِیْرُالْاَحْکَامِ لِفِدْیَۃِ الصَّلوٰۃِ وَ الصِّیَامِ ‘‘  نیزمُفَسّرِشہیر حکیمُ الْاُمَّت حضر  ت ِ مفتی احمد یار خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الحَنّان کی تصنیف  ’’ جاءالحق ‘‘  سے  ’’ اِسقاط کابیان ‘‘    پڑھ لیجئے)

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

نوافل کا بیان

دُرُدوشریف کی فضیلت           

        خا تَمُ المُر سَلین، رَحمَۃٌ  لِّلْعٰلمین ،شفیعُ الْمُذْنِبیْنِ، انیسُ الْغَرِیبین، سِراجُ السَّالِکین، محبوبِ ربُّ الْعٰلمین،جنابِ صادِق واَمین  عَزَّوَجَلَّوصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا فرمانِ مغفِرت نشان ہے: جب جُمعرات کا دن آتا ہے اللہ تعالیٰ فِرِشتوں   کو بھیجتا ہے جن کے پاس چاندی کے کاغذ اور سونے کے قلم ہوتے ہیں   وہ لکھتے ہیں  ، کون یومِ جُمعرات اور شبِ جُمُعہ مجھ پر کثرت سے دُرُود پاک پڑھتا ہے۔     (کَنْزُ الْعُمَّال ،ج۱،ص۲۵۰ ،حدیث۲۱۷۴)

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیْب !                                      صلَّی اللّٰہُ تعالیٰ علیٰ محمَّد

اللّٰہ کا پیارا بننے کا نُسخہ

        حضرتِ سیِّدُنا ابو ہریرہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے مروی ہے،حضورِ پاک، صاحبِ لَولاک، سَیّاحِ اَفلاک صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ    فرماتے ہیں   کہ اﷲ تعالیٰ نے فرمایا:   ’’ جو میرے کسی ولی سے دشمنی کرے، اسے میں   نے لڑائی کا اعلان دے دیا اور میرا بندہ  جن چیزوں   کے ذریعے میراقُرب چاہتاہے ان میں  مجھے سب سے زیادہ فرائض محبوب ہیں   اور نوافل کے ذَرِیعے قُرب حاصل کرتارہتاہے یہاں   تک کہ میں   اسے اپنامحبوب بنا لیتا ہوں   اگر وہ مجھ سے سوال کرے تو اسے ضَروردوں   گا اور پناہ مانگے تو اسے ضَرورپناہ دوں   گا۔ ‘‘   (صَحِیحُ البُخارِی،ج۴،ص۲۴۸حدیث۶۵۰۲)                             

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیْب !                                                              صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

صلٰوۃُ اللَّیل

        رات میں   بعد نمازِ عشا ء جو نوافِل پڑھے جائیں   ان کو صلاۃُ اللَّیل کہتے ہیں   اور رات کے نوافل دن کے نوافل سے افضل ہیں   کہ صحیح مسلم شریف میں  ہے:  سیِّدُ المُبَلِّغین،رَحمۃٌ  لِّلْعٰلمِینصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشادفرمایا :   ’’ فرضوں   کے بعد افضل نَماز رات کی نماز ہے۔ ‘‘   (صَحِیح مُسلِم،ص۵۹۱ حدیث۱۱۶۳)

تَہَجُّد اور رات میں   نَماز پڑھنے کا ثواب

اللّٰہ تبارَکَ وَ تَعالٰی پارہ 21 سورۃالسَّجدہ آیت نمبر16 اور17 میں   ارشاد فرماتا ہے:

تَتَجَافٰى جُنُوْبُهُمْ عَنِ الْمَضَاجِعِ یَدْعُوْنَ رَبَّهُمْ خَوْفًا وَّ طَمَعًا٘-وَّ مِمَّا رَزَقْنٰهُمْ یُنْفِقُوْنَ (۱۶) فَلَا تَعْلَمُ نَفْسٌ مَّاۤ اُخْفِیَ لَهُمْ مِّنْ قُرَّةِ اَعْیُنٍۚ-جَزَآءًۢ بِمَا كَانُوْا یَعْمَلُوْنَ (۱۷)

ترجَمۂ کنزالایمان :  ان کی کروٹیں   جدا ہوتی ہیں  خواب گاہوں   سے اوراپنے رب کو پکارتے ہیں   ڈرتے اورامید کرتے اور ہمارے دیئے ہوئے سے کچھ خیرات کرتے ہیں   تو کسی جی کو نہیں  معلوم جو آنکھ کی ٹھنڈک ان کے لئے چھپارکھی ہے صلہ ان کے کاموں   کا۔

             صلٰوۃُاللَّیلکی ایک قسم تَہَجُّدہے کہ عشاکے بعدرات میں   سو کر اٹھیں   اور نوافِل پڑھیں  ،سونے سے قبل جوکچھ پڑھیں  وہتَہَجُّدنہیں  ۔کم سے کمتَہَجُّدکی دو رَکعَتَیں  ہیں  اورحُضُورِاقدس صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ سے آٹھ تک ثابِت۔  (بہارِشریعت حصّہ۴ص۲۶،۲۷) اِس میں  قراءت کا اِختیار ہے کہ جو چاہیں   پڑھیں  ، بہتر یہ ہے کہ جتنا قرآن یاد ہے وہ تمام پڑھ لیجئے ورنہ یہ بھی ہو سکتا ہے کہ ہر رَکعَت میں   سورۂ فاتِحہ کے بعد تین تین بار سورَۃُالْاِخلاص پڑھ لیجئے کہ اِس طرح ہر رَکعَت میں  قرآنِ کریم ختم کرنے کا ثواب ملے گا،ایسا کرنا بہتر ہے، بَہَرحال سورۂ فاتِحہ کے بعد کوئی سی بھی سورت پڑھ سکتے ہیں  ۔   (مُلَخَّص از فتاوٰی رضویہ



Total Pages: 92

Go To