Book Name:Islami Behno Ki Namaz

اور غسل کرتے وقت کی مدّت  (یعنی تھوڑی دیر) تک ٹھہری تو تَثلِیث  (تَث۔لِیْث یعنی تین بار دھونے کی)  سنّت ادا ہوجائے گی چُنانچِہ دُرِّمختار میں   ہے :  ’’ اگر جاری پانی ،بڑے حوض یا بارِش میں   وُضو اورغسل کرنے کے وَقت کی مدّت تک ٹھہری تو اس نے پوری سنّت ادا کی۔  ( در مختار مع رد المحتار ج۱ ص ۳۲۰)   یاد رہے غسل یا وُضُو میں   کلّی کرنا اورناک میں  پانی بھی چڑھانا ہے ۔        

فَوّار ے کی اِِحتِِیاطیں 

            اگرآپ کے حمّام میں  فَوّارہ (SHOWER) ہوتواس کا رُخ دیکھ لیجئے کہ اُس کی طرف مُنہ کرکے ننگے نہانے میں  مُنہ یاپیٹھ قبلہ شریف کی طرف نہ ہو ۔ استنجاخانے میں  اس کی زیادہ اِحتیاط فرمائیے۔قبلہ کی طر ف منہ یاپیٹھ ہو نے کا معنی یہ ہے کہ 45دَرَجے کے زاوِیہ کے اندراندرہو۔لہٰذاایسی ترکیب بنایئے کہ 45ڈِگری کے زاویہ کے باہَر رُخ ہوجائے۔

 ’’ مدینہ  ‘‘  کے پانچ حُرُوف کی نسبت سے  غُسل کے 5 سنّت مواقع

              {1} جُمُعہ  {2} عیدُالفِطر  {3} بَقَرعید  {4} عَرَفہ کے دن  (یعنی 9ذُوالحجۃُالحرام )  اور  {5} اِحرام باندھتے وَقْت نہاناسُنت ہے۔  (بہارشریعت حصہ۲ص۴۶، دُرِّمُختارج۱ص۳۳۹۔۳۴۱)

"مُستحب پر عمل کرناباعِث ثواب ہے " کے چوبیس حُرُوف کی نبست سے غُسل کے 24مُستَحَب مواقِع

              {1} وُقُوفِ عرفات   {2}  وُقُوفِ مُزدَلِفہ (مُز۔دَ۔لِ۔فہ)   {3}  حاضِریٔ حرم  {4}  حاضِریٔ سرکارِ اعظم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  {5} طواف   {6} دُخولِ منیٰ  {7} جمروں    (شیطانوں  ) پر کنکریاں   مارنے کیلئے تینوں   دن  {8}  شبِ براءت  {9}  شبِ قدر {10}  عرفہ کی رات (یعنی 9ذُوالحجۃُالحرام کے غروبِ آفتاب تا 10کی صبح )   {11} مجلسِ میلاد شریف   {12} دیگر مجالسِ خیر کیلئے   {13} مُر د ہ نہلانے کے بعد  {14} مجنون  (پاگل)  کو جُنون جانے کے بعد  {15} غشی سے اِفاقہ (یعنی بے ہوشی ختم ہونے)  کے بعد   {16} نشہ جاتے رہنے کے بعد  {17} گناہ سے توبہ کرنے {18} نئے کپڑے پہننے کیلئے  {19} سفر سے آنے والے کیلئے   {20}  اِستحاضہ ([1])  کا خون بند ہونے کے بعد   {21} نَمازِ کُسوف (سورج گہن)  وخسوف (چاند گہن)   {22} اِستِسقائ (طلبِ بارش) اور   {23} خوف و تاریکی اور سخت آندھی کیلئے   {24} بدن پرنَجاست لگی اور یہ معلوم نہ ہو اکہ کس جگہ لگی ہے  ( بہارِ شریعت حصّہ ۲ص ۴۶،۴۷، تَنْوِیرُ الْاَبْصار،دُرِّمُختارج۱، ص۳۴۱ ۔ ۳۴۲ )

ایک غُسل میں   مُختَلف نیّتیں   

جس پرچند غسل ہوں  مَثَلاًاِحتِلام بھی ہُوا،عیدبھی ہے اورجُمُعہ کادن بھی ، توتینوں  کی نِیّت کرکے ایک غُسل کرلیاسب اداہوگئے اورسب کاثواب ملے گا۔  ( بہارِ شریعت حصّہ ۲ص ۴۷ )

غُسل سے نَزْلہ بڑھ جاتا ہو تو ؟

     زُکام یاآشَوبِ چَشم وغیرہ ہواوریہ گمانِ صحیح ہوکہ سرسے نہانے میں   مرض بڑھ جائے گایادیگراَمراض پیداہوجائیں  گے توکُلّی کیجئے ناک میں  پانی چڑ ھا ئیے او ر گردن سے نہائیے۔اور سر کے ہر حصّے پربِھیگا ہوا ہاتھ پھیر لیجئے غسل ہوجائے گا ۔ بعد ِ صِحّت سردھو ڈالئے پورا غسل نئے سرے سے کرنا ضَروری نہیں   ۔  (بہارِ شریعت، حصّہ ۲ص ۴۰)

 بالٹی سے نہاتے وَقت اِحتِیاط

    اگربالٹی کے ذَرِیعے غُسل کریں  تواِحتیاطاًاُسے تِپائی (STOOL)  وغیرہ پر رکھ لیجئے تاکہ بالٹی میں  چِھینٹیں  نہ آئیں  ۔نیزغُسل میں   استِعما ل کرنے کا مگ بھی فرش پرنہ رکھئے ۔

بال کی گِرِہ

            بال میں  گِرِہ پڑجائے توغُسل میں  اسے کھول کرپانی بہاناضَروری نہیں   ۔ ( بہارِ شریعت ،حصّہ ۲،ص ۴۰)