Book Name:Islami Behno Ki Namaz

مِنَ الْمُتَطَہِّرِیْنَ (ب) سُبْحٰنَکَ ا للّٰھُمَّ وَ بِحَمْدِکَاَشھَدُ اَنْ لَّا اِلٰہَ اِلَّا اَنتَاَسْتَغْفِرُکَ وَ اَتُوْبُ اِلَیْکَ {15تا17}  آسمان کی طرف دیکھ کر کلمۂ شہادت اور  سُورَۃُ القَد رپڑھوں   گی مزید تین بار سُورَۃُ القَد رپڑھوں   گی  {18}  ( مکروہ وقت نہ ہو ا تو )  تَحِیَّۃُ الوُضُو ادا کروں   گی {19} ہرعُضو دھوتے وَقت گناہ جھڑنے کی اُمّید کروں   گی  {20}  باطِنی وُضو بھی کروں   گی  (یعنی جس طرح پانی سے ظاہِری اَعضاء کا مَیل کُچیل دور کیا ہے اِسی طرح توبہ کے پانی سے گناہوں   کی گندگی دھوکر آئندہ گناہوں   سے بچنے کا عہد کروں   گی )

            یاربَّ المُصطَفٰیعَزَّوَجَلَّو صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَہمیں   اِسراف سے بچتے ہوئے شَرعی وُضو کے ساتھ ہر وقت با وُضو رَہنا نصیب فرما۔اٰمین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیْب !                                                              صلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی علٰی محمَّد

غسل کا طریقہ  (حنفی)

دُرُدوشریف کی فضیلت        

        خا تمُالمُر سَلین، رحمۃٌ  لِّلْعٰلمین ،شفیعُ الْمُذْنِبیْنِ، انیسُ الْغَرِیبین، سِراجُ السَّالِکین، مَحبوبِ ربّ الْعٰلمین،جنابِ صادِق واَمین  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا فرمانِ دلنشین ہے: جب جُمعرات کا دن آتا ہے اللہ تعالیٰ فِرِشتوں   کو بھیجتا ہے جن کے پاس چاندی کے کاغذ اور سونے کے قلم ہوتے ہیں   وہ لکھتے ہیں  ، کون یومِ جُمعرات اور شبِ جُمُعہ (یعنی جمعرات اور جمعہ کی درمیانی شب)  مجھ پر کثرت سے دُرُود پاک پڑھتا ہے۔  (کَنْزُ الْعُمَّال ج۱ص۲۵۰ حدیث۲۱۷۴)

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                                      صلَّی اللّٰہُ تعالیٰ علیٰ محمَّد

فرض غُسل میں   احتیاط کی تاکید

            رسولُ اﷲ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ فرماتے ہیں  :   ’’  جو شخص غُسلِ جنابت میں   ایک بال کی جگہ بے دھوئے چھوڑ دے گا اس کے ساتھ آگ سے ایسا ایسا کیا جائے گا۔ ‘‘   (یعنی عذاب دیا جائے گا) ۔  (سُنَنُ اَ بِی دَاوٗد ،ج۱ص۱۱۷ حدیث ۲۴۹)

  قَبْر کا بِلاّ

            حضرتِ سیِّدُنا ابان بن عبداللہ بَجلیعلیہ رحمۃُ اللّٰہِ الولی فرماتے ہیں  :  ہمارا ایک پڑوسی مرگیا تو ہم کفن و دفن میں   شریک ہوئے ۔جب قَبْر کھودی گئی تو اس میں   بِلّے کی مِثل ایک جانور تھا، ہم نے اس کومارا مگر وہ نہ ہٹا۔ چُنانچِہ دوسری قَبْر کھودی گئی تو اس میں   بھی وُہی بِلّا موجود تھا! اس کے ساتھ بھی وُہی کیا گیا جو پہلے کے ساتھ کیا گیا تھا لیکن وہ اپنی جگہ سے نہ ہِلا۔ اس کے بعد تیسری قَبْر کھودی گئی تو اس میں   بھی یِہی مُعامَلہ ہوا ،آخر لوگوں   نے مشورہ دیا کہ اب اس کو اِسی قَبْر میں   دَفن کردو، جب اس کو دَفن کردیا گیا تو قَبْر میں   سے ایک خوفناک آواز سنی گئی! تو ہم اس شخص کی بیوہ کے پاس گئے اور اس سے مرنے والے کے بارے میں   دریافت کیا کہ اس کا عمل کیا تھا؟ بیوہ نے بتایا:  ’’  وہ غسلِ جَنابَت (یعنی فرض غسل)  نہیں   کرتا تھا۔ ‘‘  ( شرح الصدوربشرح حال الموتی والقبور،ص۱۷۹)

غسلِ جَنابَت میں   تاخیر کب حرام ہے

          اسلامی بہنو!دیکھا آپ نے!وہ بدنصیب غسلِ جَنابَت کرتا ہی نہیں   تھا۔ غسلِ جَنابَت میں  دیر کر دینا گناہ نہیں   البتّہ اتنی تاخیر حرام ہے کہ نَماز کا وَقت نکل جائے۔چُنانچِہ بہارِ شریعتمیں  ہے :  ’’ جس پر غُسل واجِب ہے وہ اگر اتنی دیر کر چکی کہ نَماز کا آخِر وَقت آگیا تو اب فوراً نہانا فرض ہے، اب تاخیر کرے گی گنہگار ہو گی ۔  (بہارِشریعت حصّہ ۲ ص ۴۷، ۴۸ )  

جَنابت کی حالت میں   سونے کے احکام

          حضرتِ سیِّدناابو سَلَمہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ کہتے ہیں  ،اُمّ الْمُؤمِنِین حضرتِ سَیِّدَتُنا عائِشہ صِدّیقہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہَاسے پوچھا ،کیا نبیِّ رَحمت ،شفیعِ امّت،شَہَنشاہِ نُبُوَّت ، تاجدارِ رسالت صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  جَنابت کی حالت میں   سوتے تھے ؟انہوں   نے بتایا :   ’’ ہاں   اور وُضو فرما لیتے تھے۔ ‘‘  (صَحِیحُ البُخارِیّ ج ۱ ص۱۱۷حدیث۲۸۶)  حضرتِ سیِّدُنا عبداللہ بن عمر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُمَا نے بیان کیا کہ امیرُالْمُؤمِنِینحضرتِ سیِّدُنا عُمر فاروقِ اعظمرَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ نے رسولِ اکرم،نُورِ مُجَسَّم، شاہِ بنی آدم،نبیِّ مُحتَشَمصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ    سے تذکِرہ کیا : رات میں   کبھی جَنابت ہوجاتی ہے  (تو کیا کیا جائے؟ )  رسولُ اللہ عَزَّوَجَلَّ  و صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ    نے فرمایا:  وُضو کر کے عُضوِ خاص کو دھو کرسو جایا کرو ۔  (ایضاً ص۱۱۸حدیث۲۹۰)

 



Total Pages: 92

Go To