Book Name:Muqaddas Tahrirat kay Adab kay Baray Main Sawal jawab?

اِسی طرح ایک اور حدیثِ پا ک میں حضرتِ سیِّدُنامولیٰ مُشکلِکُشا علی المرتضیٰ شیرِ خُداکَرَّمَ اللّٰہُ تَعَالٰی وَجْھَہُ الْکَرِیْم سے فرمایا : ’’ایک نَظَر کے بعد دُوسری نَظَرنہ کرو (یعنی اگر اچانک بِلاقَصْد کسی عَورَت پر نَظَر پڑجائے تو فوراً نَظَر ہٹالو اور دوبارہ نَظَر نہ کرو) کہ پہلی نَظَرجائز ہے اور دوسری نَظَرجائز نہیں ۔ ‘‘(سُنَن اَ بُو دَاوٗدج۲ص۳۵۸حدیث ۲۱۴۹داراحیاء التراث العربی بیروت)

          نِگاہ پَھیرنے  کے بعدیہ دُعاپڑھیں :

اَ لـلّٰـھُـمَّ اِ نِّـیْ اَ عُـوْذُ بِـکَ  مِـنْ فِـتْـنَـۃِ الـنِّـسَـآءِ وَ عَـذَابِ الْـقَـبْـرِ

ترجمہ :  اے اللّٰہعَزَّوَجَلَّ میں عَورت کے فِتنے اور عذابِ قَبْر سے تیری پناہ چاہتا ہوں  ۔

(اَلْجَامِعُ الصَّغِیْرج۱ص۹۶حدیث۱۵۴۵دارالکتب العلمیۃ بیروت)

بدقِسمتی سے آج کل مَخْلوط تعلیمی اِداروں ، مَخْلوط تَفْرِیح گاہوں ، ہوٹلوں اورشاپِنگ سنٹروں وغیرہ جہاں بھی مَردوزَن کا اِختِلاط ہے ،

 بَدْنِگاہی کی نَحوسَت عام ہے ، نہ عورَتیں مَردوں سے پردہ کرتی ہیں ، نہ مَرد عَورَتوں سے مُحْتاط رہتے ہیں ، دوسری طرف مَغْرَبی تَہذِیْب کی یَلْغار ، فَیْشَن کی بھر مار ، گھر گھرکیبل ، ٹی وی ، وی سی آرنے جس طرح بَدْنِگاہی و عُریانی اوربے حیائی وفَحاشی کو فروغ دیاہے اَ لْاَمَان وَالْحَفِیْظ! کاش! ہمیں ہرہر عُضْو کا قُفلِ مدینہ([1]) نصیب ہوجائے  ۔

اللّٰہ ہمیں کردے عطاقُفلِ مدینہ                                ہرایک مسلماں لے لگا قُفلِ مدینہ

آقاکی حیاسے جُھکی رہتی تھی نِگاہیں                            آنکھوں پہ مِرے  بھائی  لگا  قُفلِ مدینہ

گرد یکھے گافلمیں تو قِیامت میں پھنسے گا                      آنکھوں پہ مرے  بھائی  لگا  قُفلِ مدینہ

آنکھوں میں سرِحَشْرنہ بھر جائے کہیں آگ              آنکھوں پہ مرے  بھائی  لگا  قُفلِ مدینہ

بولوں نہ فُضُول اور رہیں نیچی نِگاہیں                           آنکھوں کا ، زَباں کادے خُداقُفلِ مدینہ

رفتار کا، گفتار کا، کردار کا دے دے

ہر عُضْو کا دے مجھ کو خُدا قُفلِ مدینہ

(مُنَاجَاتِ عَطَّارِیَہ)

یاد ریکھئے ! قرآنِ پاک میں اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ نے مَردوں کے بارے میں فرمایاہے :

قُلْ لِّلْمُؤْمِنِیْنَ یَغُضُّوْا مِنْ (پ۱۸ الَنَّوْر۳۰)

ترجَمۂ کنزالایمان : مسلمان مرَدوں کو حکم دو اپنی نگاہیں کچھ نیچی رکھیں  ۔

اِسی طرح عورَتوں کے بارے میں اِرشادفرمایا :

وَ قُلْ لِّلْمُؤْمِنٰتِ یَغْضُضْنَ مِنْ اَبْصَارِهِنَّ  (پ۱۸ الَنَّوْر۳۱)

ترجَمۂ کنزالایمان  : اورمُسلمان عَورتوں کو حُکْم دو اپنی نِگاہیں کچھ نیچی رکھیں  ۔

مگر افسوس صد کروڑ افسوس!آج کے اکثر مسلمانوں کو اللّٰہُ رَبُّ العِزّت عَزَّوَجَلَّ کے اَحکامات کی پرواہ ہے ، نہ اس کے پیارے حبیب  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے فرامِین کا کوئی پاس! یہی وجہ ہے کہ ذِلَّت و پستی نے پنجے گاڑدیئے ہیں ۔  ؎

درسِ قراٰن اگر ہم نے نہ بُھلایاہوتا              یہ زمانہ، نہ زمانے نے دِکھایاہوتا

 



 [1]     ’’قُفلِ مدینہ ‘‘ دعوتِ اسلامی کے مَدَنی ماحول میں بولی جانے والی ایک اِصْطِلاح ہے کسی بھی عُضْو کو گناہ اور فُضُولیات سے بَچانے کو قُفْلِ مدینہ لگانا کہتے ہیں  ۔

 

 



Total Pages: 12

Go To