Book Name:Ganon Kay 35 Kufriya Ashaar

میں  نِکاح کیا تھا تو پھر سب کے سامنے توبہ و تجدیدِ ایمان و تجدیدِ نکاح کرنا ہوگا ۔  حدیث پاک میں   ہے :   رسولِ کریم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَنے ارشاد فرمایا :  ’’جب تم کوئی گناہ کرو تواس سے توبہ کرلو، اَلسِّرُّبِالسِّرِّ وَالْعَلَانِیَہُ بِالْعَلانِیَۃیعنی پوشیدہ گناہ کی توبہ پوشیدہ اورعَلانیہ گناہ کی توبہ عَلانیہ ۔ ‘‘(المعجم الکبیر للطبرانی ج۲۰ ص ۱۵۹ حدیث ۳۳۱ ، دار احیاء التراث العربی بیروت )

  اِحتِیاطی تجدیدِ ایمان کب کب کریں  ؟

             مَدَنی مشورہ ہے روزا نہ کم از کم ایک بار مَثَلاًسونے سے قَبل(یا جب چاہیں  ) اِحتیاطی توبہ و تجدیدِ ایمان کرلیجئے اور اگر بَآسانیگواہ دستیاب ہوں   تو میاں   بیوی توبہ کر کے گھر کے اندر ہی کبھی کبھی اِحتِیاطاًتجدیدِ نکاح کی ترکیب بھی کرلیا کریں   ۔ ماں  ، باپ ، بہن بھائی اور اَولاد وغیرہ عاقِل وبالِغ مسلمان مرد و عورت نِکاح کے گواہ بن سکتے ہیں    ۔ احتیاطی تجدیدِ نکاح بالکل مفت ہے اس کے لئے مَہر کی بھی ضَرورت نہیں   ۔



Total Pages: 9

Go To