Book Name:Ganon Kay 35 Kufriya Ashaar

میں   اپنا نُحُوستوں   بھرا اجتماع یعنی محفلِ موسیقی کا سلسلہ شروع کیا ۔  اب سامِعینِ داوٗد ی دو گروہوں   میں   مُنقَسِم ہو گئے ، سعادت مند حضرات حضرتِ سیِّدُنا داوٗدعَلٰی نَبِیِّناوَعَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلام  ہی کو سنتے جبکہ بدبخت افراد گانے باجوں   اور راگ رنگ کی محافل میں   شرکت کرکے اپنی آخرت خراب کرنے لگے ۔ ( ماخوذ از کشف المحجوب  ص۴۵۷ )

 کانوں   میں   پگھلا ہوا سیسہ ڈالا جائیگا

             میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو !دیکھا آپ نے !گانے باجے سننا سنانا شیطانی اَفعال ہیں  ، سعادت مندمسلمان ان چیزوں   کے قریب بھی نہیں   پھٹکتے  ۔

 گانوں   باجوں   سے بچنا بے حد ضروری ہے کہ اِس کا عذاب کسی سے بھی نہ سہا جاسکے گا ۔ حضرت سیِّدُنا اَنَس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُسے منقول ہے  : ’’ جو شخص کسی گانے والی کے پاس بیٹھ کر گانا سنتا ہے قِیامت کے دن اللّٰہعَزَّوَجَلَّاس کے کانوں   میں   پِگھلا ہوا سیسہ اُنڈیلے گا‘‘ ۔  (کنزُ العُمّال ج۱۵ ص۹۶حدیث۴۰۶۶۲دارالکتب العلمیۃ بیروت)

     بند ر  و خِنز یر

     عُمدَ ۃُالقاری میں  ہے ، مدینے کے تاجدار ، رسولوں   کے سالار‘ نبیو ں   کے سردار، مدینے کے تاجدار، بِاذنِ پروردگارغیبوں   پر خبردار، شَہَنشاہ ِاَبرا ر، ہم غریبوں   کے غمگسار، ہم بے کسوں   کے مدد گار، صاحبِ پسینۂ خوشبودار‘ شفیعِ روزِ شُمار، جناب احمدِ مختارصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا ارشادِ عبرت بنیاد ہے : آخِر زمانہ میں   میری امّت کی ایک قوم کو مَسْخْ کرکے بندر اورخِنزیر بنادیا جائے گا ۔  صحابۂ کرام عَلَيهِمُ الّرِضْوَاننے عرض کی : یارسولَ اﷲعَزَّوَجَلَّ  وصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ خواہ وہ اِس بات کی گواہی دیتے ہوں   کہ آپ اللّٰہعَزَّوَجَلَّ کے رسول صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ ہیں   اوراللّٰہعَزَّوَجَلَّ کے سوا کوئی عبادت کے لائق نہیں    ۔ فرمایا : ہاں   خواہ نَمازیں   پڑھتے ہوں  ، روزے رکھتے ہوں  ، حج کرتے ہوں ۔  عرض کی گئی :  ان کا جُرم کیا ہوگا ؟ فرمایا :  وہ عورَتوں   کا گانا سنیں   گے اور باجے بجائیں   گے اور شراب پئیں   گے اسی لَھْو و لَعِب (یعنی کھیل کود) میں   رات گزاریں   گے اور صبح کو بندر اور خِنزیر بنادیئے جائیں   گے ۔ (عُمدَ ۃُالقاری ج ۱۴ ، ص۵۹۳  دارالفکر بیروت)

سُرخ آندھیاں 

     حضرتِمولائے کائنات، علیُّ المُرتَضٰی شیرِ خدا  کَرَّمَ اﷲ ُ تعالٰی وَجْہَہُ الْکَرِیْم سے روایت ہے ، تاجدارِ رسالت، محبوبِ  رَبُّ الْعِزَّت عَزَّوَجَلَّ  و صَلَّی اللہ ُتَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسَلَّم کا فرمانِ عبرت نشان ہے : جب میری امّت پندرہ۱۵خصلتیں   اختیار کر لے گی تو اس پر آفتیں   اور بلائیں   نازل ہوں   گی عرض کی گئی : یا رسولَ اللہ عَزَّوَجَلَّ و صَلَّی اللہ تَعَالٰی علیہ واٰلہٖ وَسلَّم وہ کون سی خصلتیں   ہیں  ؟ فرمایا : {۱}جب مالِ غنیمت کو ذاتی دولت بنالیا جائے اور{۲} امانت کو مالِ غنیمت بنا لیا جائے اور{۳} زکوٰۃ کو جُرمانہ سمجھا جائے اور{۴} آدمی اپنی بیوی کی اطاعت کرے اور {۵} ماں   کی نافرمانی کر ے اور{۶} دوست کے ساتھ بھلائی کرے اور{۷} باپ کے ساتھ بے وفائی کرے اور{۸}مساجِد میں   آوازیں   بُلند کی جائیں  (یعنی مسجدوں   میں   دنیاوی باتوں   کاشور، لڑائیاں   جھگڑے ہونے لگیں    ۔ نعت خوانی ، ذکر اللہ کی مجلسیں   ، میلاد شریف ، ذکر کے حلقے تو حضور (عَلَیْہِ السَّلَام) کے زمانہ ہی میں   بھی مسجدوں   میں   ہوتے تھے ۔ (مراۃ المناجیح ج۷ص ۲۶۳، ضیاء القرآن  )) اور {۹} سب سے رَذیل( یعنی کمینہ ترین) شخص کو قوم کا سردار بنالیا جائے اور{۱۰} کسی شخص کے شَر سے بچنے کیلئے اُس کی عزت کی جائے اور {۱۱} شرابیں  پی جائیں   اور{۱۲} ریشم پہنا جائے اور {۱۳} گانے والیوں   اور{۱۴}آلاتِ مُوسیقی کو رکھا جائے اور {۱۵} اِس امّت کے بعد والے پہلوں   کو بُرا کہیں   ، اُس وقت  لوگوں   کو سُرخ آندھیوں   یا زلزلوں   یا زمین میں   دھنسنے یا چہروں   کے مسخ یا پتھر برسنے کا انتظار کرنا چاہیے ۔ (سنن الترمذی ج۴ ص۸۹ ۔ ۹۰، حدیث۲۲۱۷، ۲۲۱۸ دارالفکر بیروت )

        یاد رکھئے ! موسیقی والے گانے سننا گناہ ہے بلکہ کہیں   سے اس کی آواز آرہی ہوتو وہاں   سے ہٹ جانا اور نہ سننے کی بھر پور کوشش کرنا ضَروری ہے چُنانچِہ حضرتِ علّامہ شامی  قُدِّسَ سرُّہُ السّامی فر ما تے ہیں    : ’’ بانسری اور دیگر سازوں   کا سننا بھی حرام ہے اگر اچانک سُن لیا تو معذور ہے اور اس پر واجِب ہے کہ نہ سننے کی پوری کوشِش کرے ۔ ‘‘  ( رَدُّ المُحتار ج۹ ص۶۵۱ دارالمعرفۃ بیروت)

مُوسیقی کی آواز سے بچنا واجِب ہے

            حضرتِ سیِّدُنا علّامہ شامی رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِفرماتے ہیں  ، ’’ (لچکے توڑے کے ساتھ) ناچنا ، مذاق اُڑانا، تالی بجانا، سِتار کے تار بجانا، بَربَط، سارنگی ، رباب، بانسری ، قانون ، جھانجھن، بِگل بجانا ، مکروہِ تحریمی( یعنی قریب بہ حرام) ہے کیونکہ یہ سب کفّار کے شعار ہیں  ، نیز بانسری اور دیگر سازوں   کا سننا بھی حرام ہے اگر اچانک سُن لیا تو معذور ہے اور اس پر واجِب ہے کہ نہ سننے کی پوری کوشِش کرے ‘‘ ۔  (اَیضاً ص۶۵۱)

     مُوسیقی کی آواز آتی ہو تو ہٹ جائیے

     میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو ! جوں   ہی موسیقی کی آواز آئے تو ممکنہ صورت میں   فوراً کانوں   میں   اُنگلیاں   داخِل کرکے وہاں  سے دُور ہٹ جانا چاہئے ۔ اگر اُنگلیاں   تو کانوں   میں   ڈال دِیں   مگر وَہیں   کھڑے یا بیٹھے رہے یا معمولی سا پرے ہٹ گئے تو مُوسیقی کی آواز سے بچ نہیں   سکیں   گے ۔ اُنگلیاں   کانوں   میں   ڈال کر نہ سَہی مگر کسی طرح بھی مُوسیقی کی آواز سے بچنے کی بھرپور کوشش کرنا واجِب ہے ۔  اگر کوشش نہیں   کریں   گے تو ترکِ واجِب کاگناہ ہو گا ۔

    آہ !آہ !آہ ! اب تو سیاروں  ، طیّاروں  ، مکانوں  ، دُکانوں  ، ہوٹلوں  ، چوراہوں   اورگلیوں   بازاروں   میں   جس طرف بھی جائیے موسیقی کی دُھنِیں   سنائی دیتی ہیں   ۔ گانے جاری ہونے کی صورت میں   



Total Pages: 9

Go To