Book Name:Wudu kay Baray main Waswasay aur in ka Ilaj

پہلے اِ سے پڑھ لیجئے !

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَالصَّلٰوۃُ وَالسَّلامُ  عَلٰی سَیِّدِالْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط بسْمِ اللّٰہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ ط

            اَلْحَمْدُ لِلّٰہعَزَّوَجَلَّتبلیغِ قرآن وسنّت کی عالمگیر غیر سیاسی تحریک دعوتِ اِسلامی کے بانی، شیخِ طریقت، امیرِاہلسنّت، عاشقِ ماہِ نُبُوَّت ، آفتابِ قادِریت ، ماہتابِ رَضَویت ، نائبِ اعلیٰ حضرت، پابندِکتاب و سنّت، پیکرِعلم و حکمت، عارِفِ رُمُوزِ حقیقت، واقِفِ اَسرارِ معرفت، حامی ٔسنت، ماحی ٔبدعت ، مؤلِّفِ فیضانِ سنّت حضرت علاّمہ مولیٰنا ابوبلال  مُحمّد الیاس عطّار قادِری رَضَوی ضیائی دَامَت بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ نے اپنے مخصوص اندازمیں   سنّتوں   بھر ے بیانات اور علم و حکمت سے معمور’’مَدَ نی مُذا کرا ت‘‘ کے ذَرِیعے کچھ ہی عرصے میں   لاکھوں   مسلمانوں   کے دلوں   میں   مَدَنی اِنقِلاب برپا کردیاہے ، آپ دَامَت بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ کی صُحبت درحقیقت بہت بڑی نعمت ہے ، آپ دَامَت بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ کی صحبت سے فائدہ اُٹھاتے ہوئے کثیر اسلامی بھائی وقتاً فوقتاً مختلف مقامات پر ہونے والے  ’’مَدَنی مُذاکرات‘‘ میں   مختلف قسم کے مثلاًعقائدو اَعمال ، فضائِل و        مَنَاقِب ، شریعت و طریقت ، تاریخ وسیرت، سائنس وطِبّ ، اَخلاقیات و اِسلامی معلومات، معاشی و معاشرتی و تنظیمی معاملات اور دیگر بہت سے موضوعات کے متعلق سوالات کرتے ہیں   اورشیخِ طریقت امیرِاہلسنّت دَامَت بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ انہیں   حکمت آموزو عشقِ رسول   صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ میں   ڈوبے ہوئے جوابات سے نوازتے اورحسبِ عادت وقتاً فوقتاً  صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب! کی دِلنوازصدالگاکرحاضرین کو دُرُودشریف پڑھنے کی سعادت بھی عنایت فرماتے ہیں  ۔ امیراہلسنّت دَامَت بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ کے ان عطاکردہ دِلچسپ اورعلم و حکمت سے لبریز اِرشاداتِ عالیہ کے مَدَنی پھولوں   کی خوشبوؤں   سے دنیابھرکے مسلمانوں   کومہکانے کے مقدّس جذبے کے تحت ’’مَجلِس مَدَنی مُذاکرہ‘‘  ان مَدَنی مُذاکرات کوتحریری گلدستوں   کی صورت میں   پیش کرنے کی سعادت حاصل کررہی ہے  ۔

            میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!اِن ’’مَدَ نی مُذاکرات‘‘کے تحریری گلدستوں   کا مطالعہ کرنے سے اِن شَاء اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ عقائد و اعمال اور ظاہر و باطن کی اِصلاح ، محبت ِالٰہی عَزَّوَجَلَّ و عشقِ رسول صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی لازوال دولت کے ساتھ ساتھ نہ صِرْف شرعی ، طبّی، تاریخی اور تنظیمی معلومات کالاجواب خزانہ ہاتھ آئے گا بلکہ مزیدحُصُولِ عِلْمِ دین کا جذبہ بھی بیدار ہوگا ۔ اِنْ شَآئَ اللّٰہ  عَزَّوَجَلَّ{مَجلِس مَدَنی مُذاکَرہ}          

۱۵جُمادی الاولٰی  ۱۴۲۹ھ    /   ۲۱ مئی   ۲۰۰۸

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

وُضوکے بارے میں   وَسْوَسے اوراُن کا عِلاج

(مع دیگردِلچسپ سُوال جواب )

شیطان لاکھ سُستی دِلائے یہ رسالہ(48صفحات) مکمّل پڑھ لیجئے

اِنْ شَآءَ اللّٰہعَزَّوَجَلَّمعلومات کااَنمول خزانہ ہاتھ آئے گا ۔

دُرُود شریف کی فضیلت

            نُور کے پیکر، تمام نبیوں   کے سَرْوَر، دو جہاں   کے تاجْوَر، سُلطانِ بَحروبَرصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا  فرمانِ باقرینہ ہے : ’’تم جہاں   بھی ہومجھ پردُرُود پڑھو کہ تمہارا دُرُود مجھ تک پہنچتاہے ۔ ‘‘(المعجم الکبیر للطبرانی ج۳ص۸۲ حدیث۲۷۲۹ داراحیاء التراث العربی بیروت)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب !                                          صَلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی مُحَمَّد

بِسْمِ اللّٰہ شریف لکھنے کی فضیلت

سوال :             بِـسْـمِ الـلّٰـہِ الرَّحْمٰنِ الـرَّحِـیْـمپڑھنا بے شک ثواب کا کام ہے ، کیا اس کو لکھنے کی بھی کوئی فضیلت ہے ؟

جواب :            کیوں   نہیں  ، تفسیردُرِّ مَنْـثُور میں   ہے ، حضرتِ سیِّدُنا اَنَس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے رِوایت ہے کہ  اللّٰہ کے محبوب ، دانائے غُیُوب، مُنَزَّہٌ عَنِ الْعُیُوبعَزَّوَجَلَّوَصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا : ’’جس نے اﷲعَزَّوَجَلَّ کی تعظیم کیلئے عُمدہ شکل میں  بِـسْـمِ الـلّٰـہِ الرَّحْمٰنِ الـرَّحِـیْـمکو تحریرکیا، اﷲعَزَّوَجَلَّ اُسے بخش دے گا ۔  ‘ (اَلدُّرُّالْمَنْثُوْرج۱ص۲۷دار الفکر بیروت ) 

بسم اللہ شریف کو عمدہ شکل میں   لکھنے کا طریقہ

اِمام قا ضی ابوالفضل عیا ض مالکی عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہ ِالْقَوِی  ’’شفا ء شریف ‘‘میں   فرماتے ہیں    : ’’باوُجُود اس کے کہ حضورنبی کریم رءوف رحیم  عَلَيْهِ أَفْضَلُ الصَّلاةِ وَالتَّسْلِيْملکھتے نہ تھے مگر آپ   صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کو ہر چیز کا علم عطا ہوا تھا یہاں   تک کہ اس بارے میں   احادیث مبارکہ وارد ہیں   کہ حضور پُرنور  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کتابت کے حروف پہچانتے تھے اور یہ بھی جانتے تھے کہ کس طرح لکھے جا ئیں   تو خو بصورت ہوں   گے ، جیساکہ حضرتِ سیّدنا ابن شعبان رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ نے ایک حدیث پاک حضرت سیّدنا عبد اللہ ابن عباس شعبان رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُمَاسے روا یت کی کہ نبی اکرم، نورمجسم، شاہِ بنی آدم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا : ’’ بِسْمِ اللّٰہ کودراز کرکے نہ لکھو ۔ ‘‘(یعنی سین میں   دندانے ہوں  ، صرف درازنہ ہو)

دوسری حدیث میں   حضرتِ سیّدُنا امیر معا ویہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے مروی ہے کہ وہ حضورپُرنور، شافِعِ یومُ النُّشور   صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کے سا منے لکھ رہے تھے کہ آپ  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے ان سے فرمایا : ’’ دوات کی روشنائی کو درست رکھو، قلم پر ترچھا قط لگاؤ ، بِسْمِ اللّٰہ کی ب کھڑی لکھو، س کے دندا نے جدا رکھو، م کو اندھا نہ کرو (یعنی اس کے



Total Pages: 8

Go To