Book Name:Sharah Shajra Shareef

آفرین کے سِپُرد کر دی۔ (الملفوظ حصہ چہارم صفحہ ۳۸۹)

اللّٰہ عَزّوَجَلَّ کی  اُن پَر رَحمت ہو اور ان کے صد قے ہماری مغفِرت ہو

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !     صلَّی اللّٰہُ تعالٰی عَلٰی محمَّد

حکمِ قراٰنی

اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ   قرآن پاک میں ارشاد فرماتا ہے :  

یَوْمَ نَدْعُوْا كُلَّ اُنَاسٍۭ بِاِمَامِهِمْۚ    (پ۱۵ ، بنی اسرائیل : ۷۱)

ترجمۂ کنزالایمان :  جس دن ہم ہر جماعت کو اس کے امام کے ساتھ بلائیں گے۔

        تفسیرنورُ العِرفان میں حکیم الامت مفتی احمد یا ر خان نعیمی علیہ رحمۃ اللہ  الغنی اس آیتِ مبارَکہ کے تحت لکھتے ہیں : ’’ اس سے معلوم ہوا کہ دنیا میں کسی صالح کو اپنا امام بنالیناچاہیئے شریعت میں  ’’تقلید‘‘ کرکے ، اور طریقت میں ’’بَیْعَت‘‘کرکے ، تاکہ حَشْر اچھوں کے ساتھ ہو۔ اگر صالح امام نہ ہوگا تو اس کا امام شیطان ہوگا۔ اس آیت میں تقلید، بَیْعَت اور مُریدی سب کا ثبوت ہے۔‘‘

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !      صلَّی اللّٰہُ تعالٰی عَلٰی محمَّد   

بیعت کی 4شرائط

        میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!یاد رکھئے کہ کسی کو اپنا پیر بنانے کے لئے 4 شرائط کا لحاظ انتہائی ضروری ہے۔چنانچہ امامِ اہلِسنّت، مجددِ دین وملت الشاہ مولانا احمد رضاخان علیہ رحمۃ الرحمن فتاویٰ رضویہ جلد21صفحہ 603پر پیر کی شرائط کچھ یوں تحریر فرماتے ہیں :

        (۱)صحیح العقیدہ سنّی ہو۔(۲تنا علم رکھتا ہو کہ اپنی ضروریات کے مسائل کتابوں سے نکال سکے ۔(۳)فاسقِ مُعلِن نہ ہو(ایک بار گناہِ کبیرہ کرنے والا یا گناہ صغیرہ پر اصرار کرنے والا فاسق ہوتا ہے اور اگر علی الاعلان کرے تو فاسق ِ معلن ہے ۔)(۴)اس کا سلسلۂ بیعت نبی کریم صَلَّی اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ تک متّصل (یعنی ملاہوا) ہو ۔

مدینہ :  بیعت اور طریقت کے متعلق تفصیلی معلومات کے لئے المدینۃ العلمیۃ کی پیش کردہ کتاب’’آدابِ مُرشِدِ کامل ‘‘مطبوعہ مکتبۃ المدینہ کا مطالعہ کیجئے ۔

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !     صلَّی اللّٰہُ تعالٰی عَلٰی محمَّد

فیضانِ امیرِ اہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ

        میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ  نے ہردور میں امّت ِ محبوب علی صاحبھا الصلوۃ والتسلیم کو ایسی نابغہ روزگار ہستیاں عطا فرمائیں جنہوں نے نہ صرف خُود اَمْرٌ بِالْمَعْرُوْفِ وَنَہْیٌ عَنِ الْمُنْکَر (یعنی نیکی کا حکم اور برائی سے منع کرنے)کا مقدَّس فریضہ بطریقِ احسن انجام دیا بلکہ مسلمانوں کو اپنی اور ساری دنیا کے لوگوں کی اصلاح کی کوشش کرنے کا ذہن دیا ۔ اُنہی میں ایک ہستی شیخِ طریقت، امیرِ اَہلسنّت حضرت علّامہ مولانا ابوبلال محمد الیاس عطارقادِری  رَضَوی دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہبھی ہیں جنہوں نے آج سے تقریباپچیس سال قبل۱۴۰۱ھبمطابق1981ء میں بابُ المدینہ کراچی میں تبلیغِ قرآن وسنّت کی عالمگیر غیرسیاسی تحریک’دعوتِ اسلامی‘‘ کے مَدَنی کام کا آغازاپنے چند رُفَقاء کے ساتھ کیا ۔آپ دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ نے اِس مَدَنی تحریک ’’دعوتِ اسلامی‘‘کے ذریعے لاکھوں مسلمانوں بالخصوص نوجوان اسلامی بھائیوں اور بہنوں کی زندگیوں میں مَدَنی انقلاب برپا کردیا، کئی بگڑے ہوئے نوجوان توبہ کر کے راہِ راست پر آگئے ، بے نمازی نہ صرفنمازی بلکہ نَمازیں پڑھانے والے (یعنی اِمام مسجد)بن گئے، ماں باپ سے نازیبا رویّہ اختیار کرنے والے باادب ہوگئے ، کفر کے اندھیروں میں بھٹکنے والوں کو نورِ اسلام نصیب ہوا، یورپی ممالک کی رنگینیوں کو دیکھنے کے خواہش مند کعبَۃُ الْمُشَرَّفہ  وگنبدِخَضرٰیکی زیارت کے لئے بے قرار رہنے لگے ، فکرِ آخِرت کی مَدَنی سوچ کے حامِل بن گئے ، فُحش رَسائل وڈائجسٹ کے شائقین عُلَمائے اَہلسنّت دَامَتْ فُیُوْضُھُم کے رسائل اور دیگر دینی کتب کا مطالَعہ کر نے لگے ، تفریح کی خاطرسفرکے عادی عاشقانِ رسول کے ہمراہ راہِ خدا عَزَّوَجَلَّمیں سفر کرنے والے بن گئے اور ’’کھاؤ، پیو اور جان بناؤ‘‘کے نعرے کو مقصدِ حیات سمجھنے والوں نے اس مَدَنی مقصد کو اپنا لیا کہ(ان شآء اللّٰہ  عَزَّوَجَلَّ) ’’مجھے اپنی اور ساری دنیا کے لوگوں کی اصلاح کی کوشش کرنی ہے۔  ‘‘  اَلْحَمْدُلِلّٰہِ  عَزَّوَجَلَّ  دعوت ِ اسلامی کا مَدَنی پیغام( تادمِ تحریر) َدنیا کے کم وبیش66 مُمالک میں پہنچ چکا ہے ۔

        اس عظیم الشان تحریک کے بانی حضرت علامہ مولانا محمد الیاس عطّار قادری رضوی دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ خوفِ خداعزوجل وعشق رسول صَلَّی اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ، جذبۂ اتباع ِقرآن وسنّت ، جذبہ احیاءِ سنّت، زہدوتقویٰ، عفو ودرگزر، صبروشکر، عاجزی وانکساری، سادگی ، اخلاص، حسنِ اخلاق، جود وسخا، دنیاسے بے رغبتی، حفاظتِ ایمان کی فکر ، فروغ ِعلم دین ، خیر خواہیٔ مسلمین جیسی صفات میں یادگارِ اسلاف ہیں ۔

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !          صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

سلسلہ عالیہ قادریہ رضویہ ضیا ئیہ عطّاریہ

        اَلْحَمْدُلِلّٰہِ   عَزَّ وَجَلَّ  شیخِ طریقت امیرِ اَہلسنّت بانیٔ دعوتِ اسلامی حضرت علّامہ مولانا ابوبلالمحمد الیاس عطار قادری رَضوی  دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ سلسلہ عالیہ قادریہ رضویہ ضیائیہ عطاریہ میں مُرید کرتے ہیں اورقادری سلسلے کی عظمت کے توکیاکہنے کہ اس کے عظیم پیشوا حضور سیدنا غوث الاعظم رَحْمَۃُ اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِقیامت تک کے لئے (بفضل ِ خدا عَزَّوَجَلَّ)اپنے مریدوں کے توبہ پر مرنے کے ضامن ہیں ۔(بہجۃ الاسرار، ص۱۹۱، مطبوعۃ دارالکتب العلمیۃ بیروت)

        امیر اہلسنّت  دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہنے قطب ِمدینہ خلیفۂ اعلیٰ حضرت حضرت سیدنا ضیاء الدین مدنی علیہ رحمۃ اللہ  الغنی سے بیعت کی اورآپعلیہ رحمۃ اللہ  الغنی  کے ہی خلیفہ حضرت



Total Pages: 64

Go To