Book Name:Aulad kay Huqooq

المصارف ، ج۱، ص۱۸۷)

اِن کی تفصیل

    فقیر :          وہ ہے کہ(الف) جس کے پاس کچھ نہ کچھ ہو مگر اتنا نہ ہوکہ نِصاب کو پَہنچ جائے (ب)یانِصاب کی قَدَر توہو مگر اس کی حاجتِ اَصلِیَّہ (یعنی ضَروریاتِ زندَگی ) میں مُسْتَغْرَق(گِھراہوا ) ہو ۔مَثَلاً رہنے کا مکان، خانہ داری کا سامان، سُواری کے جانور( یا اسکوٹر یا کار) کاریگروں کے اَوزار، پہننے کے کپڑے ، خِدمت کیلئے لونڈی ، غلام، عِلمی شُغْل رکھنے والے کے لیے اسلامی کتابیں جو اس کی ضَرورت سے زائد نہ ہوں (ج) اِسی طرح اگر مَدیُون ( مَقروض ) ہے اور دَین ( قَرضہ ) نکالنے کے بعد نِصاب باقی نہ رہے تو فقیر ہے اگر چہِ اس کے پاس ایک تو کیا کئی نِصابیں ہوں۔ (رَدُّالْمُحتَارج۳ص۳۳۳، بہارشریعت، ج۱، مسئلہ نمبر۲، حصہ ۵ ص۹۲۴  )

 مِسکین :    وہ ہے جس کے پاس کچھ نہ ہو یہاں تک کہ کھانے اور بدن چُھپانے کیلئے اِس کامُحتاج ہے کہ لوگوں سے سُوال کرے اور اسے سُوال حلال ہے ۔ فقیر کو ( یعنی جس کے پاس کم از کم ایک دن کا کھانے کیلئے اور پہننے کیلئے موجود ہے ) بِغیر ضَرورت و مجبوری سُوال حرام ہے ۔(الفتاوٰی الھندیۃ، کتاب الزکوٰۃ، الباب السابع فی المصارف ، ج۱، ص۱۸۷)

عامِل :       وہ ہے جسے بادشاہِ اسلام نے زکوٰۃ اور عشر وصول کرنے کے لئے مقرر کیا ہو۔ (الفتاوی الھندیۃ، کتاب الزکوٰۃ، الباب السابع فی المصارف ، ج۱، ص۱۸۸)

نوٹ :  صدر الشریعہ بدرالطریقہ مفتی محمد امجد علی اعظمی عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ القَوِی بہارِ شریعت میں فرماتے ہیں کہ’’عامل اگرچہ غنی ہو اپنے کام کی اجرت لے سکتا ہے اور ہاشمی ہوتو اس کو مال زکوٰۃ میں سے دینا بھی ناجائز اور اسے لینا بھی ناجائز ، ہاں اگر کسی اور مَد(یعنی ضمن) میں دیں تو لینے میں حرج نہیں۔(بہارِ شریعت، ج۱، مسئلہ نمبر۶، حصہ ۵، ص۹۲۵)

رِقاب    سے مراد مکاتب ہے ۔ مکاتب اس غلام کو کہتے ہیں جس سے اس کے آقا نے اس کی آزادی کے لئے کچھ قیمت ادا کرنا طے کی ہو ، فی زمانہ رقاب موجود نہیں ہیں۔

غارِم  :      اس سے مراد مقروض ہے یعنی اس پر اتنا قرض ہو کہ دینے کے بعد زکوٰۃ کا نصاب باقی نہ رہے اگرچہ اس کا بھی دوسروں پر قرض باقی ہو مگر لینے پر قدرت نہ رکھتا ہو ۔(الدرالمختارمع ردالمحتار، کتاب الزکوٰۃ ، باب المصرف ، ج۳، ص۳۳۹)

فِی سَبِیلِ اللہ :       یعنی راہِ خداعَزَّوَجَلَّ  میں خرچ کرنا ۔اس کی چند صورتیں ہیں  :

          (۱) کوئی شخص محتاج ہے اور جہاد میں جانا چاہتا ہے مگر اس کے پاس سواری اور زادِ راہ نہیں ہیں تو اسے مالِ زکوٰۃ دے سکتے ہیں کہ یہ راہِ خداعَزَّوَجَلَّ  میں دینا ہے اگرچہ وہ کمانے پر قادر ہو ۔

          (۲) کوئی حج کے لئے جانا چاہتا ہے اور اس کے پاس زادِ راہ نہیں ہے تو اسے بھی زکوٰۃ دے سکتے ہیں لیکن اسے حج کے لئے لوگوں سے سوال کرنا جائز نہیں ہے ۔

          (۳) طالبِ علم کہ علمِ دین پڑھتا ہے یا پڑھنا چاہتا ہے اس کو بھی زکوٰۃ دے سکتے ہیں بلکہ طالب ِ علم سوال کر کے بھی مال ِ زکوٰۃ لے سکتا ہے جبکہ اُس نے اپنے آپ کو اسی کام کے لیے فارغ کر رکھا ہو ، اگرچہ وہ کمانے پر قدرت رکھتا ہو ۔

          (۴) اسی طرح ہر نیک کام میں مالِ زکوٰۃ استعمال کرنا بھی فی سبیل اللہ یعنی راہِ خداعَزَّوَجَلَّ  میں خرچ کرنا ہے ۔مال ِ زکوٰۃ میں دوسرے کو مالک بنادینا ضروری ہے بغیر مالک کئے زکوٰۃ ادا نہیں ہوسکتی۔(الدرالمختار و رد المحتار، کتاب الزکوٰۃ ، باب المصرف ، ج۳، ص۳۳۵، ۳۴۰، بہارِشریعت، ج۱، مسئلہ نمبر۱۴، حصہ ۵، ص۹۲۶، ملخصاً)

ابن سبیل  :    یعنی وہ مسافر جس کے پاس سفر کی حالت میں مال نہ رہا، یہ زکوٰۃ لے سکتا ہے اگرچہ اس کے گھر میں مال موجود ہو مگر اسی قدر لے کہ اس کی ضرورت پوری ہوجائے ، زیادہ کی اجازت نہیں اور اگر اسے قرض مل سکتا ہو تو بہتر ہے کہ قرض لے لے ۔(الفتاویٰ الھندیۃ، کتاب الزکوٰۃ، الباب السابع فی المصارف، ج۱، ص۱۸۸)

 



Total Pages: 8

Go To