Book Name:Faizane-Shaban

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

فیضانِ شعبان

دُعائے عطار : یاربَّ المصطفےٰ!جوکوئی 17صفحات کارِسالہ ’’فیضانِ شعبان‘‘پڑھ یا سُن لے اُسے اپنے پیارے پیارے آخری نبی محمدِ عربی  صَلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم  کے پیارے مہینے شعبان المعظم میں خوب عبادت کرنے کی توفیق عطافرما اوراُس کو بے حساب  بخش دے۔  اٰمِین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین  صَلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم

درود شریف کی فضیلت

                             اَہلِ بیت اطہار کےروشن چراغ ، حضرتِ امام جعفرصادق رَحمۃُ اللّٰہِ  علیہ  نےفرمایا : جو کوئی شعبانُ المعظم میں روزانہ سات سو(700)مرتبہ دُرودِ پاک پڑھے گا ، اللہکریم کچھ فرشتے مقرَّر فرما دےگا جو اِس دُرودِ پاک کو رسولُالله  صلّی اللّٰہُ علیہ والہ وسلَّم کی بارگاہ میں پہنچائیں گے ، اِس سے رسولُالله  صلّی اللّٰہُ علیہ والہ وسلَّم کی رُوحِ مُبارک خوش ہوگی پھر اللہ پاک اُن فرشتوں کو حکم دے گا کہ اِس دُرُود پڑھنے والے کے لئے قیامت تک دُعائے مغفرت کرتے رہو۔ ( القول البدیع ، ص395)

دُنیا و آخرت میں جب میں رہوں سلامت

پیارے پڑھوں نہ کیونکر تم پر سَلام ہر دَم

                             صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                                                                  صَلَّی اللّٰہُ عَلٰی مُحَمَّد

               پیارے اسلامی بھائیو!  ہمیں بھی چاہئے کہ اس ماہِ مبارک  میں پیارے آقا ، مکی مدنی مُصْطَفٰے  صلّی اللّٰہُ علیہ والہ وسلَّم  پر خُوب دُرودِ پاک پڑھیں کہ  شعبانُ المعظم درودِ پاک پڑھنے کا مہینا ہے جیسا کہ شارحِ بخاری حضرتِ علّامہ احمد بن محمد قَسْطَلانی  رَحمۃُ اللّٰہِ  علیہ اور انہی کے حوالے سے حضرت سیِّدُنا شیخ شِہابُ الدین احمدبن حجازی رَحمۃُ اللّٰہِ  علیہ لکھتے ہیں : بیشک شعبان نبیِّ پاک  صلّی اللّٰہُ علیہ والہ وسلَّم  پردرود شریف پڑھنے کا مہینا ہےکہ آیتِ دروداِسی مہینے میں نازل ہوئی۔ (مواهب اللدنية ، 2 / 506۔ تحفۃ الاخوان ، ص53)

                             آیتِ دُرود یہ ہے :

اِنَّ اللّٰهَ وَ مَلٰٓىٕكَتَهٗ یُصَلُّوْنَ عَلَى النَّبِیِّؕ-یٰۤاَیُّهَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا صَلُّوْا عَلَیْهِ وَ سَلِّمُوْا تَسْلِیْمًا(۵۶)

ترجمہ کنزالایمان : بےشکاللہاور اس کے فرشتے درود بھیجتے ہیں اس غیب بتانے والے (نبی) پر اے ایمان والو ان پر درود اور خوب سلام بھیجو۔

                                                وہ سلامت رہا قِیامت میں                                                                                                           پڑھ لئے جس نے دل سے چار سلام

میرے پیارے پہ میرے آقا پر                                                                                                 میری جانب سے لاکھ بار سلام

میری بگڑی بنانے والے پر                                                                                                                    بھیج اے میرے کِردگار سلام

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                                                                                               صَلَّی اللّٰہُ عَلٰی مُحَمَّد

چانددیکھناواجب ہے

اے عاشقانِ رسول!شعبانُ المعظم اسلامی سال کا ’’آٹھواں مہینا‘‘ہے جو رجَبُ المرجَّب  اور رمضانُ المبارک کے درمیان میں ہے۔ یہ اُن پانچ مہینوں میں سے پہلا مہینا ہے جن کا چاند دیکھنا واجب کفایَہ ہے ، پانچ مہینے یہ ہیں : (1)شعبان المعظم (2)رمضانُ المبارک (3)شوال المکرم(4)ذوالقعدۃ الحرام اور(5)ذوالحجۃ الحرام۔

شعبان المعظم کے نام کی حکمتیں

                                                 (1)شعبان ، شِعْبٌ سےبنا ہے جس کے معنی ہیں گھاٹی ۔ چونکہ اس مہینے میں خیرو برکت کا عُمومی نُزول ہوتا ہے ، اِس لئے اسے شعبان کہا جاتا ہے ، جس طرح گھاٹی پہاڑ کا راستہ ہوتی ہے اسی طرح یہ مہینا خیرو برکت کا راستہ  ہے۔ ( مکاشفۃ القلوب ، 303)

(2)رسولُالله  صَلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم نےارشادفرمایا : اِنَّمَا سُمِّىَ شَعْبَانُ لِاَنَّهٗ يَنْشَعِبُ فِيْهِ خَيْرٌ كَثِيْرٌ لِّلصَّائمِ  فِيْهِ حَتّٰى يَدْخُلَ الْجَنَّة ، یعنی  اس مہینے کو “ شعبان “ اِس لئے کہا جاتا ہے کہ اس میں روزہ رکھنے والے کے لئے بہت سی بھلائیاں(شاخوں کی طرح)پھوٹتی ہیں ، یہاں تک کہ وہ جنت میں جاپہنچتا ہے ۔ ( التدوین فی اخبار قزوین ، 1 / 153)

حضرتِ امام رافعی  رَحمۃُ اللّٰہِ  علیہ فرماتے ہیں : اس حدیثِ پاک کامطلب یہ ہے کہ ماہِ شعبان میں مسلمان ذکر و اذکار ، نیکیوں اور قرآنِ پاک کی تلاوت کی طرف مائل ہو جاتے ہیں اور رمضانُ المبارک کے لئے تیاری کرتے ہیں۔ ( التدوین فی اخبار قزوین ، 1 / 153) اورشعبان المعظم میں رمضانُ المبارک کے روزوں کی فرضیت کا حکم نازل ہوا۔     ( حدائق الاولیاء ، 2 / 592)

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                                                                                               صَلَّی اللّٰہُ عَلٰی مُحَمَّد

ماہِ شعبان  میں استقبالِ رمضان کی تیاری

                             پیارےاسلامی بھائیو!شعبان کا مہینا چونکہ رمضان سے پہلے آتا ہے لہٰذا جس طرح ماہِ رمضان میں روزے اور تلاوتِ قرآن کا حکم ہے اسی طرح ماہِ شعبان میں بھی اس کی بڑی اہمیت ہے کہ روزے رکھے جائیں اورتلاوتِ قرآن کی جائےتاکہ استقبالِ رمضان کی تیّاری ہوجائے اور نفس کو عبادات  کی عادت ہوجائے۔

 



Total Pages: 6

Go To