Book Name:Saya e Arsh Kis Kis ko Milay ga?

وَزِدْمَعَ ضِعْفِ سَبْعَتَیْنِ اِعَانَۃٌ                                                                                                                             لِاَخْرَقَ مَعْ اَخْذٍلِحَقٍ وَبَذْلِہٖ

وَکُرْہُ وُضُوْئٍ ثُمَّ مَشْیٌ لِمَسْجِدٍ                                                                                                                              وَتَحْسِیْنُ خُلْقٍ ثُمَّ مَطْعَمُ فَضْلِہٖ

وَکَافِلُ ذِیْ یُتَمٍ وَاَرْمِلَۃٍوَھَتْ                                                                                                                                     وَتَاجُرُصِدْقٍ فِی الْمَقَالِ وَفِعْلِہٖ

وَحُزْنٌ وَتَصْبِیْرٌوَنُصْحٌ وَرَأْفَۃٌ                                                                                                                                          تَرْبَعُ بِھَاالسَّبْعَاتُ فِیْ فَیْضِ فَضْلِہٖ

ترجمہ : (۱)…سایۂ عرش پانے والے مزیدچودہ افرادیہ ہیں  ۱؎   ناسمجھ کو حق دلا کر اس کی مدد کرنا اور ۲؎ سوالی کو عطاکرنا ۔

(۲)…۳؎دشواری میں وضو کرنا۴؎مسجد کی طرف چلنا ۵؎خوش اخلاقی سے پیش آنااور ۶؎بھوکے کو کھاناکھلانا ۔

(۳)…۷؎یتیم اور۸؎   بیوہ کی کفالت کرنے والا۹؎ ا پنی جوانی کوعبادتِ الٰہی  عَزَّوَجَلَّمیں فنا کرنے والااور۱۰؎ قول وفعل میں سچاتاجر ۔

(۴)…۱۱؎غمزدہ۱۲؎بچے کے فوت ہونے پرصبرکرنے والی۱۳؎ بادشاہ کونصیحت کرنے والااور ۱۴؎ لوگوں پرنرمی کرنے والا، پس (ماقبل سے مل کر)فضلِ الٰہی    عَزَّوَجَلَّپانے والے یہ سات کے چار گنا ( یعنی اٹھائیس) ہوگئے ہیں ۔

               (علامہ سیوطی عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہ ِالْقَوِی  فرماتے ہیں )میں کہتا ہوں ’’حضرت شیخ الاسلام عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ السَّلَام نے اُم المؤمنین حضرتسیِّدَتُناعائشہ صدیقہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہاکی بیان کردہ حدیث پاک میں موجودایک خصلت کی طرف توجہ نہیں فرمائی (یعنی اشعارمیں ذکرنہ کیا) اوروہ یہ ہے کہ’’ وہ جولوگوں کے حق میں اس طرح فیصلہ کرتے ہیں جیسا اپنے حق میں فیصلہ کرتے ہیں ۔ ‘‘عنقریب اس کاذکر بھی میرے اشعار میں آئے گا ۔ ‘‘

مُصنّف رَحْمَۃُ اللہِ  عَلَیْہِپرظا ہر ہونے والے خصائل کابیان

            (علامہ سیوطی عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہ ِالْقَوِی  فرماتے ہیں )یہاں پران خصائل کوبیان کیاجائے گاجو مجھ پر ظاہر ہوئے ہیں ۔ چنانچہ،

            حضرت سیِّدُنا اَنَس بن مالک رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ سے مروی ہے کہ سرکارِ والا تَبار، ہم بے کسوں کے مددگار، شفیعِ روزِ شُمار، دو عالَم کے مالک و مختار، حبیبِ پروردگار عَزَّوَجَلَّ وصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم کافرمانِ ذیشان ہے  : ’’تین اشخاص بروز قیامت عرش کے سائے میں ہوں گے جس دن اس کے علاوہ کوئی سایہ نہ ہو گا ۔ (۱)صلہ رحمی کرنے والاکہ اللہ عَزَّوَجَلَّ اس کے رزق میں اضافہ فرماتاہے اور اس کی عمر کو لمبا کرتا ہے (۲)وہ عورت جس کا شوہر فوت ہوگیا اوراس نے صرف یتیم بچے چھوڑے تو وہ  عورت کہے کہ’’ میں دوسرا نکاح نہیں کروں گی بس اپنے یتیم بچوں کی نگہبانی کروں گی یہاں تک کہ ان کا انتقال ہوجائے یاپھراللہ عَزَّوَجَلَّ ان کو غنی کردے اور(۳)وہ بندہ جس نے کھانا تیار کیاپس اپنے مہمان کی ضیافت کی اوراس میں خوب اچھی طرح خرچ کیا پھر یتیم اور مسکین کو بلایا اور انھیں اللہ عَزَّوَجَلَّ کی رضا کے لئے کھلایا ۔ ‘‘(فردوس الاخبار ، باب الثاء ، الحدیث ۲۳۴۹، ج۱، ص ۳۲۲)

ایک روایت میں یوں ہے کہ ’’اپنے رشتہ داروں سے صلہ رحمی کرنے اور ان پر شفقت کرنے والااور وہ شخص جس نے بہت اچھا کھانا تیار کیا اور فقراء ومساکین کو بلایااور انھیں اللہ عَزَّوَجَلَّ کی رضا کے لئے کھلایا ۔ ‘‘

اللہ عَزَّوَجَلَّ ہروقت ساتھ ہے :

            حضرت سیِّدُناابوامامہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ سے روایت ہے کہ تاجدارِ رِسالت، شہنشاہِ نُبوت، مَخْزنِ جودوسخاوت، پیکرِعظمت و شرافت، مَحبوبِ رَبُّ العزت، محسنِ انسانیت عَزَّوَجَلَّ وصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم کافرمانِ عالیشان ہے  : ’’تین شخص قیامت کے دن اللہ عَزَّوَجَلَّ کے سایۂ رحمت میں ہوں گے (۱)وہ شخص جس نے کہیں بھی توجہ کی تویہ یقین رکھاکہ اللہ عَزَّوَجَلَّ  اس کے ساتھ ہے (۲) وہ شخص جسے کوئی عورت اپنی طرف دعوتِ گناہ دے تووہ اللہ عَزَّوَجَلَّ کے خوف کے باعث اس سے بازرہے (۳)وہ شخص جو لوگوں سے اللہ عَزَّوَجَلَّ کے لئے محبت کرتا ہے ۔ ‘‘(فردوس الاخبار، باب الثائ، الحدیث۲۳۵۰، ج۱، ص۳۲۲)

صاف دل اورپاک کمائی :

            حضرت سیِّدُنا فضالہ بن عبید رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ سے روایت ہے کہ حضرت سیِّدُنا داؤد عَلٰی نَبِیِّناوَعَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلام نے بارگاہ ربُّ العزّت میں عرض کی : ’’اے میرے رب عَزَّوَجَلََّّ !مجھے اپنی مخلوق میں سے اپنے محبوب بندوں کے بارے میں خبر دے تاکہ میں اُن سے تیری خاطرمحبت کروں ۔ ‘‘اللہ عَزَّوَجَلَّنے



Total Pages: 67

Go To