Book Name:Jannat ki Tayyari

سُنّی عالم(یا اِمام مسجد، مؤذن، خادِم)کو ۱۱۲ روپے یا کم از کم ۱۲ روپے تحفۃً  پیش کئے؟(نابالغ اپنی ذاتی رقم سے نہیں دے سکتا)

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

       برکاتِ امیرِ اہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ

       میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!امیر ِاہلسنّت ، پیکرِ علم و حکمت، عالمِ شریعت، شیخِ طریقت ، آفتابِ قادریت، ماہتابِ رضویت ، صاحبِ خوف و خشیت ، عاشقِ اعلیٰ حضرت، امیر ِملت ، مُصَنّفِ فیضانِ سُنت، بانیِ دعوت ِاسلامی حضرتِ علامہ مولاناابو بلال محمد الیاس عطارؔ قادری رضوی ضیائی دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ  کی برکتوں سے کون واقف نہیں ، نہ جانے کتنوں کی زندگیوں میں آپ کی برکت سے مَدَنی اِنقلاب برپا ہوا۔ اَلْحَمْدُلِلّٰہِ عَزَّ وَجَلَّ   مئے حُبِ دُنیا کی مستی میں سرشار ، فکرِ آخرت میں بیقرار ہو گئے۔ ہر وقت مال و دولت کو بڑھانے کے سُہانے سپنے دیکھنے والے بارگاہِ ربُّ العزت جَلَّ جَلَالُہٗ سے عشقِ رسو ل صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی لازوال دولت کی دُعائیں مانگنے لگے۔ نفس و شیطان کے بہکاوے میں آ کر زکوٰ ۃ و عُشر کی ادائیگی میں بُخل و کنجوسی کرنے والے ، بخو شی زکوٰ ۃ و عُشر ادا کرنے اور غریبوں ، مسکینوں ، رشتہ داروں کو نوازنے کے ساتھ ساتھ اپنا مال مساجد، جامعات و مدارس کی تعمیر اور دعوتِ اسلامی کے مدنی کاموں کے لئے دِل کھول کر راہِ خدا  عَزَّ وَجَلَّ  میں خرچ کرنے لگے۔ لند ن و پیرِس جانے کے آرزو مند، مکہ و مدینہ کی زیارت کی حسرت میں تڑپنے لگے۔بے دَھڑک ہر وقت قہقہے لگانے والے، خوفِ خدا و عشقِ مصطفی    عَزَّ وَجَلَّ   وَصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ میں آنسو بہانے لگے۔صرف دُنیوی تعلیم کی بڑی بڑی ڈِگریوں کے لیے بیقرار و دِلفگار، ذاتی مطالعہ، عاشقانِ رسول کے ساتھ مدنی قافلوں میں سفر، سُنّتوں بھرے اِجتماعات میں شرکت اور دعوتِ اسلامی کے جامعاتُ المدینہ کے ذریعے اُخروی اور دِینی علوم کے طلبگا ر بننے لگے۔ ناول، ڈائجسٹ اوراَخلاق کو بِگاڑنے والی اُلٹی سیدھی رُومانی کہانیاں اور اَفسانے پڑھنے والے ، ’’فیضانِ سُنّت‘‘، ’’رسائلِ عطاریہ‘‘، ’’بہارِ شریعت‘‘، ’’فتاویٰ رضویہ‘‘ اور ’’کنزالایمان‘‘ سے بمع ترجمہ و تفسیر تلاوت کرنے لگے۔ ہر وقت گانے گُنگنانے والے ، نعتِ مصطفی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  سے لب ہِلانے لگے، دُنیوی مَفادات اور گندی ذِہنیّت کے ساتھ دوستیاں کرنے والے ، اچھی اچھی نِیّات کے ساتھ ہر ایک پر نیکی کی خاطر اِنفرادی کوشش کرنے لگے۔با ت بات پر جھگڑا کرنے ، خون بہانے اور رشتہ داریاں کاٹنے والے ، پیشگی مُعاف او رصُلْح میں پہل کرنے لگے ۔نا محرم اَجنبی عورتوں سے ہنسی مذاق اوربے تکلّفی کرنے والے، شرعی پردے کی سعادت پانے لگے، تفریح گاہوں اور مختلف شہروں کی فضول سیر وسیاحت کے شوقین مدنی قافلوں کے مسافر بننے لگے ۔ماں باپ کا دِل دُکھانے والے ، خدمتِ والدین اور ان کی دَست و پا بوسی کی برکات پانے لگے۔یہو دو نصارٰی کی نقل کرنیوالے نادان اِتّباعِ سُنّتِ مصطفی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  میں چہروں پر داڑھی، بدن پر مدنی لِباس ، سر پر زُلفیں او رعِمامہ شریف کا مدنی تاج سجانے لگے ۔ مُعاشرے کے بد کردار و بدگُفتار سُننِ شہہِ ابرارصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے آئینہ دار بننے لگے۔

        اولاد کو پکّا دُنیا دار بنانے والے، اپنے بچوں کو دعوتِ اسلامی کے مدرسۃ المدینہ اور جامعۃ المدینہ میں داخل کروا کر حافظ و عالِم و مبلغ بنانے لگے۔بے پردہ و بے عمل نادان بہنیں ، با پردہ و با عمل ہو کر معلمہ ، مدرسہ ، مبلغہ بنیں اور ا ن کے جا بجا باپردہ اجتماعا ت ہونے لگے ۔بے نمازی نہ صرف نمازی بلکہ قاری اور امام و خطیب بننے لگے ۔ خُشک مزاج، لذتِ عشق اور فاسق، تقوٰی و پرہیز گاری بلکہ کُفّار تک نعمتِ اسلام پانے لگے۔واہ کیا بات ہے امیر ِاہلسنّت   دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ کی ۔

        میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!کاش!ہم پر بھی امیر ِاہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ  کی ایسی سیدھی اور میٹھی نظر پڑ جائے کہ ہم نہ صرف نیک بلکہ نیک بنانے کا مدنی جذبہ پا جائیں ۔

      عمل کا ہو جذبہ عطا یاالٰہی                 گناہوں سے مجھ کو بچا یاالٰہی

میں پانچوں نمازیں پڑھوں باجماعت               ہو توفیق ایسی عطا یاالٰہی

   پڑھوں سُنّتِ قَبلیہ وقت ہی پر                 ہوں سارے نوافل ادا یاالٰہی

دے شوقِ تلاوت دے ذوقِ عبادت              رہوں باوضو میں سدا یاالٰہی

ہو اَخلاق اچھا ہو کردار سُتھرا                      مجھے مُتّقی تُو بنا یاالٰہی

         غُصیلے مِزاج اور تَمسخُر کی خصلت               سے مجھ کو بچا لے  بچا یاالٰہی

                         نہ نیکی کی دعوت میں سُستی ہو مجھ سے             بنا شائقِ قافلہ یاالٰہی

سعادت مِلے درسِ فیضانِ سُنّت                کی روزانہ دو مرتبہ یاالٰہی

                                                     میں مٹّی کے سادہ سے برتن میں کھاؤں            چٹائی کا ہو بسترا یاالٰہی

ہے عالِم کی خدمت یقینا سعادت              ہو توفیق اِس کی عطا یاالٰہی

صدائے مدینہ  دُوں روزانہ صدقہ              ابو بکر و فاروق کا یاالٰہی

میں نیچی نگاہیں رکھوں کاش! ہر دم            عطا کر دے شرم و حیا یاالٰہی

ہمیشہ کروں کاش! پردے میں پردہ             تُو پیکر حیا کا بنا یاالٰہی

لِباس سُنّتوں سے مُزیّن رہے اور              عِمامہ ہو سر پر سجا یاالٰہی

سبھی رخ پہ اک مشت داڑھی سجائیں             بنیں عاشقِ مصطفی یاالٰہی

ہر اِک مدنی انعام سگِ عطار پائے               کرم کر پئے مصطفی یاالٰہی

 



Total Pages: 31

Go To