Book Name:Jannat ki Tayyari

دعا کیجئے۔ مَدَنی قافِلے میں سفر کی بَرَکت سے بھی گھروں میں مَدَنی ماحول بننے کی ’’مَدَنی بہاریں ‘‘ سننے کو ملتی ہیں ۔( نیکی کی دعوت، ص۱۹۲)   

نیکی کی دعوت دینا اور بُرائی سے مَنْعْ کرنا

        حضرت سَیِّدُناابو کثیر سُحَیْمِی رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ    اپنے والِد سے رِوایت کرتے ہیں کہ میں نے حضرتِ سَیِّدُنا ابو ذَرْغِفَاری  رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ  سے پُوچھا کہ مجھے ایسا عمل بتائیے کہ جب بندہ اُسے کرے تو جَنّت میں داخِل ہوجائے ۔‘‘ اُنہوں نے فرمایا :  ’’جب میں نے رسول اللہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کی خدمت میں یہی سوال کیا تھا توآپ  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے فرمایاتھاکہ’’ وہ بندہ اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ  اور آخِرت پر اِیمان لے آئے۔‘‘ میں نے عرض کیا :  ’’ یارسول اللہ !صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ اِیمان کے ساتھ کوئی عمل بھی اِرشاد فرمایئے ۔ ‘‘فرمایا : ’’ اللّٰہ    عَزَّ وَجَلَّ   کے دیئے ہوئے رِزْق میں سے کچھ نہ کچھ صَدَقَہ کرے۔‘‘ میں نے عرض کیا :  ’’یارسول اللہ ! صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   اگر وہ فَقِیر ہو اورصَدَقَہ کی اِسْتِطَاعَتْ نہ رکھتا ہو توکیا کرے؟‘‘ فرمایا :  ’’وہ نیکی کاحُکْم دے اور بُری بات سے مَنْع کرے ۔ ‘‘ میں نے عرض کیا :  ’’یارسول اللہ ! صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   اگر وہ بولنے میں اٹکتا ہو، نیکی کاحکم دینے اور برائی سے منع کرنے کی اِسْتِطَاعَت نہ ہو تو؟‘‘فرمایاکہ’’ جاہل کوعلم سکھائے۔‘‘ میں نے عرض کیا : ’’ اگر وہ خود جاہِل ہوتو؟‘‘ فرمایا : ’’مَظلوم کی مدد کرے۔‘‘ میں نے عرض کیا :   

’’ اگر وہ کمزور ہواور مظلوم کی مددکرنے پر قادِر نہ ہوتو؟‘‘ فرمایاکہ ’’تم اپنے دوست میں جو بھلائی چاہتے ہو وہ یہ ہے کہ وہ لوگوں کو اِیذاء دینا چھوڑ دے۔‘‘ میں نے عرض کیا :  ’’یا رسول اللہ ! صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   اگروہ یہ عمل کرے گا تو جَنّت میں داخل ہوجائے گا ؟‘‘فرمایاکہ’’ جومسلما ن اِن اَعمال میں سے کوئی ایک عمل بھی کرے گا یہ عمل خود اُس کا ہاتھ پکڑکر اُسے جنت میں داخل کرے گا۔‘‘(التر غیب والترہیب، کتاب الحدو د ، باب التر غیب فی الامر بالمعروف ۔۔۔ الخ ، حدیث ۲۰ ، ج ۳ ص ۱۶۲)

       میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!عاملِ قراٰن و سُنّت، امیر ِاہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ   ہَمہ وقت زبان و قَلم کے ذریعے ، تدبیر و حِکمت ، نرمی و شفقت، اُلفت و مَوَدّت کے ساتھ نیکی کی دعوت دیتے اور بُرائی سے منع کرنے کی سعْی کرتے رہتے ہیں چنانچہ مدنی انعام نمبر12 : کیا آج آپ نے فیضانِ سُنّت سے دو(2) درس (مسجد ، گھر، دُکان، بازار وغیرہ جہاں سہولت ہو)دیئے یا سُنے؟

مدنی انعام نمبر23 :  کیا آج آپ نے دعوتِ اسلامی کے مَدَنی کاموں (مَثَلاً انفرادی کوشش، درس و بیان، مدرسۃ المدینہ بالغان وغیرہ)پر کم از کم دو(2)گھنٹے صَرف کئے؟

مدنی انعام نمبر54 : کیاآپ نے اس ہفتے کم از کم ایک بار علاقائی دورہ برائے نیکی کی دعوت میں شرکت فرمائی؟

صفِ ماتم اُٹھے خالی ہو زنداں ٹوٹیں زنجیریں

گنہگارو   چلو  مولیٰ  نے در  کھولا  ہے  جنّت کا

(حدائقِ بخشش از امامِ اہلسنّت علیہ رحمۃ ربّ العزت)

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !            صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

نَابِینا پَن پر صَبْر

         حضرت سَیِّدُنا اَنَس رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ  فرماتے ہیں کہ میں نے مَکِّی مَدَنی سُلْطَان، رَحْمَتِ عَالمِیَّان صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کو فرماتے ہوئے سناکہ’’ اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ     فرماتا ہے کہ جب میں اپنے بندے کو آنکھوں کے معاملے میں آزماؤں پھر وہ صَبْر کرے تو میں اُس کی آنکھوں کے عِوَض اُسے جَنّت عَطا فرماؤں گا۔‘‘(صحیح البخاری ، کتاب المرضی ، باب فضل من ذھب بصرہ ، حدیث ۵۶۵۳ ، ج۴ ، ص ۶)

        ایک رِوَایت میں ہے کہ اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ    فرماتا ہے کہ’’ جب میں اپنے بندے کی آنکھیں دُنیامیں لے لوں تو  جَنّت کے علاوہ کوئی چیز اُس کا بدلہ نہ ہوگا۔‘‘

(التر غیب والترھیب، کتاب الجنائز ، باب التر غیب فی الصبر ۔۔۔الخ ، حدیث ۸۶ ،  ج۴ ، ص ۱۵۴)   

ایک رِوَایت میں ہے کہ’’ میں جس کی آنکھیں لے لوں پھر وہ اُس پرصَبْر کرے اور اَجْر کی اُمید رکھے تو میں اُس کے لئے جنت کے عِلا وہ کسی ثواب پر راضی نہ ہوں گا۔‘‘

(التر غیب والترھیب، کتاب الجنائز ، باب التر غیب فی الصبر ۔۔۔الخ ، حدیث ۸۷ ،  ج۴ ، ص ۱۵۴)

اے زہے رحمت سیہ کاران اُمت کے لیے

ہوگئی آراستہ جنَّت رسول اللہ  کی

(قَبالۂ بخشش از خلیفہ اعلیٰ حضرت جمیل الرحمن قادری رضوی علیہ ر حمۃ اللہ  القوی)

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !            صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

       میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!تبلیغِ قراٰن و سنّت کی عالمگیر غیر سیاسی تحریک ’’دعوتِ اسلامی‘‘ کے 100سے زائد شعبہ جات میں سے ایک شعبہ’’گونگے بہرے اور نابینا ‘‘اسلامی بھائیوں میں نیکی کی دعوت عام کرنے اور انہیں دِین کے ضروری اَحکام سے رُوشناس کرانے کے لئے قائم کیا گیا ہے جو کہ مجلس’’خصوصی اسلامی بھائی‘‘کے تحت ہے۔

        اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ    عَزَّ وَجَلَّ   دعوتِ اسلامی کے مدنی ماحول سے وابستہ عُمومی اورخُصوصی(گونگے بہرے اور نابینا)اسلامی بھائی 30دن کا  تربیتی  کورس کرکے قوتِ گویائی اور سماعت سے محروم  افراد  تک نیکی کی دعوت پہنچانے کی سعادت حاصل کرتے ہیں ۔ان کے مدنی قافلے بھی شہر بہ شہرسفر کرتے ہیں ۔ آئیے!مدنی قافلے کی ایک بہار مُلاحظہ فرمائیے جس میں خصوصی اسلامی بھائی بھی شریکِ سفر تھے چنانچہ

        بابُ المدینہ کراچی2007ء میں راہِ خدا  عَزَّ وَجَلَّ  میں سفر کرنے والے نابینا اسلامی بھائیوں کا ایک مدنی قافلہ مطلوبہ مسجد تک پہنچنے کے لئے بس میں سُوار ہوا۔اس مدنی قافلے میں چند عُمُومی اسلامی بھائی بھی شامل تھے۔امیر ِقافلہ نے برابر بیٹھے شخص پر انفرادی کوشش کرتے ہوئے اس کا نام وغیرہ معلوم کیاتو وہ کہنے لگا کہ’’میں عیسائی مذہب سے تعلق رکھتا ہوں ، میں نے مذہبِ اسلام کا مطالعہ کیا ہے اور اس مذہب سے متأ ثر بھی ہوں ، مگر فی زمانہ مسلمانوں کا بگڑا ہوا کردار میرے اسلام قبول کرنے میں رُکاوٹ ہے ۔مگر میں دیکھ رہاہوں کہ آپ لوگ ایک جیسے (سفید)لباس میں ملبوس ہیں ۔بس میں چڑھے اور بُلند آواز سے سلام کیا اور حیرانگی تو اس بات کی ہے کہ آپ کے ساتھ نابینا اشخاص نے بھی سر پر سبز عمامہ اور سفید لباس کو اپنا رکھا ہے ، ان سب کے چہروں پر داڑھی



Total Pages: 31

Go To