Book Name:Jannat ki Tayyari

شور اُٹھا یہ محشر میں خُلْد میں گیا سگِ عطارؔؔ

گر نہ وہ بچاتے تو نار میں گیا ہوتا

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

غُصَّہ نہ کرنا

             حضرت ِسَیِّدُنا ابودَرْدَاء   رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ  سے روایت ہے کہ میں نے تاجْدارِ رِسَالت، محبوبِ رَبُّ الْعِزَّت صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ سے عرض کیا : ’’ مجھے ایسا عمل بتائیے جو مجھے جَنّتمیں داخِل کردے۔‘‘ توآپ  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایا :  ’’غُصَّہ مَت کیا کروتمہیں جنت حاصل ہوجائے گی۔‘‘(المعجم الاوسط ، باب الف ، حدیث ۲۳۵۳ ، ج۲، ص ۲۰)

چاہو جسے فردوس میں جَا دو چاہو جسے دوزخ میں بھیجو

جنَّت و نار ہیں مِلک تمھاری ہو مختار رسول اللہ

(قَبالۂ بخشش از خلیفہ اعلیٰ حضرت جمیل الرحمن قادری رضوی علیہ ر حمۃ اللہ  القوی)

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !            صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

 غُصّہ پینا

        حضرت ِسَیِّدُ نا سہل بن معاذ  رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُمَا  اپنے والد سے روایت کرتے ہیں کہ نبیٔ رَحْمَت، شَفیعِ اُمَّت  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایاکہ ’’جو بدلہ لینے پر قادر ہونے کے باوجودغُصَّہ پی لے اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ     اُسے لوگوں کے سامنے بلائے گا تاکہ اس کو اختیار دے کہ جنت کی حوروں میں سے جسے چاہے پسند کر لے۔‘‘  (ابن ماجہ، کتاب الزھد، باب الحلم ، حدیث ۴۱۸۶ ، ج۴، ص ۴۶۲)

اُٹھا کر لے گئیں حُوریں جِناں میں

قدم پر اُن کے جِس نے جاں فدا کی

(قَبالۂ بخشش از خلیفہ اعلیٰ حضرت جمیل الرحمن قادری رضوی علیہ ر حمۃ اللہ  القوی)

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !            صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

عَفْو و دَر گُزر

         حضرتِ سَیِّدُ نااَنس رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ   سے روایت ہے کہحُضورِ اَکرم ، نُورِ مُجَسَّم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایاکہ’’ جب بندو ں کوحِسا ب کے لئے کھڑ ا کیا جائے گاتو ایک قوم اپنی گر دنو ں پر اپنی تلوار یں رکھے آئے گی اور جَنّت کے دروازے پر آکررُک جائے گی۔ پوچھا جائے گا، ’’ یہ کون لوگ ہیں ؟‘‘جواب ملے گا، ’’یہ وہ شُہداء ہیں جو زندہ تھے اور اِنہیں رِزْق دیا جا تا تھا۔ ‘‘پھر ایک مُنادِی نِدا کرے گا کہ’’ جس کا ثواب اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ     کے ذِمّۂ کرم پر ہے وہ کھڑا ہوجائے اورجَنّت میں داخل ہوجا ئے۔‘‘پھر دوبارہ یہی نِدا کی جائے گی ۔‘‘حاضرین میں سے کسی نے پوچھا : ’’وہ کون ہیں جن کا اَجْراللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ    کے ذِمّۂ کرم پر ہوگا؟‘‘ مدنی آقا صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایاکہ’’ لوگوں کومُعا ف کرنے والے۔‘‘(پھر فرمایا : ) ’’تیسری مرتبہ بھی یہی نِدا دی جا ئے گی کہ جس کا اَجْراللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ   کے ذِمّۂ ِکرم پرہے وہ کھڑا ہوجائے اور جَنّت میں داخل ہوجائے پھر اتنے اتنے ہزارلوگ کھڑے ہوں گے اور جَنّت میں بِلاحِساب داخِل ہو جائیں گے ۔‘‘

 (المعجم الاوسط، باب الف ، حدیث ۱۹۹۸ ، ج۱ ، ص ۵۴۲)

فاتِحِ بابِ شفاعت کے سبب حکم ملا

جائیں جنت میں گدایانِ رسولِ عربی

(قَبالۂ بخشش از خلیفہ اعلیٰ حضرت جمیل الرحمن قادری رضوی علیہ ر حمۃ اللہ  القوی)

            اَلْحَمْدُلِلّٰہِ عَزَّ وَجَلَّ   آفتابِ قادریت، امیر ِاہلسنّت  دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ    ذاتی مُعاملات میں عفو و درگزر سے کام لیتے اورتحدیثِ  نعمت کے لئے ارشاد فرمایا کرتے ہیں : ’’ ا َلْحَمْدُلِلّٰہِ عَزَّ وَجَلَّ   میں اپنے اندر اِنتقام کا جذبہ نہیں پاتا۔ ‘‘کاش!ہم سے بھی بے جا غصّہ، جذباتی پن اور اپنی ذات کی خاطر اِنتقام لینے کی عادتِ بَد نکل جائے۔

         ماہتابِ رضویت، امیر ِاہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ   مدنی انعام نمبر 28میں فرماتے ہیں : کیا آج آپ نے(گھر میں یا باہر)کسی پر غصّہ آ جانے کی صورت میں چُپ سادھ کر غصّہ کا علاج فرمایا یا بول پڑے؟نیز دَرگُزر سے کا م لیا یا اِنتقام(یعنی بدلہ لینے)کا موقع ڈھونڈتے رہے؟

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                  صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

   

تین مُبارک خَصْلَتیں

          حضرت ِسَیِّدُ نا جابِر رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ  سے روایت ہے کہ اللّٰہ کے محبوب، دَانائے غُیُوب ، مُنَزَّہٌ عَنِ الْعُیُوبصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایا کہ ’’تین خَصْلتیں جس میں ہوں گی اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ   اُس پر اپنی رحمت نازل فرمائے گا اوراُسے اپنی جَنّت میں داخل فرمائے گا، (۱)کمزوروں پررحم کرنا (۲) والدین پر شفقت کرنا (۳)حکمرانوں کے ساتھ بھلائی کرنا ۔‘‘

 (التر غیب والترھیب ، کتاب الادب ، با ب التر غیب فی الرفق ، حدیث ۱۰، ج۳ ، ص ۲۷۹)

حکم ہوگا کہ اُسے داخلِ جنت کردو

جس کے دل میں ہے تمنائے رسولِ عربی

 



Total Pages: 31

Go To