Book Name:Jannat ki Tayyari

کَلِمَہ طَیِّبَہ

         حضرت ِ ِسَیِّدُ نامُعاذ رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ  سے روایت ہے کہ رحمت ِعالم، نورِ مجسم، سراپا جودو کرم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایا :  ’’جس کا آخری کلام لَا اِلٰـہَ اِلَّا اللّٰہُ ہوگا وہ جَنّت میں داخل ہوگا۔‘‘(المستدرک ، کتاب الدعاء والذکر ، الحدیث۱۸۸۵، ج۲، ص۱۷۵)

مدفن ہو عطا میٹھے مدینے کی گلی میں

لِلّٰہ     پڑوسی     مجھے     جنت     میں     بنالو

(ارمغانِ مدینہ، از امیر اہلسنت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ )

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !         صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

نَمازِ جَنَازَہ

          حضرت ِ سَیِّدُ نا مالِک بن ہُبَیرہ رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ   فرماتے ہیں کہ میں نے مکی مَدَنی سرکار، دوعالم کے مالک و مختار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کو فرماتے ہوئے سنا کہ ’’جو مسلمان مر جائے او ر اُس پر مسلمانوں کی تین صفیں نماز پڑھیں تواللّٰہ    عَزَّ وَجَلَّ   اس پر جَنّت واجب فرمادیتا ہے۔(سنن ابی داود، کتاب الجنائز، حدیث۳۱۶۶، ج۳، ص۲۷۰)

جنّتی کا جنازہ

        میٹھے میٹھے آقا ، مدنی مصطفی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کا فرمانِ عافیت نشان ہے :  ’’جب کوئی جنّتی شخص فوت ہو جاتا ہے تو اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ   حیا فرماتا ہے کہ اُن لوگوں کوعذاب دے جو اِس کا جنازہ لے کر چلیں اور جنہوں نے اِس کی نمازِ جنازہ ادا کی۔ (الفردوس بماثور الخطاب ج۱ص۲۸۲حدیث۱۱۰۸)

نارِ دوزخ میں گِرا ہی چاہتا تھا میں نثار

اپنی رحمت سے عطا فرمائی جنَّت یارسول

                                                                         (ارمغانِ مدینہ، از امیر اہلسنت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ، ص۱۸)

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !           صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

تَعْزِیَت

        حضرت ِسَیِّدُ ناجابِررَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ  سے روایت ہے کہ خَلْق کے رَہبر، شَافِعِ مَحْشَر، محبوبِ دَاوَرصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایا :  ’’جو کسی غم زدہ شخص سے تعزیت کرے گا اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ    اُسے تَقْوٰی کا لِباس پہنائے گا اور روحو ں کے درمیان اُس کی رُوح پر رحمت فرمائے گا اور جو کسی مُصیبت زَدہ سیتَعْزِیَتْ کرے گا ، اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ    اُسے جَنّت کے جوڑوں میں سے دوایسے جوڑے پہنائے گا جن کی قیمت(ساری) دُنیا بھی نہیں ہوسکتی۔‘‘(المعجم الاوسط للطبرانی، حدیث ۹۲۹۲، ج۶، ص ۴۲۹ )

یا شَہِ ابرار! دے دو خُلْد میں اپنا جوار

ازپئے غوثُ الورٰی ہو چشمِ رحمت یارسول

(ارمغانِ مَدینہ، ازامیراہلسنت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ )

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !            صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

 تین بَچّوں کا اِِنْتِِقال

        حضرت ِ ِسَیِّدُ نا اَنَس رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ  سے روایت ہے کہ نبی ٔ رحمت ، شفیعِ اُمّت، شہنشاہِ نبوت  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایا :  ’’جس مسلمان کے تین بچے بالِغ ہونے سے پہلے مرجائیں ، اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ    اپنی رحمت سے اُسے اور اُن بچوں کو جَنّت میں داخل فرمائے گا۔‘‘ ایک روایت میں ہے کہ’’ جس کے تین بچوں کا انتقال ہو جائے  وہ جَنّت میں داخل ہوگا ۔‘‘

(بخاری، کتاب الجنائز ، باب ماقیل فی اولاد المسلمین۔۔۔الخ ، حدیث۱۳۸۱، ج۱، ص۵۶۵ )

پڑوسی بنا مجھ کو جَنّت میں اُن کا

خُدائے محمد برائے مدینہ

(ارمغانِ مدینہ، از امیر اہلسنت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ )

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !           صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

کَچّا بَچّہ

         حضرت ِ ِ ِسَیِّدُ نا مُعَاذ رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ  سے روایت ہے کہ شاہِ بنی آدم، رسولِ محتشم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایا :  ’’جس مسلمان جوڑے(میاں بیوی) کے تین بچے انتقال کرجائیں ، اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ    اُن دونوں میاں بیوی اور اُن بچوں پر فضل ورحمت کرتے ہوئے جَنّت میں داخل فرمائے گا۔‘‘ صحابہ کرام (عَلَیْہِمُ الرِّضْوَان)  نے عرض کیا : ’’اور دو بچے؟ ‘‘فرمایا : ’’ اور دو بچے۔‘‘ صحابہ کرام (عَلَیْہِمُ الرِّضْوَان)  نے عرض کیا :  ’’اور ایک؟‘‘ فرمایا : ’’ اور ایک‘‘ پھر فرمایا : ’’ اُس ذاتِ پاک کی قسم! جس کے قبضہ قدرت میں میری جان ہے جس عورت کا کَچّا بَچّہ فوت ہوجائے (یعنی حَمْل ضائِع ہوجائے) اور وہ اُس پر صبر کرے تو وہ بچّہ اپنی ماں کو اپنی ناڑو کے ذریعے کھینچتا ہوا جَنّت میں لے جائے گا ۔‘‘( مسند احمد ، حدیث معا ذ بن جبل مسند الانصار، حدیث ۲۲۱۵۱، ج۸ ، ص ۲۵۴ )