Book Name:Uyun ul Hikayaat Hissa 1

حضرت سیدنا علقمہ بن مرثد رحمۃاللہ تعالیٰ علیہما فرماتے ہیں :’’ جب حضرت سیدناعبداللہ بن مسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ حضرت سیدنا ربیع بن خثیم رحمۃاللہ تعالیٰ علیہ کو دیکھتے تو سورۂ حج کی آیت مبارکہ کایہ حصہ ’’وَبَشِّرِ الْمُحْسِنِیْنَ‘‘ تلاوت کرتے اور فرماتے:’’ اے ربیعرحمۃاللہ تعالیٰ علیہ! اگر تجھے حضورصلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّم دیکھتے تو تجھ سے بہت خوش ہوتے۔‘‘

            حضرت سیدنا ربیع بن خثیمرحمۃاللہ تعالیٰ علیہ اکثر اپنے آپ کومخاطب کرکے فرمایا کرتے: ’’اے ربیع! اپنا زاد راہ باندھ لے اور سفرِآخرت کی خوب تیار ی کرلے، اور سب سے پہلے اپنی اصلاح کراور اپنے نفس کو خوب نصیحت کر۔ ‘‘

{اللہ عزوجل کی اُن پر رحمت ہو۔۔اور۔۔ اُن کے صدقے ہماری مغفرت ہو۔آمین بجاہ النبی الامین صلی اللہ تعالی علیہ وسلم}

۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷

      (۳)حضرت سیدناابو مسلم خولانی رحمۃاللہ تعالیٰ علیہ

            حضرت سیدنا علقمہ بن مرثد  رحمۃاللہ تعالیٰ علیہما فرما تے ہیں :’’ حضرت سیدنا ابومسلم خولانی رحمۃاللہ تعالیٰ علیہ  کبھی بھی کسی ایسے شخص کے پاس نہ بیٹھتے جو دنیاوی با توں میں مشغول ہوتا ۔ ایک مرتبہ آپ رحمۃاللہ تعالیٰ علیہ مسجد میں گئے تو دیکھا کہ کچھ لوگ ایک جگہ جمع ہیں ، آپ رحمۃاللہ تعالیٰ علیہ نے یہ گمان کیا کہ یہ لوگ ذکر اللہ عزوجل کے لئے یہاں جمع ہیں۔ چنانچہ آپ رحمۃاللہ تعالیٰ علیہ ان کے پاس جاکر بیٹھ گئے ۔ وہ لوگ آپس میں باتیں کررہے تھے ، کوئی کہہ رہا تھا :’’ میرا غلام فلاں فلاں جگہ گیا ۔‘‘ کوئی کہہ رہا تھا: ’’میں نے غلام کو سفر کا سامان مہیا کردیا ہے ۔ ‘‘الغر ض اسی طرح کی دنیاوی باتیں اس محفل میں ہو رہی تھیں۔‘‘

             جب آپ رحمۃاللہ تعالیٰ علیہنے ان کی یہ باتیں سنیں تو فرمایا:’’ سبحان اللہعزوجل! ’’میراتو تمہارے متعلق کچھ اور ہی گمان تھا مگر تم کچھ اور نکلے۔ میری اور تمہاری مثال تو ایسی ہی ہے جیسے کوئی شخص سردی کے موسم میں شدید موسلا دھار بارش میں بھیگ رہا ہو پھر اچانک اسے ایک بڑی عمارت نظر آئی، جب وہ پناہ لینے کے لئے اس میں داخل ہوا تو اسے معلوم ہوا کہ اس بلند وبالاعمارت پر تو چھت ہی نہیں ، اور اس عمارت سے کوئی فائدہ حاصل نہیں ہوسکتا ۔‘‘

            میں بھی تمہارے پاس اس لئے آیا تھا کہ ’’شاید تم ذکر اللہ عزوجل میں مشغول ہو، لیکن تم تو دنیا دار لوگ ہو، تمہارے پاس بیٹھنا فضول ہے، یہ کہتے ہوئے آپ رحمۃاللہ تعالیٰ علیہ وہاں سے تشریف لے گئے ۔‘‘

            جب آپ  رحمۃاللہ تعالیٰ علیہ بڑھاپے کی وجہ سے بہت زیادہ کمزور ہوگئے تو لوگوں نے عرض کی:’’ حضور! اپنے مجاہدات میں کچھ کمی کردیجئے۔‘‘ آپ رحمۃاللہ تعالیٰ علیہ نے ارشاد فرمایا:’’اے لوگو ! تمہارا اس بارے میں کیا خیال ہے؟ اگر تم مقابلے کے لئے میدان میں گھوڑا بھیجوتوکیا تم اس کے سوار کو ہدایت نہیں کر و گے کہ گھوڑا خوب بھگانا، اور کسی کو اپنے سے آگے نہ نکلنے دینا اورجب


 

 



Total Pages: 412

Go To