Book Name:Uyun ul Hikayaat Hissa 1

پھر حضور صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّمنے ارشاد فرمایا: ’’اے سلمان فارسی( رضی اللہ تعالیٰ عنہ) !تم جاؤ او رزمین کو ہموار کرو۔‘‘ چنانچہ میں گیا اور زمین کو ہموار کرنے لگا تا کہ وہاں کھجور کے پودے لگائے جاسکیں۔ ا س کام سے فارغ ہو کر میں حضور صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّمکی بارگاہ میں حاضر ہوا اور عرض کی: ’’اے میرے آقا  صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّم!میں نے زمین ہموار کر دی ہے۔‘‘ آپ صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّممیرے ساتھ چل دیئے۔صحابہ کرام علیہم الرضوان بھی آپ   صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّمکے ہمراہ تھے ۔ ہم حضور صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّمکو کھجوروں کے پودے اُٹھا اُٹھا کر دیتے اور آپ صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّماپنے دستِ اقدس سے اسے زمین میں لگاتے جاتے ۔

             حضرت سیدنا سلمان فارسی رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں : ’’اس پاک پروردگار عزوجل کی قسم جس کے قبضۂ قدرت میں سلمان فارسی ( رضی اللہ تعالیٰ عنہ ) کی جان ہے ! حضور صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّمنے جتنے پودے لگائے وہ سب کے سب اُگ آئے اور ان میں بہت جلد پھل لگنے لگے ۔‘‘چنا نچہ میں نے 300کھجوریں اپنے مالک کے حوالے کیں۔ ابھی میرے ذمہ 40اوقیہ چاندی باقی رہ گئی تھی۔پھر حضور صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّمکے پاس کسی نے مرغی کے انڈے جتنا سونے کا ایک ٹکڑا بھجوایا۔آپ صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّمنے استفسارفرمایا: ’’سلمان فارسی کا کیا ہوا؟ ‘‘پھرمجھے بلواکرفرمایا:’’اسے لے جاؤ،اوراپناقرض اداکرو۔ ‘‘

            میں نے عرض کی:’’اے میرے آقا صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّم! یہ اِتنا سا سونا 40اوقیہ چاندی کے برابر کس طر ح ہوگا ؟‘‘ آپ صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّمنے فرمایا: ’’تم یہ سونا لو اور اس کے ذریعے 40 اوقیہ چاندی جو تمہارے ذمہ ہے، اسے ادا کرو، اللہ عزوجل تمہارے لئے اسی سونے کو کافی کردے گااور تمہارے ذِمہ جتنی چاندی ہے یہ اس کے برابر ہوجائے گا ۔‘‘ میں نے وہ سونے کا ٹکڑا لیااوراس کا وزن کیا۔ اس پاک پروردگار عزوجل کی قسم جس کے قبضۂ قدرت میں میری جان ہے ! وہ تھوڑا سا سونا 40 اوقیہ چاندی کے برابر ہوگیا او راس طرح میں نے اپنے مالک کو چاندی دے دی اور غلامی کی قید سے آزاد ہوکر سرکار صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّمکے غلاموں میں شامل ہوگیا۔ پھر میں غزوۂ خندق میں حضور صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّمکے ساتھ شامل ہوا ۔اس کے بعد میں ہر غزوہ میں حضور صلَّی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلَّمکے ساتھ رہا ۔

(المسند للامام احمد بن حنبل، حدیث سلمان الفارسی، الحدیث۲۳۷۹۸،ج۹،ص۱۸۵تا۱۸۹)

 

 

{اللہ عزوجل کی اُن پر رحمت ہو۔۔اور۔۔ اُن کے صدقے ہماری مغفرت ہو۔آمین بجاہ النبی الامین صلی اللہ تعالی علیہ وسلم}

۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷ ۷

 

 

 

 



Total Pages: 412

Go To